نوٹس / مشقی سوالات کا حل: اردو جماعت 4 پنجاب ٹیکسٹ بک بورڈ لاہور پاکستان 2019

اُردو جماعت چہارم نوٹس / مشقی سوالات کا حل:  2019 پنجاب ٹیکسٹ بک بورڈ لاہور پاکستان 

باب 1۔ حمد

س 1۔مشکل الفاظ کے جوڑ توڑ سیکھنے سے الفاظ کی املا آسان ہو جاتی ہے ۔اب ہم اس سبق میں موجود مشکل الفاظ کے جوڑ توڑ کی مشق کرتے ہیں۔

نشان=ن+ا+ش+1۔ ن

قدرت=ت+ر+د+2۔ ق

پھول=ل+و+ھ+3۔پ

سناؤ=و+ء+ا+ن+4۔س

س2۔  ذیل میں دیے گئے بیانات میں ہر بیان کے نیچے چار ممکنہ جوابات دیے گئے ہیں۔درست جواب کے گرد دائرہ لگائیں۔                      

پھل اور پھول خدا کی قدرت کے نشان ہیں؟

1.

ان میں سے کوئی نہیں

(د)

رحمت

(ج)

ذات

(ب)

طاقت

(الف)

اللہ تعالیٰ نے تاروں کی صورت میں چراغ روشن کیے؟

2.

تمام

(د)

آگ

(ج)

سیارے

(ب)

شمع

(الف)

زمین پر پھولوں کے ذریعے اللہ نے زمین کو سنوارا؟

3.

کوئی بھی نہیں

(د)

درخت لگائے

(ج)

بہتر بنایا

(ب)

ٹھنڈا کیا

(الف)

ساری مخلوق خدا کی حمدکرتی ہے؟

4.

تمام

(د)

دنیا کی تعریف

(ج)

اللہ کی تعریف

(ب)

مخلوق کی تعریف

(الف)

جوابات: (1-الف)(2-الف)(3-ب)(4-ب)

س3: درست لفظ لگا کر خالی جگہ پر  کریں۔

1۔ سجے ہیں یہ کیسے۔۔۔۔۔۔ پیارے۔                            (پیارے)۔

2۔ یہ ہیں خدا کے ۔۔۔۔۔سارے۔                  (نشان)

3۔یہ۔۔۔۔۔۔ایسے کھلائے کس نے۔                ( باغ )

4۔ زمیں پہ ۔۔۔۔۔آسماں پہ تارے۔                    (پھول)

5۔خدا کی ۔۔۔۔۔۔کے گیت گاؤ۔ (قدرت)

س4۔خدا کی گاتے ہیں حمد سارے /زمیں پہ پھول، آسماں پہ تارے۔ اس شعر کو جملوں کی شکل میں لکھیں۔

ج۔ ہر چیز اللہ تعالیٰ کی تعریف بیان کرتی ہے۔

زمین پر پھول اللہ تعالیٰ کی تعریف کرتے ہیں اور آسمان پر تارے اللہ تعالیٰ کی حمد کرتے ہیں۔

س4: درج ذیل الفاظ سے جملے بنائیں؟

جملے

الفاظ

ہرپرندہ اللہ تعالیٰ کی حمد کرتا ہے۔

حمد

مالی نے باغ میں پھولوں کو سنوار کر رکھا ہے۔

سنوارنا

رات ہوتے ہی چراغ جل اٹھتے ہیں۔

چراغ

اللہ تعالیٰ ہر چیز پرقدرت رکھتا ہے ۔

قدرت

میں نے ایک خوب صورت گیت سنا۔

گیت

 کی “۔”س5:آپ کو یاد ہے کہ جب کوئی سوال لکھا جاتا ہے تو اس کے آخر میں “؟” کی علامت لگائی جاتی ہے اور جب کوئی جملہ مکمل ہوتا ہے تو اس کے آخر میں

علامت آتی ہے۔ دیے گئے جملوں کے آخر میں درست علامت لگائیں۔

الف۔ اللہ نے ساری کائنات بنائی ہے

ب۔ کیا آپ نے اپنا کام ختم کرلیا ہے

ج۔ عدیل باغ میں جارہا ہے

د۔ صبا اپنا سبق یاد کررہی ہے

ہ۔ درخت کے قریب کون کھڑا ہے

ج:

الف۔ اللہ نے ساری کائنات بنائی ہے۔

ب۔ کیا آپ نے اپنا کام ختم کر لیا ہے؟

ج۔ عدیل باغ میں جا رہا ہے۔

د۔ صبا اپنا سبق یاد کررہی ہے۔

ہ۔ درخت کے قریب کون کھڑا ہے؟

باب                   2 – نعت

حل مشقی سوالات

س1: مشکل الفاظ کے جوڑ توڑ سیکھنے سے الفاظ کی املاآسان ہو جاتی ہے۔ اب ہم اس سبق میں موجود مشکل الفاظ کے جوڑ توڑ کی مشق کرتے ہیں۔

خلق

=

   

ق

+

خ

1

بگڑی

=

   

ڑی

+

بگ

2

ویرانے

=

نے

+

را

+

وی

3

مہکانے

=

نے

+

کا

+

مہ

4

احسان

=

ن

+

سا

+

اح

5

س2: نیچے دیے گئے جملوں میں کچھ الفاظ کے نیچے لکیر لگائی گئ ہے ۔ ان الفاظ کے معانی پر دائرہ لگائیں۔

حضر ت محمدﷺ پوری خلق کے لئے رحمت بن کرآئے؟

1.

تمام

(د)

مخلوق

(ج)

جانوروں

(ب)

انسانوں

(الف)

ویرانے میں خوب صورت پھول کھلے ہوئے تھے؟

2.

ان میں سے کوئی نہیں

(د)

اونچے پہاڑ

(ج)

غیر آباد جگہ

(ب)

سرسبز باغ

(الف)

حضرت محمدﷺ نے دُنیا کو مہکایا؟

3.

کوئی بھی نہیں

(د)

محنتی بنانا

(ج)

سرسبز بنانا

(ب)

خوشبو پھیلانا

(الف)

انسانوں پر حضورﷺ کے بہت احسان ہیں؟

4.

تمام

(د)

عزت

(ج)

درجہ

(ب)

بھلائی

(الف)

کاپی کی حالت بہت بگڑی ہوئی تھی؟

5.

الف اور ب

(د)

پرانی

(ج)

خراب

(ب)

صاف

(الف)

جواب:       1۔مخلوق                        2۔            غیر آباد جگہ                           3۔                   خوشبو پھیلانا                  4۔                     بھلائی                                       5۔ خراب

س3: نیچے کچھ الفاظ دیے گئے ہیں۔ ان الفاظ کے جملے بنائیں۔

جملے

الفاظ

اللہ تعالیٰ نے ہر چیز خلق کی ہے۔

خلق

میری  گھڑی کل سے بگڑی ہوئی ہے۔

بگڑی

ہمیں دوسروں کے ساتھ احسان کرنا چاہیے۔

احسان

مجھے اسکول سے گھر آنے کے لئے ایک ویرانے سے گزرنا پڑتا ہے۔

ویرانا

حضرت محمدﷺ ساری دنیا کےلئے رحمت ہیں

رحمت

س4: اچھی باتوں کی خوشبو سے دُنیا کو مہکانے والے        اس شعر کا مفہوم اپنے الفاظ میں لکھیں۔

ج: حضرت محمدﷺ نے اپنی اچھی باتوں کی خوشبو سے ساری دنیا کو خوشبو سے بھر دیا ہے۔

س5: مثال کو دیکھتے ہوئے دونوں کالموں میں لکھے گئے الفاظ کو درست طریقے سے ملا کر نئے الفاظ بنائیں۔

نئے الفاظ

کالم 2

کالم 1

حق دار

ادب

حق

باادب

جواب

با

قسمت

حاضر

خوش

لاجواب

قسمت

لا

حاضر

دار

غیر

 

س6: ہم پڑھ چکے ہیں کہ کسی شخص، جگہ یا چیز کے نام کو “اسم”کہتے ہیں۔ اسی طرح “فعل” ایسا لفظ ہے جو کسی کام کے ہونے یا کرنے کے بارے میں بتاتا ہے۔ دیے گئے جملوں میں سے اسم اور فعل الگ الگ کر کے لکھیں۔

فعل

اسم

جملے

کھیل

علی، حماد

علی اور حماد کھیل رہے ہیں۔

پڑھا

استاد،کمرے

اُستادصاحب کمرے میں پڑھا رہے ہیں۔

خرید

لڑکیاں ، کپڑے

لڑکیاں کپڑے خرید رہی ہیں۔

پہن

عامر،کوٹ

عامر کوٹ پہن رہا ہے۔

چن

آمنہ ،پھول

آمنہ پھول چن رہی ہے

باب نمبر 3۔خدمت گار کون

شخص=ص+خ+س1: اُردو میں ہم اکثر “س”اور “ص” کی آواز ملادیتے ہیں۔ نیچے کچھ الفاظ دیے گئے ہیں ۔ ان الفاظ کو “س”یا “ص” سے پُر کریں اور مکمل الفاظ بھی لکھیں۔ مثلا ٌ                ش

صدیق

=

ق

+

ی

+

د

+

—-

1

قسمت

=

ت

+

م

+

—–

+

ق

2

بے بسی

=

ی

+

—-

+

ب

+

ے+ب

3

عصا

=

 

ا

+

ص

+

ع

4

افسوس

=

س

+

و

+

س

+

ف+ا

5

 

س2: نیچے دیے گئے جملوں میں کچھ الفاظ کے نیچے لکیر لگائی گئ ہے ۔ ان الفاظ کے معانی پر دائرہ لگائیں۔

بڑھیا پیوند لگے کپڑے پہنتی تھی؟

1.

تمام

(د)

جوڑ

(ج)

موتی

(ب)

گوٹا کناری

(الف)

وہ شخص بلاناغہ بڑھیا کے گھر آتا تھا؟

2.

ان میں سے کوئی نہیں

(د)

روزانہ

(ج)

ہر مہینے

(ب)

ہر ہفتے

(الف)

بڑھیا نابینا تھی لیکن پھر بھی اس کا گھر صاف تھا؟

3.

کوئی بھی نہیں

(د)

بیمار

(ج)

کمزور

(ب)

اندھی

(الف)

وہ خداترس اور نیک آدمی ہے؟

4.

تمام

(د)

اچھا

(ج)

رحم دل

(ب)

برا

(الف)

اس شخص نے عصا صاف کرکے چارپائی کے ساتھ رکھ دیا؟

5.

الف اور ب

(د)

لاٹھی

(ج)

برتن

(ب)

جوتے

(الف)

جواب:       1۔جوڑ                        2۔            روزانہ                        3۔                   اندھی                  4۔                     رحم دل                                       5۔ لاٹھی

س3: نیچے کچھ الفاظ دیے گئے ہیں۔ ان الفاظ کے جملے بنائیں۔

جملے

الفاظ

احمد ایک خدا ترس انسان ہے۔

خدا ترس

بوڑھے کے ہاتھ میں عصا تھا۔

عصا

میں نے آج ایک نابینا شخص کو سڑک پار کروائی۔

احسان

سلمیٰ بلاناغہ اسکول جاتی ہے۔

بلاناغہ

ہمارے پیارے نبی ﷺ اپنے کپڑوں کو خود ہی پیوند لگا لیتے تھے۔

پیوند

ہمیں بے سہار ا لوگوں کی مدد کرنی چاہیے۔

بے سہارا

س4: ان سوالات کے جواب دیں۔

1۔ بڑھیا کا گھر کیسا تھا؟

ج:  بڑھیا کے گھر کی حالت بہت خراب تھی ۔ جگہ جگہ کوڑا کرکٹ کے ڈھیر لگے ہوئے تھے۔ دیواروں اور چھتوں پر جگہ جگہ جالے لٹک رہے تھے۔

2۔ خاموش خدمت گار کیا نام تھا؟

ج: خاموش خدمت گار کا نام حضرت ابو بکر صدیق رضی اللہ عنہ تھا جو مسلمانوں کے پہلے خلیفہ تھے۔

3۔ بڑھیا کس شہر میں رہتی تھی؟

ج: بڑھیا مدینہ میں رہتی تھی۔

4۔ حضرت عمر نے حضرت ابوبکر صدیق کو دیکھ کر کیا سوچا؟

ج:  حضرت عمر رضی اللہ عنہ نے سوچا کہ نیکی میں حضرت ابوبکر صدیق  رضی اللہ عنہ سے آگے بڑھنا ممکن  نہیں۔ اللہ تعالیٰ انہیں نیکی کا بدلہ دے۔

5۔ کچھ الفاظ کے آخر میں “ات”لگانے سے ان الفاظ کی جمع بنائی جاتی ہیں۔ مثلاٌ “انعام” واحد ہے جس کی جمع “انعامات”ہے۔ دیے گئےواحد الفاظ کے جمع بنائیں۔

جمع

الفاظ

مکانات

مکان

اعلانات

اعلان

احسانات

احسان

نقصانات

نقصان

حالات

حال

 

با ب نمبر4۔آمنہ اور نیلی مچھلی

س1: اس سبق میں جو مشکل الفاظ موجود ہیں ، ان کے توڑ نیچے دیے گئے ہیں، ان کو دیکھتے ہوئے مناسب جوڑ بنائیں۔

شفاف

 

فاف

+

+شف

1

موسیقی

 

قی

+

سی+مو

2

گدلا

 

لا

+

گد

3

آلودہ

 

دہ

+

لو+آ

4

ریلا

 

لا

+

رے

5

 

س2: نیچے دیے گئے جملوں میں کچھ الفاظ کے نیچے لکیر لگائی گئ ہے ۔ ان الفاظ کے معانی پر دائرہ لگائیں۔

جھیل کا پانی اتنا شفاف تھا کہ اس میں مچھلیاں تیرتی نظر آتی تھیں؟

1.

تمام

(د)

سفید

(ج)

ٹھنڈا

(ب)

نہایت صاف

(الف)

نیلی کو موسیقی کی آواز آئی؟

2.

ان میں سے کوئی نہیں

(د)

گیت

(ج)

جانور

(ب)

مچھلیوں

(الف)

جھیل کا پانی فیکڑی کی وجہ سے گدلا ہو گیا؟

3.

کوئی بھی نہیں

(د)

بدبودار

(ج)

میلا

(ب)

سفید

(الف)

جھیل کا پانی آلودہ ہو رہا تھا؟

4.

تمام

(د)

گرم

(ج)

گندہ

(ب)

ٹھنڈا

(الف)

گندے پانی کا ریلا نیلی اور سنہری مچھلی کو بہا کر لے گیا؟

5.

الف اور ب

(د)

سیلاب

(ج)

قطرہ

(ب)

شور

(الف)

جواب:       1۔نہایت صاف                        2۔            گیت                       3۔                   میلا                  4۔                     گندہ                                       5۔ سیلاب

س3: مندرجہ جملوں میں الفا ظ کی ترتیب درست کریں۔

1۔ آواز کی سمت میں نیلی نے شروع کیا تیرنا۔

 ج: نیلی نے آواز کی سمت میں تیرنا شروع کیا۔

2۔ اس سے آرہی ہے بھی بدبو۔

ج: اس سے بدبو بھی آرہی ہے۔

3۔ اور یوں باقی آلودگی مچھلیاں سے بچ گئیں۔

ج: اور یوں باقی مچھلیاں آلودگی سے بچ گئیں۔

4۔ آیا منصوبہ آمنہ کے ذہن میں۔

ج:  آمنہ کے ذہن میں منصوبہ آیا۔

س4: نیچے کچھ الفاظ دیے گئے ہیں۔ ان الفاظ کے جملے بنائیں۔

جملے

الفاظ

جھیل کا پانی بہت شفاف تھا۔

شفاف

نیلی موسیقی سننے کی شوقین تھی۔

موسیقی

پانی کا ایک ریلا آیا اور سب کچھ بہا کر لے گیا۔

ریلا

فیکٹری کے زہریلے پانی سے جھیل کا پانی آلودہ ہوگیا۔

آلودہ

آلودہ پانی کو دیکھ کر آمنہ کی پریشانی بڑھ گئی۔

پریشانی

س5: نیچے دیے گئے سوالات کے جواب دیں۔

1۔ جھیل کیسی تھی؟

ج:  جھیل بہت خوب صورت تھی۔ اس کا پانی ٹھنڈا اور شفاف تھا۔ اس میں مچھلیاں تیرتی ہوئی نظر آتی تھیں۔

2۔ نیلی کو کون دانہ ڈالتی تھی؟

ج: نیلی کو آمنہ دانہ ڈالتی تھی جو جھیل پر سیر کرنے اور دوسری مچھلیوں کو دانہ ڈالنے آتی تھی۔

3۔ جھیل میں آلودگی کیوں پھیل رہی تھی؟

ج: جھیل کے قریب ایک نئی فیکٹری بنی تھی جس کا زہریلا پانی جھیل میں شامل ہو رہا تھا ۔ اس زہریلے پانی کی وجہ سے جھیل سے آلودگی پھیل رہی تھی۔

4۔ فیکٹری کے مالک نے آمنہ سے کیا کہا؟

ج: فیکٹری کے مالک نے آمنہ سے کہا تھوڑے سے زہریلے پانی کے ملنے سے جھیل کو کچھ نہیں ہوتا۔

5۔ نیچے دیے گئے ٹیبل میں کالم “الف” میں مذکر الفاظ دیے گئے ہیں اور کالم”ب” میں مؤنث الفاظ دیے گئے ہیں۔ ان دونوں کالموں کی ترتیب میں فرق ہے۔ کالم”الف”میں موجود مذکر کوکالم”ب”میں موجود درست مؤنث سے ملائیں۔

مؤنث

مذکر

بلی

مرغا

بکری

مینڈک

بطخ

بلا

مینڈکی

بکرا

مرغی

بطخا

جواب:

مؤنث

مذکر

مرغی

مرغا

مینڈکی

مینڈک

بلی

بلا

بکری

بکرا

بطخ

بطخا

باب نمبر 5۔ سویرے اُٹھنا

س1: ایسے الفاظ جن کی آوازیں ایک جیسی ہوں “ہم آوازالفاظ” کہلاتے ہیں۔ نظم میں ہم آواز الفاظ استعمال کیے جاتے ہیں۔ ایسے الفاظ کو “قافیہ”بھی کہا جاتا ہے ۔مثال کے طور پر “آنا” کا ہم آواز الفاظ “جانا”۔ نیچے دیے گئے الفاظ کے دو،دو ہم آواز الفاظ لکھیں۔

ہم آواز الفاظ

ہم آواز الفاظ

الفاظ

کرم

گرم

نرم

چلے

جلے

تلے

ہم

کم

دم

آتا

جاتا

کھاتا

دھاگے

بھاگے

آگے

 

س2: نیچے دیے گئے جملوں میں کچھ الفاظ کے نیچے لکیر لگائی ہے۔ ان الفاظ کے معانی پر دائرہ بنائیں۔

پرندے تانیں اُڑاتے ہیں؟

1.

تمام

(د)

سریلے گیت گانا

(ج)

تنکے اڑانا

(ب)

اونچا اڑنا

(الف)

اچھا لڑکا سویرے اُٹھتا ہے؟

2.

ان میں سے کوئی نہیں

(د)

دوپہر

(ج)

آدھی رات

(ب)

صبح صبح

(الف)

گھاس مخمل کا فرش معلوم ہوتا ہے؟

3.

کوئی بھی نہیں

(د)

بہت نرم کپڑا

(ج)

روئی

(ب)

کاٹن

(الف)

پرندے خدا کا دم بھرتے ہیں؟

4.

تمام

(د)

لمحہ

(ج)

تعریف کرنا

(ب)

گانا گانا

(الف)

جواب:       1۔سریلے گیت گانا                        2۔          صبح صبح                       3۔                   بہت نرم کپڑا                  4۔                   تعریف کرنا      

س3: نیچے کچھ الفاظ دیے گئے ہیں۔ ان الفا ظ کے جملے بنائیں۔

جملے

الفاظ

باغ میں ہر طرف سبزہ نظر آتا ہے۔

سبزہ

ہر مسلمان حضرت محمد ﷺ سے محبت کا دم بھرتا ہے۔

دم بھرنا

شبانہ نے اپنے لیے مخمل کا سوٹ سلوایا۔

مخمل

پرندے باغ میں تانیں اڑاتے  پھر رہے تھے۔

تانیں اڑانا

محنت کامیابی کا زینہ ہے۔

محنت

 

س4: شعر کہنے والے کو شاعر کہتے ہیں۔ شاعر ہر نظم میں کوئی پیغام دیتا ہے۔ شاعر کا دیا جانے والے پیغام مرکزی پیغام خیال کہلاتا ہے۔ اس نظم میں شاعر نے صبح کے مناظر اور اس وقت پرندوں کی حرکات کے بارے میں بتا یا ہے۔ تین سے چار جملوں میں لکھیں کہ شاعر نے اس نظم میں کیا پیغام دیا ہے؟

ج:        جو بچہ صبح سویرے اُٹھتا ہے وہ سارا دن خوش رہتا ہے۔ صبح صبح فضا بہت اچھی ہوتی ہے۔ پرندے اللہ تعالیٰ کی تعریف میں مصروف ہوتے ہیں۔ محنت ہی کامیابی کا ذریعہ ہے ۔

س5: ان سوالات کے جواب دیں۔

نظم کی ہرسطر مصرعہ کہلاتی ہے۔ دو مصرعے مل کر ایک شعر بناتے ہیں

1۔   آپ بتائیں کہ اس نظم میں کتنے اشعار ہیں؟

ج:    اس نظم میں آٹھ شعر ہیں۔

2۔ پرندے کس کی تعریف کرتے ہیں؟

ج:       پرندے اللہ تعالیٰ کی تعریف کرتے ہیں۔

3۔ لڑکا بستہ بغل میں دبا کر کہاں جاتا ہے؟

ج:  لڑکا بستہ بغل میں دبا کر اسکول جاتا ہے۔

4۔ نظم کے کتنے اشعار میں لفظ “ہے” آیا ہے؟

ج: اس نظم کے چار اشعار میں لفظ “ہے”آیا ہے۔

س6: متضاد الفاظ ایسے الفاظ ہوتے ہیں جن کے معانی اصل الفاظ کے بالکل الٹ ہوتے ہیں۔ مثلاٌ “اچھا”کا متضاد ہے “برا”۔

 

متضاد

الفاظ

رات

دن

نفرت

محبت

بیمار

تندرست

آسمان، چھت

فرش

بڑا

چھوٹا

باب نمبر6۔کسان اور بادشاہ

س1: بہت سے مشکل الفاظ چار سے زیادہ حروف سے بنے ہوتے ہیں ،لیکن مشکل الفاظ کے توڑ جوڑ سیکھنے سے الفاظ کی املا آسان ہوجاتی ہے۔ اب ہم اس سبق میں موجود مشکل الفاظ کے توڑ جوڑ سیکھیں گے۔

رائیگاں

=

ں

+

گا

+

ئے

+

را

1

سلطنت

=

ت

+

ن

+

ط

+

سل

2

تراجم

=

م

+

ج

+

را

+

ت

3

گستاخی

=

ی

+

ت

+

ا

+

گس

4

تنہا

=

ا

+

ہ

+

ن

+

ت

5

س2: نیچے دیے گئے جملوں میں کچھ الفاظ کے نیچے لکیر لگائی گئ ہے ۔ ان الفاظ کے معانی پر دائرہ لگائیں۔

حکایات وہ واقعات ہیں جو شخصیات نے تجربے سے اخذ کیے ہوں

1.

تمام

(د)

سننا

(ج)

خریدنا

(ب)

سیکھنا

(الف)

کسان نے تنہا اپنے گدھے کو نکالنے کی کوشش کی

2.

ان میں سے کوئی نہیں

(د)

محنت سے

(ج)

اکیلے ہی

(ب)

زور و شور سے

(الف)

کسان کی کوششیں رائیگاں گئیں؟

3.

کوئی بھی نہیں

(د)

اچھی

(ج)

بے کار

(ب)

کامیاب

(الف)

غلاموں نے بادشاہ کے کان بھرے؟

4.

تمام

(د)

چغلی کھانا

(ج)

حکم دینا

(ب)

نافرمانی کرنا

(الف)

غلاموں نے کہا کہ کسان نے گستاخی کی ہے؟

5.

الف اور ب

(د)

فرماں برداری

(ج)

بے ادبی

(ب)

محنت

(الف)

جواب:       1۔سیکھنا2۔            اکیلے ہی                       3۔                   بے کار                4۔                 چغلی کھانا                                       5۔ بے ادبی

س3: نیچے کچھ الفاظ دیے گئے ہیں۔ ان الفاظ کے جملے بنائیں۔

جملے

الفاظ

اشرف نے تن تنہا آٹے کی پوری بوری اٹھالی۔

تن تنہا

کبھی کسی کی شان میں گستاخی نہ کرو۔

گستاخی

جو بچے اساتذہ کے کان بھرتے ہیں وہ کبھی کامیاب نہیں ہوتے۔

کان بھرنا

نیکی کبھی رائیگاں نہیں جاتی۔

رائیگاں

تجربہ کر کے ہم نتائج اخذ کرسکتے ہیں۔

اخذ

علامہ اقبالؒ  مشہور شاعر ہیں۔

مشہور

س4: مندرجہ ذیل سوالات کے جواب دیں۔

1۔ کسان کے گدھے کو کیا ہوا؟

ج۔  کسان اپنے گدھے کے ساتھ جنگل سے گزررہا تھا۔ جنگل میں کیچڑ تھی ۔گدھا اس کیچڑ میں پھنس گیا ۔ کسان نے اکیلے ہی گدھے کو باہر نکالنے کی کوشش مگر وہ اپنی اس کوشش میں کامیاب نہ ہو سکا۔

2۔ کسان نے پریشانی کے عالم میں کیا کیا؟

ج۔ جب کسان گدھے کو نکالنے میں ناکام رہا تو اس نے پریشانی کے عالم میں اپنے جاننے والوں کو برابھلا کہنا شروع کردیا۔

3۔ بادشاہ نے کسان کے ساتھ کیسا سلوک کیا؟

ج۔ بادشاہ کے غلاموں نے کہا کہ اس کسان کی گردن اڑا دی جائے مگر بادشاہ نے کسان کو معاف کردیا اور اس کے ساتھ ساتھ اسے انعام بھی دیا اور اک سفید گھوڑا بھی دیا۔

4۔ اس حکایت سے ہمیں کیا سبق ملتا ہے؟

ج۔ اس حکایت سے ہمیں سبق ملتا ہے کہ دوسروں کے ساتھ ہمیشہ اچھا سلوک کرو اگرچہ انہوں نے آپ کے ساتھ برائی ہی کیوں نہ کی ہو۔

5۔ شیخ سعدیؒ کی چند مشہور حکایات مندرجہ ذیل ہیں۔ ان کے معانی لکھیں۔

الف۔ نصیحت کی بات چاہے کڑوی ہو، قبول کرو۔

ج۔ اگر نصیحت کرنے والی کی بات ہمیں اچھی نہ لگے،پھر بھی اسے مان لینا چاہیے۔

ب۔ بے موقع بولنے کی عادت سے گونگا بہر اہوجانا بہتر ہے۔

ج۔ بات وہی اچھی ہوتی ہے جو موقع محل دیکھ کر کی جائے، ورنہ خاموش رہنا زیادہ بہتر ہے۔

ج۔ کسی کے عیب ظاہر نہ کرو۔

ج۔  اکر کسی میں کوئی برائی دیکھو تو اس کے بارے میں دوسروں کو نہ بتاؤ۔

د۔ کسی کو اچھے عمل سے خوشی دینا ہزار سجدے کرنے سے بہتر ہے۔

ج۔ دوسروں کے کام آنا بہت بڑی عبادت ہے۔

س6: جب کسی دوسرے کے قول یا کہی ہوئی بات کو لکھا جاتا ہے تو اس کے شروع اور آخر میں جو علامت استعمال کی جاتی ہے اسے واوین کہتے ہیں۔ مثلاٌ حضرت محمدﷺ نے فرمایا: “تم میں سے بہترین شخص وہ ہے جس کے اخلا ق اچھے ہیں ۔”

نیچے کچھ جملے دیے گئے ہیں ۔ ان میں واوین کا استعمال کریں۔

ابو نے کہا: تمہیں پڑھائی میں اور زیادہ محنت کرنی چاہیے۔

ابو نے کہا: “تمہیں پڑھائی میں اور زیادہ محنت کرنی چاہیے۔”

1۔ شیخ سعدیؒ نے فرمایا: علم اور ہنر نہ چوری ہوسکتے ہیں اور نہ ضائع ، بلکہ ان میں ہمیشہ اضافہ ہوتا ہے۔

ج۔ شیخ سعدیؒ نے فرمایا: “علم اور ہنر نہ چوری ہو سکتے ہیں اور نہ ضائع ،بلکہ ان میں ہمیشہ اضافہ ہوتا ہے۔”

2۔ علی بولا: مجھے کہانیاں پڑھنا پسند ہیں۔

ج۔ علی بولا: “مجھے کہانیاں پڑھنا پسند ہیں۔”

3۔ نمرہ نے پوچھا: ہم سیر کو کب جائیں گے؟

ج۔ نمرہ نے پوچھا: “ہم سیر کو کب جائیں گے”؟

4۔ وہ کہنے لگا: میر اخیال ہے کہ ہمیں واپس چلنا چاہیے۔

ج۔ وہ کہنے لگا:”میر اخیال ہے کہ ہمیں واپس چلنا چاہیے۔”

باب نمبر 7۔ ایرک کی اُردو

س1: بہت سے مشکل الفاظ چار سے زیادہ حروف سے بنے ہوتے ہیں ،لیکن مشکل الفاظ کے توڑ جوڑ سیکھنے سے الفاظ کی املا آسان ہوجاتی ہے۔ اب ہم اس سبق میں موجود مشکل الفاظ کے توڑ جوڑ سیکھیں گے۔

نیویارک

=

رک

+

یا

+

و

+

نی

1

بظاہر

=

ر

+

ہ

+

ظا

+

ب

2

خطاط

=

ط

+

ا

+

ط

+

خ

3

عبارات

=

ت

+

ا

+

ار

+

عب

4

معلوماتی

=

تی

+

ما

+

لو

+

مع

5

س2: نیچے دیے گئے جملوں میں کچھ الفاظ کے نیچے لگیر لگائی کئی ہے۔ ان الفاظ کے درست معانی کے گرد دائرہ بنائیں۔

دانیال نے اُردو سیکھا نے کی ہامی بھرلی؟

1.

تمام

(د)

خواہش ظاہر کی

(ج)

مہارت حاصل کی

(ب)

رضامندی ظاہر کی

(الف)

اُردو کے کچھ حروف بظاہر ایک جیسے ہوتے ہیں؟

2.

ان میں سے کوئی نہیں

(د)

سننے میں

(ج)

دیکھنے میں

(ب)

لکھنے میں

(الف)

دانیال کے چچا خطاطی کرتے ہیں؟

3.

کوئی بھی نہیں

(د)

پینٹ کرتے

(ج)

خوب صورت لکھائی

(ب)

تصاویر بناتے

(الف)

ایرک کو چچا کی لکھی ہوئی عبارات پسند آئیں؟

4.

تمام

(د)

تحریریں

(ج)

کتاب

(ب)

سوال

(الف)

ایرک اور دانیال معلوماتی کہانیاں پڑھنے میں مصروف ہوگئے؟

5.

الف اور ب

(د)

علم دینے والی

(ج)

رنگ برنگی

(ب)

خوب صورت

(الف)

جواب:       1۔رضامندی ظاہر کی                        2۔           دیکھنے میں                      3۔                   خوب صورت لکھائی                  4۔                   تحریریں                               5۔ علم دینےوالی

س3: نیچے کچھ الفاظ دیے گئے ہیں۔ ان الفاظ کے جملے بنائیں۔

جملے

الفاظ

میں نے اسلم کے گھر آنے کی ہامی بھر لی۔

ہامی بھرنا

بظاہر تمام پھل میٹھے لگ رہے تھے

بظاہر

میرے داداجان خطاطی کرتے تھے۔

خطاطی

یہ ایک مشکل عبارت ہے۔

عبارت

ٹی ۔ وی پر بہت سے معلوماتی پروگرام آتے ہیں۔

معلوماتی

اُردو زبان پورے پاکستان میں بولی اور سمجھی جاتی ہے۔

زبان

س4: ان سوالات کے جواب دیں۔

1۔ دانیال نے کون سی کہانی سنائی؟

ج: دانیال نے امتیاز علی تاج کے مزاحیہ کردار چچا چھکن کی ایک کہانی سنائی۔

2۔ اُردو کے حروفِ تہجی کی کیا تعداد ہے؟

ج:  اصل میں اُردو زبان کے حروف ِ تہجی کی تعداد 37 ہے لیکن کچھ لوگ “آ” کو بھی الگ حرف سمجھتے ہیں، اس طرح ان کے نزدیک اردو زبان کے حروف تہجی کی تعداد 38 ہوجاتی ہے۔

3۔ دانیال کے چچا کیا کام کرتے تھے؟

ج:  دانیال کے چچا خطاط تھے۔

4۔ ایرک کون سے دو الفاظ کو غلط استعمال کرتا تھا؟

ج: ایرک”کھانے” کو “کہانے” لکھتا تھا جو کہ غلط ہے۔

س5: کچھ الفاظ کے آخر میں “ہ” ہٹا کر “ات”لگا کر ان کی جمع بنائی جاتی ہے۔ مثلاٌ “مطالبہ “کی جمع ہے “مطالبات” ، اسی طرح دیے گئے الفاظ کی جمع بنائیں۔

جمع

واحد

آلات

آلہ

تجربات

تجربہ

واقعات

واقع

خطرات

خطرہ

باب نمبر 8۔پرندے کی فریاد

س1: آپ کو یاد ہے ایسے الفاظ جن کی آوازیں ایک جیسی ہوں “ہم آواز الفاظ”  کہلاتے ہیں۔ مثال کے طورپر “رہنا” کا ہم آواز لفظ ہے “بہنا”۔ نیچے دیے گئے الفاظ کے دو ، دو ہم آواز الفاظ لکھیں

ہم آواز الفاظ

ہم آواز الفاظ

الفاظ

پڑھائی

لکھائی

رہائی

نم

کم

غم

شاہانہ

بہانہ

زمانہ

آباد

شاد

یاد

ہونا

سونا

رونا

س2: ینچے دیے گئے جملوں میں کچھ الفاظ کے نیچے لگیر لگائی کئی ہے۔ ان الفاظ کے درست معانی کے گرد دائرہ بنائیں۔

پرندے چہچہا رہے ہیں؟

1.

تمام

(د)

گیت گانا

(ج)

آزاد گھومنا

(ب)

اونچا اڑنا

(الف)

زخمیوں کی مدد کے لیے صدائیں گونج رہی تھیں؟

2.

ان میں سے کوئی نہیں

(د)

درد

(ج)

بھاگ دوڑ

(ب)

آوازیں

(الف)

بڑھیا اپنا دکھڑا بیان کررہی تھی؟

3.

کوئی بھی نہیں

(د)

دلچسپ قصہ

(ج)

مزاحیہ کہانی

(ب)

دکھی داستان

(الف)

ایک خوب صورت طوطاقفس میں تھا؟

4.

تمام

(د)

پیڑ

(ج)

غار

(ب)

پنجرا

(الف)

قیدی اپنی رہائی چاہتا تھا؟

5.

الف اور ب

(د)

آزادی

(ج)

خوارک

(ب)

کمائی

(الف)

جواب:       1۔گیت گانا                        2۔          آوازیں                      3۔                   دکھی داستان                  4۔                   پنجرا                               5۔ آزادی

س3: نیچے کچھ الفاظ دیے گئے ہیں۔ ان الفاظ کے جملے بنائیں۔

جملے

الفاظ

کسی پرندے کو قفس میں نہیں رکھنا چاہیے۔

قفس

پرندوں کا چہچہانا سب کو اچھا لگتا ہے۔

چہچہانا

آج قیدی کو جیل سے رہائی مل گئی۔

رہائی

اشرف مجھ سے اپنا دکھڑا بیان کررہا تھا۔

دکھڑا

کسی پرندے کو قید نہیں کرنا چاہیے۔

قید

س4: ان سوالات کے جواب دیں۔

1۔ اس نظم میں کتنے اشعار ہیں؟

ج:  اس نظم میں سات اشعا ر ہیں۔

2۔ پرندے کو قید میں کیا یاد آرہا تھا؟

ج:  پرندے کو قید میں اپنا گز ار ہوازمانہ یاد آرہا تھا جب وہ آزاد تھا ۔ اس کے ساتھ ساتھ اسے اپنے ساتھی اور اپنا گھر بھی یاد آرہا تھا۔

3۔ پرندے کے ساتھی کہاں تھے؟

ج: پرندے کے ساتھی اپنے وطن میں آزادی سے رہ رہے تھے۔

4۔ “پرندے کی فریاد” کس شاعر کی نظم ہے؟

ج:  یہ نظم علامہ محمد اقبالؒ کی ہے جو ہمارے قومی شاعر ہیزں۔

5۔ اس نظم  میں قید پرندہ اپنی آزادی کے دنوں کی کن باتوں کو یاد کر رہا ہے؟

ج:  پرندہ قید میں ہے اور وہ اپنی آزادی کے ان دنوں کو یاد کررہا ہے جب وہ باغ میں گیت گاتاپھرتا تھا، اپنی مرضی سے جہاں اس کا جی چاہتا تھاوہ جاتا تھا۔ اس کی ہر حرکت اس کی اپنی مرضی کے مطابق ہوتی تھی۔

س6: آپ کو یاد ہے کہ ایسے الفاظ جن کے معانی ایک دوسرے کے اُلٹ ہوں، ایک دوسرے کے متضاد الفاظ کہلاتے ہیں۔ مثال کو دیکھ کر نیچے دیے گئے الفاظ کے متضاد لکھیں۔

متضاد

الفاظ

حاضر

غائب

آزادی

غلامی

گرم

سرد

صحیح/درست

غلط

آزاد

قید

باب نمبر 9۔ زین کا خواب

س1: “ہ”یا”ھ”لگا کر خالی جگہ پُر کریں۔

بادشاہ

=

—–

+

ا

+

ش

+

باد

1

آنکھ

=

۔۔۔۔۔

+

ک

+

ن

+

آ

2

کھولی

=

ی

+

ل

+

و

۔۔۔۔۔۔+

ک

3

شاہی

=

ی

+

۔۔۔۔۔

+

ا

+

ش

4

خواب گاہ

=

ہ

+

۔۔۔۔۔

+

ب

+

خوا

5

س2: ینچے دیے گئے جملوں میں کچھ الفاظ کے نیچے لگیر لگائی کئی ہے۔ ان الفاظ کے درست معانی کے گرد دائرہ بنائیں۔

وزیر زین کو دالان میں لے گیا؟

1.

تمام

(د)

اسکول

(ج)

بڑا کمرہ

(ب)

باغ

(الف)

زین لائبریری سے ایک دلچسپ کتاب لایا؟

2.

ان میں سے کوئی نہیں

(د)

مہنگی

(ج)

پرانی

(ب)

دل کو اچھی لگنے والی

(الف)

شاہی قلعے کے دو مرکزی  دروازے ہیں؟

3.

کوئی بھی نہیں

(د)

درمیانی

(ج)

لوہے کے

(ب)

بڑے

(الف)

امی نے زین کو  جھنجھوڑا؟

4.

تمام

(د)

ڈانٹا

(ج)

سُلایا

(ب)

ہلایا

(الف)

زین کو تاریخی عمارات پسند تھیں؟

5.

الف اور ب

(د)

خوب صورت

(ج)

اہم

(ب)

گزرے زمانے کی

(الف)

جواب:       1۔بڑا کمرہ                        2۔          دل کو اچھی لگنے والی 3۔                   درمیانی                  4۔                   ہلایا                               5۔ گزرے زمانے کی

س3: نیچے کچھ الفاظ دیے گئے ہیں۔ ان الفاظ کے جملے بنائیں۔

جملے

الفاظ

ہمارے گھر کے مرکزی دروازے کے پاس گملے رکھے ہیں۔

مرکزی

امی جان نے عائزہ کو جھنجھوڑا کہ سات بج گئے ہیں اب اٹھ جاؤ۔

جھنجھوڑا

میں نے ایک دلچسپ کہانی پڑھی۔

دلچسپ

ہمارے گھر میں ایک بہت بڑا دالان ہے۔

دالان

لاہور میں بہت سے تاریخی عمارات ہیں۔

تاریخی

میں ایک ڈراؤنا خواب دیکھا۔

ڈراؤنا

س4:مندرجہ ذیل سوالات کے جوابات دیں۔

1۔ شاہی قلعے کی اینٹیں کیسی تھیں؟

ج:  شاہی قلعے کی اینٹیں باریک اور خوب صورت تھیں۔

2۔ وزیر نے کیا پہنا ہوا تھا؟

ج: وزیر نے چوغہ پہنا ہوا تھا۔

3۔ شاہی قلعے کے کتنے مرکزی دروازے ہیں؟

ج:  شاہی قلعے کے دو مرکزی دروازے ہیں۔

4۔ دیوانِ عام میں کتنے ستون تھے؟

ج:دیوانِ عام میں چالیس ستون تھے۔

س6: نیچے دیے گئے ٹیبل میں کالم “الف” میں مذکر الفاظ دیے گئے ہیں اور کالم”ب” میں مؤنث الفاظ دیے گئے ہیں۔ ان دونوں کالموں کی ترتیب میں فرق ہے۔ کالم “الف” میں موجود مذکر کو کالم “ب” میں موجود درست مؤنث سے ملائیں۔

مؤنث

مذکر

شیرنی

چوہا

گھوڑی

شیر

چڑیا

مور

چوہیا

چڑا

مورنی

گھوڑا

جواب:

مؤنث

مذکر

چوہیا

چوہا

شیرنی

شیر

مورنی

مور

چڑیا

چڑا

گھوڑی

گھوڑا

باب نمبر 10۔ پرچم کی کہانی ، نانی امان کی زبانی

س1۔ مشکل الفاظ کے توڑ جوڑ سیکھنے سے الفاظ کی املا آسان ہو جاتی ہے۔ دیے گئے ارکان کو جوڑ کر الفاظ مکمل کریں۔

مصوری

=

ری

+

و

+

و

+

مص

1

لمبائی

=

ئی

+

ب

+

م

+

ل

2

تعّجب

=

ب

+

ج

+

ع

+

ت

3

شناخت

=

ت

+

خ

+

ا

+

شن

4

کامیابی

=

ی

+

ب

+

یا

+

کام

5

س2۔ نیچے دیے گئے جملوں میں کچھ الفاظ کے نیچے لکیر لگائی گئی ہے۔ ان الفاظ کے درست معانی کے گرد دائرہ لگائیں۔

ہرسال صدف کے اسکول میں مصوری  کا مقابلہ ہوتا تھا۔

1.

تمام

(د)

تصویر بنانا

(ج)

مضمون لکھنا

(ب)

تقریر کرنا

(الف)

نانی کی بات سن کر عائشہ کو تعجب  ہوا؟

2.

ان میں سے کوئی نہیں

(د)

دکھ

(ج)

خوشی

(ب)

حیرت

(الف)

جھنڈا ملک کی شناخت کرتا ہے؟

3.

کوئی بھی نہیں

(د)

ملکیت

(ج)

پہچان

(ب)

خوب صورتی

(الف)

صدف کی تصویر پرچم کے اصلی خاکے  سے ملتی تھی؟

4.

تمام

(د)

نقشہ

(ج)

کپڑے

(ب)

رنگ

(الف)

صدف کامیابی پر بہت خوش تھی؟

5.

الف اور ب

(د)

تصویر

(ج)

جیت

(ب)

ناکامی

(الف)

جواب:       1۔تصویر بنانا                        2۔          حیرت               3۔                   پہچان                  4۔                   نقشہ                               5۔جیت

س3: ان الفاظ کے جملے بنائیں۔

جملے

الفاظ

صدف کے اسکول میں ہر سال مصوری کا مقابلہ ہوتا ہے۔

مصوری

مجھے اسلم کی بات سن کر بڑا تعجب ہوا۔

تعجب

میر شناخت میرے ملک سے ہے۔

شناخت

یہ تصویر انتہائی خوب صورت ہے۔

انتہا

صبح صبح سب پرندے اللہ تعالیٰ کی تعریف کرتے ہیں۔

تعریف

س4: ان سوالات کے جواب دیں۔

1۔ صدف کو کیا کرنے کا شو ق تھا؟

ج: صد ف کو رنگ برنگی تصویریں بنانے کا شوق تھا۔

2۔ جھنڈے میں موجود سفید رنگ کس چیز کی علامت ہے؟

ج:  جھنڈے میں موجود سفید رنگ غیر مسلموں کو ظاہر کرتا ہے۔ یہ بتاتا ہے کہ پاکستان میں دوسرے مذاہب کے لوگ بھی رہتے ہیں۔

3۔ ہمارے جھنڈے میں موجود چاند، تارا کس چیز کی علامت ہیں؟

ج:  جھنڈے میں موجود چاند ہماری ترقی کو اور تارا علم اور روشنی کو ظاہر کرتا ہے ۔ اس طرح پتا چلتا ہے کہ پاکستان ترقی پسند ملک ہے۔ جہاں تعلیم کو بہت اہمیت حاصل ہے۔

4۔ جھنڈے میں موجود سبز رنگ کس چیز کو ظاہر کرتا ہے؟

ج: سبز رنگ مسلمانوں کی نمائندگی کرتا ہے اور امن سکون کی نشان دہی کرتا ہے۔

س5: ایسے الفاظ جن کے معانی ایک جیسے ہوں ، ہم معنی الفاظ کہلاتے ہیں۔ مثال کو دیکھیں اور () میں دیے گئے الفاظ کے ہم معانی الفاظ سے جملے مکمل کریں۔

اس سال صد ف نے مقابلہ ِ مصوری میں حصہ لینے کا فیصلہ کیا ۔                                          (ارادہ)۔

1۔ جھنڈے میں موجود ہر چیز کا کوئی نہ کوئی ۔۔۔۔۔ ہوتا ہے۔                   (معنی )

2۔ پاکستان ہم سب کا۔۔۔۔ ہے۔                                       (ملک)

3۔ انعامات ۔۔۔۔ ہوئے تو صدف بہت خوش ہوئی۔                       (بانٹے)

4۔ صدف پہلے انعام کی۔۔۔۔۔ ٹھہری۔                           (مستحق)

جواب:

1۔ جھنڈے میں موجود ہر چیز کا کوئی نہ کوئی مطلب ہوتا ہے۔                          (معنی)

2۔ پاکستان ہم سب کا وطن ہے۔                      (ملک)

3۔ انعامات تقسیم ہوئے تو صدف بہت خوش ہوئی۔                   (بانٹے)

4۔ صدف پہلے انعام کی حق دار ٹھہری۔                               (مستحق)

باب نمبر 11۔ محنت

ر”مل کر کچھ یوں لفظ بناتے ہیں: “مہر”آپ کے +ہ+س1: بہت سے مشکل الفا ظ میں “ہ”درمیان میں آتا ہے۔ جب بھی “ہ”درمیان میں آتا ہے تو لفظ کی شکل کچھ مختلف بنتی ہے۔ مثال کے طور پر “م  

اس سبق میں بھی کچھ الفاظ موجود ہیں۔ آئیے ان الفاظ کے توڑ جوڑ کی مشق کرتے ہیں۔

یہی

=

   

ی

+

ہ

+

ی

1

تہوار

=

ر

+

ا

+

و

+

تہ

2

بہن

=

   

ن

+

ہ

+

ب

3

نہیں

=

ں

+

ی

+

ہ

+

ن

4

کہیں

=

ں

+

ی

+

ہ

+

ک

5

س2۔ نیچے دیے گئے جملوں میں کچھ الفاظ کے نیچے لکیر لگائی گئی ہے۔ ان الفاظ کے درست معانی کے گرد دائرہ لگائیں۔

اے نونہال بچو! محنت سے کام کرنا:

1.

تمام

(د)

کم عمر

(ج)

نیک

(ب)

محنتی

(الف)

محنت کے بل پہ ساری دُنیا کو رام کرنا؟

2.

ان میں سے کوئی نہیں

(د)

بے بس ہونا

(ج)

دنیا کو فتح کرنا

(ب)

ناکام ہونا

(الف)

جو محنت کرے گا اسے راحت  ملے گی؟

3.

کوئی بھی نہیں

(د)

دولت

(ج)

خزانہ

(ب)

خوشی

(الف)

محنت کی وجہ سے دست کاریاں چل رہی ہیں؟

4.

تمام

(د)

مشینیں

(ج)

ہاتھ سے چیزیں بنانے کا ہنر

(ب)

فیکٹریاں

(الف)

محنت لوگوں کو خزانے کی کان دکھاتی ہے؟

5.

الف اور ب

(د)

دکان

(ج)

زمین سے قیمتی چیزیں نکالنے کی جگہ

(ب)

جسم کا حصہ

(الف)

جواب:       1۔کم عمر                        2۔          دنیا کو فتح کرنا               3۔                   خوشی                  4۔                   ہاتھ سے چیزیں بنانے کا ہنر                               5۔زمین سے قیمتی چیزیں نکالنے کی جگہ

س3: ان الفاظ کے جملے بنائیں۔

جملے

الفاظ

پاکستان میں دنیا کی سب سے بڑی نمک کی کان ہے۔

کان

چنیوٹ میں بہت سی دستکاریاں ہیں

دستکاریاں

محنت میں راحت ہے۔

راحت

محنت کر کے ساری دنیا کو رام کیا جا سکتا ہے۔

رام

کئی نونہال باغ میں آئے ہوئے تھے۔

نونہال

س4: نظم لکھنے والے شخص کو شاعر کہتے ہیں۔ شاعر ہر نظم میں کوئی نہ کوئی پیغام دیتا ہے ۔ شاعر کا دیا جانے والا پیغام مرکزی خیال کہلاتا ہے۔ تین سے چار جملوں میں لکھیں کہ شاعر نے اس نظم میں کیا پیغام دیا ہے؟

ج: شاعر نے اس نظم میں بچوں کو محنت کرنے کا پیغام دیا ہے۔ شاعر کہتا ہے کہ دنیا میں اچھی زندگی گزارنے کےلئے محنت کرنا بہت ضروری ہے۔

س5: کچھ واحد الفاظ کے شروع اور درمیان میں “ا”لگا کر ان کی جمع بنائی جاتی ہے ۔ مثلاٌ “فرد” کی جمع ہے “افراد” ۔ نیچے ٹیبل میں کچھ الفاظ دیے گئے ہیں ان واحد الفاظ کی جمع لکھیں؟

جمع

واحد

اقوام

قوم

افواج

فوج

اطراف

طرف

اعداد

عدد

اشکال

شکل

باب نمبر12۔ عامر کی کھوج

س1: مندرجہ ذیل الفاظ میں سے کچھ الفاظ کی املا درست ہے جب کہ کچھ الفاظ کی املا غلط ہے۔ مثال کو دیکھتے ہوئے ان الفاظ میں سے درست املا والے الفاظ پر دائرہ بنائیں۔

مثتمل

Pمشتمل

مشطمل

مفن

مغن

Pمگن

Pدھول

دہول

دحول

الودہ

Pالوداع

الودا

مالومات

معلوماط

Pمعلومات

س2: نیچے دیے گئے جملوں میں کچھ الفاظ کے نیچے لکیر لگائی گئی ہے۔ ان الفاظ کے معانی کے گرد دائرہ بنائیں۔

یاسر اور عامر چچا کو الوداع کہنے آئے؟

1.

تمام

(د)

پیغام دینا

(ج)

رخصت ہوتے ہوئے سلام کہنا

(ب)

شکریہ ادا کرنا

(الف)

عامر نے مانیٹر کے اوپر سے دھول جھاڑی؟

2.

ان میں سے کوئی نہیں

(د)

پھول

(ج)

پانی

(ب)

مٹی

(الف)

کی-بورڈ بہت سے بٹنوں پر مشتمل  ہوتا ہے؟

3.

کوئی بھی نہیں

(د)

خالی

(ج)

رنگا رنگ

(ب)

سے مل کر بناہوا

(الف)

عامر اور یاسر کمپیوٹر چلانے میں مگن ہوگئے؟

4.

تمام

(د)

مصروف

(ج)

ذہین

(ب)

ماہر

(الف)

 

جواب:       1۔رخصت ہوتے ہوئے سلام کہنا     2۔          مٹی           3۔                   سے مل کر بناہوا                   4۔                   مصروف

س2: ان الفاظ کے جملے بنائیں۔

جملے

الفاظ

عائزہ ہر وقت اپنی پڑھائی میں مگن رہتی ہے۔

مگن

یہ کتاب ایک سوچو الیس صفحات پر مشتمل ہے۔

مشتمل

اسلم کے کپڑے دھول سے اٹے ہوئے تھے۔

دھول

میں چچا جان کو الوداع کہنے ائیر پورٹ تک گیا۔

الوداع

آری لکڑی کانٹے کا ایک آلہ ہے۔

آلہ

س4: ان سوالات کے جوابت دیں۔

1۔ سی ۔پی۔یو کا کیا کام ہے؟

ج: سی۔پی۔یو کمپیوٹر کا دماغ ہوتا ہے۔ یہ انسان کی طرف سے دی گئی ہدایات پر عمل کرتا ہے۔

2۔ مانیٹر کا کیا کام ہے؟

ج: مانیٹر ایک ٹی-وی سکرین کی طرح ہوتا ہے۔ سی۔پی۔یو کی طرف سے مہیا کی گئی معلومات یہاں دکھائی دیتی ہیں۔

3۔ کی۔بورڈ کا کیا کام ہے؟

ج:  کی۔بورڈ کمپیوٹر کے دماغ کو ہدایات دینے کے کام آتا ہے۔

4۔ عامر اور یاسر کس چیز سے خوف زدہ ہوگئے؟

ج:  جب عبداللہ نے ماؤس کا نام لیا تو عامر اور یاسر خوف زدہ ہوگئے۔ انہوں نے سمجھا شاید کمرے میں کوئی چوہا آگیا ہے۔

س5: آپ کو یاد ہے کہ فعل کیس کام کے کرنے یا ہونے کے بارے میں بتاتا ہے ۔کام کرنے والے کو فاعل کہتے ہیں اور جس پر کام کیا جائے اسے مفعوم کہتے ہیں۔ مثلاٌ حامد نے علی کو پڑھایا۔ اس جملے میں حامد فاعل، علی مفعول اور پڑھایا فعل ہے۔ دیے گئے جملوں سے فعل ، فاعل اور مفعول علیحٰدہ  کر کے درست کالم میں لکھیں۔

مفعول

فاعل

فعل

جملہ

نمبرشمار

کرسی

عمران

اٹھائی

عمران نے کرسی اٹھائی۔

صابن

تحریم

خریدا

تحریم نے صابن خریدا۔

چڑیا

سامعہ

ڈالا

سامعہ نے چڑیا کو دانا ڈالا۔

ٹوپی

ابو

پہنی

ابونے ٹوپی پہنی۔

سائیکل

علی

صاف کی

علی نے سائیکل صاف کی۔

 

باب نمبر 13۔ خلیفہ کی دانش مندی

س1: مندرجہ ذیل الفاظ میں سے کچھ الفاظ کی املاد رست ہے جبکہ کچھ الفاظ کی املا غلط ہے۔ مثال کو دیکھتے ہوئے ان الفاظ میں سے درست املا والے الفاظ پر دائرہ لگائیں۔

گزشطہ

Pگزشتہ

غزشتہ

ترضیب

Pترغیب

ترگیب

کاصر

Pقاصر

قاسر

فلاع

فلاہ

Pفلاح

خرچھ

کھرچ

Pخرچ

س2: نیچے دیے گئے جملوں میں کچھ الفاظ کے نیچے لکیر لگائی گئی ہے۔ ان الفاظ کے معانی کے گرد دائرہ بنائیں۔

حضرت عمر بن عبد العزیز رضی اللہ عنہ نے گزشتہ دور کی یاد تازہ کردی؟

1.

تمام

(د)

اسلامی

(ج)

گزرا ہوا

(ب)

سنہرے

(الف)

ہمیں انسانی فلاح کے لئے کام کرناچاہیے؟

2.

ان میں سے کوئی نہیں

(د)

دولت

(ج)

بھلائی

(ب)

برائی

(الف)

حضرت عمر بن عبدالعزیز رضی اللہ عنہ نے سپہ سالاری کو سادگی کی ترغیب دی؟

3.

کوئی بھی نہیں

(د)

منتخب کرنا

(ج)

تلقین کرنا

(ب)

التجا کرنا

(الف)

نعیم آج اسکول آنے سے قاصر ہے؟

4.

تمام

(د)

مجبور

(ج)

ناخوش

(ب)

ڈرتا

(الف)

حضرت عمربن عبدالعزیز رضی اللہ عنہ نے سپہ سالار سے اہم امور  پر بات کی؟

5.

تمام

(د)

انسانوں

(ج)

کاموں

(ب)

راستوں

(الف)

 

جواب:       1۔گزرا ہوا                           2  ۔          بھلائی           3۔                   تلقین کرنا                   4۔                  مجبور                    5۔                     کاموں

س3: مندرجہ ذیل جملوں میں الفاظ کی ترتیب درست کریں؟

1: ہمارا آؤ کھانا لے۔

ج: ہمار ا کھانا لے آؤ۔

2: زندگی آپﷺ گزارتے تھے بہت سادہ۔

ج: آپ ﷺ بہت سادہ زندگی گزارتے تھے۔

3: پریشان بہت ہوئے آپﷺ سن یہ کر۔

ج: آپﷺ یہ سن کر بہت پریشان ہوئے۔

4: کھایا دلیا جی بھر اس کرنے۔

ج: اس نے جی بھر کر دلیا کھایا۔

5: ایک درہم خرچ ہے ہوا اس پر صرف۔

ج: اس پر صرف ایک درہم خرچ ہوا ہے۔

س4: نیچے کچھ الفاظ دیے گئے ہیں۔ ان الفاظ کے جملے بنائیں۔

جملے

الفاظ

میں نے کچھ امور پر آپ سے گفتگو کرنا ہے۔

امور

ہمیں چاہیے کہ ہم سب کو علم حاصل کرنے کی ترغیب دیں۔

ترغیب

گزشتہ سال میں اپنی جماعت میں اول آیا تھا۔

گزشتہ

بارش کی وجہ سے میں آج آپ کے گھر آنے سے قاصر ہوں۔

الوداع

ہمیشہ فلاح و بہبود کے کاموں میں بڑھ چڑھ کر حصہ لینا چاہیے۔

فلاح

فضول خرچ شیطان کا بھائی ہوتا ہے۔

فضول خرچ

س5: ان سوالات کے جوابات دیں۔

1: حضرت عمر بن عبدالعزیز رضی اللہ عنہ سرکاری خزانے کو کہاں خرچ کرتے تھے؟

ج: حضرت عمر بن عبدالعزیز رضی اللہ عنہ سرکاری خزانے کو عوام کی فلاح و بہبود کےلئے خرچ کرتے تھے۔

2: حضرت عمر بن عبد العزیز رضی اللہ نے باورچی سے کیا کہا؟

ج: حضرت عمر بن عبد العزیز رضی اللہ عنہ نے باورچی سے کہا کہ خوب لذیذ کھا نا تیار کرو اور ساتھ ہی جُوکا دلیا بھی تیار کرو۔

3: سپہ سالار کب تک دلیا کھا تا رہا؟

ج: جب تک سپہ سالار کا پیٹ پوری طرح بھر نہیں گیا وہ جوکا دلیا کھاتا رہا۔

4: خلیفہ کا فرمان سننے کے بعد سپہ سالار نے کی عہد کیا؟

ج: خلیفہ کا فرمان سننے اور ا س کے عملی مظاہرے کے بعد سپہ سالار نے سادگی سے زندگی بسر کرنے کا عہد کیا۔

س5: نیچے دیے گئے الفاظ میں سے درست الفاظ سے خالی جگہ پر کریں۔

1۔ خلیفہ سادہ زندگی گزارتے ۔۔۔۔۔۔۔                                (تھے، تھا)

2۔ ان کے دماغ میں ایک ترکیب ۔۔۔۔۔۔۔                                      (آئی، آئے)

3۔ آپﷺ نے سپہ سالار کو پیغام۔۔۔۔۔۔۔۔                                 (بھیجے، بھیجا)

4۔ بھوک کے مارے اس کا برا حال۔۔۔۔۔۔۔۔۔          (تھے،تھا)

5۔ اس نے جی بھر کھانا ۔۔۔۔۔۔۔                                                (کھائے ،کھایا)

جواب۔

1۔ خلیفہ سادہ زندگی گزارتے تھے۔

2۔ ان کے دماغ میں ایک ترکیب آئی ۔

3۔ آپﷺ نے سپہ سالار کو پیغام بھیجا۔

4۔ بھو ک کے مارے اس کا بُرا حال تھا۔

5۔ اس نے جی بھر کر کھا نا کھایا۔

با ب نمبر 14۔ ٹوٹ بٹوٹ کی موٹر کار

س1: آپ کو یاد ہے ایسے الفاظ جن کی آوازیں ایک جیسی ہوں “ہم آواز الفاظ” کہلاتے ہیں۔ مثال کے طور پر”رہائی” کا ہم آواز لفظ “جدائی” ہے۔نیچے دیے گئے الفا ظ کے دو، دو ہم آواز الفاظ لکھیں۔

ہم آواز الفاظ

ہم آواز الفاظ

الفاظ

جان

مان

شان

کھائیں

بائیں

دائیں

چنبیلی

سہیلی

اکیلی

رہے

سہے

کہے

جڑتی

کڑھتی

اُڑتی

س2: نیچے دیے گئے جملوں میں کچھ الفاظ کے نیچے لکیر لگائی گئی ہے۔ ان الفاظ کے معانی پر دائرہ لگائیں۔

ٹوٹ بٹوٹ کی موٹر کار کی شان الگ ہے؟

1.

تمام

(د)

رنگ

(ج)

قیمت

(ب)

انداز

(الف)

ٹوٹ بٹوٹ نے نرالی کار خریدی ہے؟

2.

ان میں سے کوئی نہیں

(د)

مہنگی

(ج)

انوکھی

(ب)

نئی

(الف)

فاطمہ بہت سیانی ہے؟

3.

کوئی بھی نہیں

(د)

عقل مند

(ج)

سست

(ب)

چست

(الف)

ٹوٹ بٹوٹ کا اللہ بیلیہے۔

4.

تمام

(د)

چلانے والا

(ج)

حفاظت کرنےوالا

(ب)

بنانے والا

(الف)

 

جواب:       1۔انداز     2۔          انوکھی           3۔                 عقل مند               4۔                   حفاظت کرنے والا

س3: ان الفاظ کے جملے بنائیں۔

جملے

الفاظ

آپ کی تو ہر بات ہی نرالی ہے۔

نرالی

میر ی مانو بلی بڑی سیانی ہے۔

سیانی

ٹوٹ بٹوٹ کی موٹر کار کا اللہ بیلی ہے۔

بیلی

میرے پاس ایک شان دار کھلونا ہے۔

شان

س4: ان سوالات کے جواب دیں۔

1: ٹوٹ بٹوٹ کی موٹرکار کی کتنی سیٹیں اور کتنے پہیے ہیں؟

ج: ٹوٹ بٹوٹ کی موٹر کار کی دو سیٹیں ہیں اور دو ہی پہیے ہیں۔

2: ٹوٹ بٹوٹ کی موٹر کار کے کتنے انجن اور ہارن ہیں؟

ج: ٹوٹ بٹوٹ کی موٹر کار کے تین انجن ہیں اور چار ہارن ہیں۔

3: ٹوٹ بٹوٹ کی موٹرکار کی شان کیسی ہے؟

ج:ٹوٹ بٹوٹ کی موٹرکار کی شان نرالی ہے۔

4: نظم”ٹوٹ بٹوٹ کی موٹرکار” کس نے لکھی ہے؟

ج: یہ نظم صوفی غلام مصطفیٰ تبسم نے لکھی ہے۔

س5: آپ کو یاد ہے کہ شاعر کا دیا جانے والا پیغام مرکزی خیال کہلاتا ہے۔ تین سے چار جملوں میں لکھیں کہ شاعر نے اس نظم میں کیا پیغام دیا ہے؟

ج: شاعر نے اس نظم میں یہ پیغام دیا ہےکہ ٹوٹ بٹوٹ کی موٹر کار نرالی ہے۔ یہ دوسری کاروں سے ہٹ کر ہے۔ ا س میں بہت سی خوبیاں ہیں۔ لوگ اس کے بارے میں مختلف رائے رکھتے تھے۔

س6: نیچے ٹیبل میں کچھ الفاظ دیے گئے ہیں۔ ان الفاظ کے متضاد لکھیں۔ یادرکھیں کہ متضاد الفاظ ایسے الفاظ ہوتے ہیں جن کے معانی اصل الفاظ کے بالکل الٹ ہوتے ہیں۔ مثلاٌ “دور” کا متضاد “نزدیک”

متضاد

الفاظ

مہنگا

سستا

صاف

گندا

ختم

شروع

امن

جنگ

باب نمبر 15۔سمیر ا کی مانوبلی

س1: مثال کو دیکھتے ہوئے درست لفظ کے نیچے دائرہ بنائیں اور اسے خالی جگہ میں لکھیں۔

سیاہ

Pسیاح

صیاہ

سیاھ

اوبور

Pعبور

عبور

ابور

Pحادثہ

ہادثہ

حادثہ

حادثا

Pشفقت

سفقت

شفقت

شفکت

Pاجر

اغر

اضر

اضر

Pعہد

عھد

عہد

عحد

س2: نیچے دیے گئے جملوں میں کچھ الفاظ کے نیچے لکیر لگائی گئی ہے۔ ان الفاظ کے معانی پر دائرہ لگائیں۔

بلی کے لیے چلنا دشوار تھا؟

1.

تمام

(د)

ممکن

(ج)

مشکل

(ب)

بہت آسان

(الف)

سڑک عبور کرتے ہوئے دائیں بائیں دیکھنا چاہیے۔

2.

ان میں سے کوئی نہیں

(د)

پارکرنا

(ج)

بھاگتے

(ب)

بیٹھتے

(الف)

ہمیں جانوروں پر شفقت کرنی چاہیے؟

3.

کوئی بھی نہیں

(د)

شکار

(ج)

معافی

(ب)

مہربانی

(الف)

اللہ تعالیٰ جانوروں کی مدد کرنے کا اجر دے گا؟

4.

تمام

(د)

رقم

(ج)

معافی

(ب)

ثواب

(الف)

دادا جان نے دونوں بچوں سے عہد  لیا ؟

5.

تمام

(د)

خدمت

(ج)

وعدہ

(ب)

کام

(الف)

 

جواب:       1۔مشکل                       2  ۔          پارکرنا           3۔                   مہربانی                4۔                  ثواب                5۔                    وعدہ

س2: نیچے کچھ الفاظ دیے گئے ہیں۔ ان الفاظ کے جملے بنائیں۔

جملے

الفاظ

اللہ تعالیٰ نیک کاموں کا اجر ضرور دیتا ہے۔

اجر

میں نے عہد کیا ہے کہ میں جھوٹ نہیں بولوں گا۔

عہد

ہمیں چھوٹوں سے شفقت سے پیش آنا چاہیے۔

شفقت

سڑک عبور کرتے وقت دائیں بائیں ضرور دیکھیں۔

عبور

مری کا راستہ بڑا دشوار گزار ہے۔

دشوار

س4: ان سوالات کے جواب دیں۔

1: سمیرا کا گھر کہاں تھا؟

ج: سمیرا کا گھر شاداب نگر میں ایک باغ کے سامنے واقع تھا۔

2: سمیرا کے چچا کیا کام کرتے تھے؟

ج:  سمیرا کے چچا جانوروں کے ڈاکٹر تھے۔

3: چھٹی کے دن سمیرا سے کون ملنے آیا؟

ج: چھٹی کے دن سمیرا کا ماموں زاد بھائی شارق اس سے ملنے آیا۔

4: جانوروں پر شفقت کے بارے میں دادا جان نے کیا کہا؟

ج: دادا جان نے کہا کہ انسانوں کے ساتھ ساتھ جانور بھی ہماری شفقت کے حق دار ہیں۔

س5: ایسے الفاظ جن کے معانی ایک جیسے ہوں، “ہم معانی الفاظ “کہلاتے ہیں۔ مثال کو دیکھیں اور (                    )میں دیے گئے الفاظ کے ہم معانی الفاظ سے جملے مکمل کریں۔

مثال:  سمیر ا کو سیاہ ۔۔۔۔۔۔                         بلی نظر آئی۔                                             (کالی)

1۔ سمیرا بلی کو گھر کے ۔۔۔۔۔۔۔۔ میں لے آئی۔                                                             (آنگن)

2۔ اچھے کام کا ۔۔۔۔۔۔۔۔ ضرور ملتا ہے۔                                                                                                 (ثواب)

3۔ بلی گھر کے باہر۔۔۔۔۔۔۔ بے ہوشی کی حالت میں تھی۔                                                                                           (آدھی)

4۔ ہمیں ہر جان دار کی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کرنی چاہیے۔                                                  (دیکھ بھال)

جواب:

1۔ سمیرا بلی کو گھر کے صحن میں لے آئی۔

2۔ اچھے کام کا اجر ضرور ملتا ہے ۔

3۔ بلی گھر کے باہر نیم بے ہوشی کی حالت میں تھی۔

4۔ ہمیں ہر جان دار کی نگہداشت  کرنی چاہیے۔

باب نمبر 16۔ امی ڈاکٹر کیوں بنیں؟

س1:مثال کو دیکھتے ہوئے درست لفظ پر دائرہ بنائیں اور اسے خالی جگہ میں لکھیں۔

Pلپکا

لپقا

لپکہ

لپق ا

Pہسپتال

ہصپتال

ھسپتال

حسپتال

Pصاحب

صاھب

ساحب

صاہب

Pفلاح

فلاھ

فلاء

فلاہ

Pسہولت

سھولت

صہولت

سحولت

Pدکھائی

دکحائی

دکہائی

دکائی

س2: نیچے دیے گئے جملوں میں کچھ الفاظ کے نیچے لکیر لگائی گئی ہے۔ ان الفاظ کے درست معانی کے گرد دائرہ لگائیں۔

سعدیہ امی جان کا شد ت سے انتظار کر رہی تھی؟

1.

تمام

(د)

بہت زیادہ

(ج)

خوشی سے

(ب)

غصے سے

(الف)

امی جان نے لپک کر سڑک پار کرنا چاہی؟

2.

ان میں سے کوئی نہیں

(د)

تیزی سے

(ج)

احتیاط سے

(ب)

پیدل

(الف)

امی اور ابا پریشانی کے عالم میں کھڑے تھے؟

3.

کوئی بھی نہیں

(د)

ہسپتال

(ج)

حالت

(ب)

ایمرجنسی

(الف)

امی حسبِ معمول دیر سے آئیں؟

4.

تمام

(د)

زبردستی

(ج)

مرضی کے خلاف

(ب)

روزانہ کی طرح

(الف)

سعدیہ نے امی کا ہاتھ بٹانے کا عہد کیا؟

5.

تمام

(د)

حکم ماننا

(ج)

مدد کرنا

(ب)

ہاتھ دبانا

(الف)

جواب:       1۔بہت زیادہ                       2  ۔    تیزی سے                 3۔                   حالت          4۔                  روزانہ کی طرح              5۔                    مدد کرنا

س3: نیچے کچھ الفاظ دیے گئے ہیں۔ ان الفاظ کے جملے بنائیں۔

جملے

الفاظ

میں حسبِ معمول صبح کی سیر کے لئے نکلا۔

حسبِ معمول

ہمیں کام میں دوسروں کا ہاتھ بٹانا چاہیے۔

ہاتھ بٹانا

کھلاڑی تیزی سے گیند کی جانب لپکا۔

لپکا

میں بخار کے عالم میں بھی اسکول چلاآیا۔

عالم

مالی اپنے کام میں مصروف تھا۔

مصروف

س4: ان سوالات کے جواب دیں۔

1: سعدیہ امی سے کیوں ناراض تھی؟

ج: سعدیہ کے علاقے میں ایک نیا پارک بنا تھا۔ سعدیہ اپنی امی جان کے ساتھ اس پارک کی سیر کرنے جانا چاہتی تھی۔ وہ چاہتی تھی کہ اس کی امی جان پانچ بجے تک ہسپتال سے آجائیں مگر وہ اپنے معمول کے مطابق رات دس بچے ہی واپس آئیں جس کی وجہ سے سعدیہ ان سے ناراض تھی۔

2: امی کی آنکھ کہاں کھلی؟

ج : امی جان گاڑی سے ٹکرانے کی وجہ سے بے ہوش ہوگئیں۔ ا ن کی آنکھ ہسپتال میں کھلی۔

3: ایدھی ایمبولینس کی سہولت استعمال کرنے کےلئے کون سا ٹیلی فون نمبر ملایا جاتا ہے؟

ج: ایدھی ایمبولینس کی سہولت استعمال کرنے کےلئے 115 کا نمبر ملایا جاتا ہے۔

4: سعدیہ نے کیا عہد کیا؟

ج: سعدیہ نے عہد کیا کہ وہ اپنی امی کو دوسروں کی مدد کرنے کے نیک کام سے نہیں روکے گی اور اس کام میں وہ خود بھی اپنی امی کا ہاتھ بٹائے گی۔

س5: حرفِ جار ایسا لفظ ہے جو کسی اسم کے بعد آتا ہے اور اسم اور فعل یا اسم اور اسم کا تعلق بیان کرتا ہے۔ مثلاٌ کتاب میز پر ہے۔ اس جملے میں “پر”بتا رہا ہے کہ میز اور کتاب میں کیا تعلق ہے ۔ دی گئی خالی جگہوں کو مناسب حرفِ جار سے پُر کریں۔

باہر

تک

درمیان

پر

میں

1۔ گلاس میز ۔۔۔۔۔۔۔ ہے۔

2۔ دودھ جگ۔۔۔۔۔۔۔ ہے۔

3۔ مجھے کشمیر۔۔۔۔۔۔۔ جانا ہے۔

4۔ درخت گھر کے ۔۔۔۔۔۔۔۔ ہے۔

5۔ علی،زاہد اور حامد کے ۔۔۔۔۔۔ کھڑا ہے۔

جواب۔

1۔گلاس میز پر ہے۔

2۔ دودھ جگ میں ہے۔

3۔ مجھے کشمیر تک  جانے دو۔

4۔ درخت گھر کے  باہر ہے۔

5۔ علی، زاہد اور حامد کے درمیان  کھڑا ہے۔

باب نمبر 17۔ سوہنی دھرتی

س1: نیچے دیے گئے جملوں میں کچھ الفاظ کے نیچے لکیر لگائی گئی ہے۔ ان الفاظ کے معانی پر دائرہ بنائیں۔

اللہ ہماری دھرتی کو سلامت رکھے؟

1.

تمام

(د)

علاقے

(ج)

زمین

(ب)

شہر

(الف)

ہمارے وطن کے دم  سے ہماری شان ہے؟

2.

ان میں سے کوئی نہیں

(د)

آبادی

(ج)

وجہ

(ب)

ذات

(الف)

پاکستان کی خوب صورتی کا پوری دُنیا میں چرچا ہے؟

3.

کوئی بھی نہیں

(د)

مقابلہ

(ج)

جشن

(ب)

شہرت

(الف)

ہم سب کو پاکستان کے ہر شہر اور ہر نگر   سے پیار ہے؟

4.

تمام

(د)

سبزہ

(ج)

کونہ

(ب)

علاقہ

(الف)

ہمارے ملک کا ہر حصہ ہمار ا  میت ہے؟

5.

تمام

(د)

دوست

(ج)

جہان

(ب)

کونہ

(الف)

جواب:       1۔زمین                       2  ۔    وجہ                 3۔                   شہرت                       4۔                  علاقہ              5۔                    دوست

س2: نیچے کچھ الفاظ دیے گئے ہیں۔ ان الفاظ کے جملے بنائیں؟

جملے

الفاظ

دولت نگر گجرات سے قریب ہے۔

نگر

ہماری دھرتی بہت خوبصورت ہے۔

دھرتی

پاکستانی کرکٹ ٹیم کا پوری دنیا میں چرچا ہے۔

چرچا

ہرستارے میں ایک دُنیا آبا د ہے۔

آباد

س3: ایسا گیت جس میں وطن سے محبت کا اظہار کیا جائے ملی نغمہ کہلاتا ہے۔ تین سے چار جملوں میں لکھیں کہ شاعر اس ملی نغمے میں اپنے وطن سے کیا کہ رہا ہے؟

ج:شاعر اپنے وطن کی تعریف کرتے ہوئے کہتا ہے کہ ہمیں تم سے بہت زیادہ محبت ہےا ور ہم تمہیں قیامت تک آزاد دیکھنا چاہتے ہیں۔

س4: مندرجہ ذیل جملوں میں الفاظ کی ترتیب درست کریں۔

1۔ پاکستان پیار ا ہمارا ہے وطن۔

ج:  پاکستان ہمار ا پیا را وطن ہے۔

2۔ پاکستا ن کے دم ہماری شان سے ہے۔

ج: پاکستان کے دم سے ہماری شان ہے۔

3۔ ہرذرہ پاکستان کا ہمیں ہے عزیز۔

ج:ہمیں پاکستان کا ہر ذرہ عزیز ہے۔

4۔ ہم آزاد کو پاکستان دیکھناچاہتے ہیں۔

ج:ہم پاکستان کو آزاد دیکھنا چاہتے ہیں۔

س5: () میں دیے گئے الفاظ کے متضاد کو خالی جگہ میں لکھ کر جملے مکمل کریں۔

1۔ میر ا جوتا نیا  ہے۔                                              (پرانا)

2۔ وہ اب تندرست ہے۔                                    (بیمار)

3۔ آج موسم سرد ہے۔                                                               (گرم)

4۔ سور ج طلوع ہو چکا ہے۔                                                      (غروب)

5۔ اسکول تک راستہ بہت طویل ہے۔                                                                    (مختصر)

باب نمبر 18۔ اچھے شہری

س1: اُردو کے اکثر الفاظ میں”ھ” کا استعمال ہوتا ہے۔ مثال کے طور پر “بھاری” “کھانا”اور “گھاس” ۔آپ کے اس سبق میں کچھ ایسے الفاظ موجود ہیں۔ ان الفاظ کو سامنے رکھتے ہوئے ارکان ملائیں۔

تھیں

=

ں

+

ی

+

ھ

+

ت

1

پوچھنے

=

ے

+

ھ

+

چ

+

پو

2

ڈھیر

=

ر

+

ی

+

ھ

+

ڈ

3

جھاڑو

=

و

+

ڑ

+

ا

+

جھ

4

اچھے

=

ے

+

ھ

+

چ

+

ا

5

س2: نیچے دیے گئے جملوں میں کچھ الفاظ کے نیچے لکیر لگائی گئی ہے۔ ان الفاظ کے درست معانی کے گرد دائرہ لگائیں۔

دادی اماں نے سب کو وقت کی پابندی کا مظاہرہ کرنے کوکہا؟

1.

تمام

(د)

شور مچانا

(ج)

کچھ کر کے دکھانا

(ب)

ڈراما

(الف)

نعمان نے دادی کی بات سن کر منھ بسورا؟

2.

ان میں سے کوئی نہیں

(د)

برامنانا

(ج)

پریشانی دکھانا

(ب)

خوشی دکھانا

(الف)

ہمیں اپنے ماحول کا خیال رکھنا چاہیے؟

3.

کوئی بھی نہیں

(د)

آس پاس کا علاقہ

(ج)

میدان

(ب)

ندی

(الف)

دادی اماں نے علی کی تیمارداری کی؟

4.

تمام

(د)

بیمار کا حال پوچھنا

(ج)

پٹی کرنا

(ب)

بیماری ختم کرنا

(الف)

جواب:       1۔ کچھ کر کے دکھانا                 2۔                   برا منانا                       3۔                  آس پاس کا علاقہ              4۔                    بیمار کا حال پوچھنا

س3: ان الفاظ کے جملے بنائیں۔

جملے

الفاظ

سرکس میں ایک بازی گر نے اپنے فن کا مظاہر ہ کیا۔

مظاہرہ

سلیم کو اس کی پسند کا کھلونا نہ ملاتو اس نے منھ بسور لیا۔

منہ بسورنا

ہمیں اپنے ماحول کو صاف رکھنا چاہیے۔

ماحول

مریض کی تیمارداری کرنا ثواب کا کام ہے۔

تیمارداری

س4: ان سوالات کے جواب دیں۔

1۔ جب احمد نے سڑک پار کرنا چاہاتو دادی اماں نے کیا کہا؟

ج:جب احمد نے سڑک پارکرنا چاہا تو دادی اماں نے کہا کہ ابھی ٹریفک سگنل کی بتی سرخ ہے۔ تمہیں قانون کے مطابق سگنل کے سبز ہونے کا انتظارکرنا چاہیے۔ اور سڑک ہمیشہ زیبراکراسنگ سے پار کرنا چاہیے۔

2۔ شکریہ ادا کرنے پر دادی اماں نے علی کی امی کو کیا کہا؟

ج:جب علی کی امی نے دادی اماں کا شکریہ ادا کیا تو انہوں نے کہا کہ “اچھے شہری دوسروں کی مدد کرتے ہیں۔”

3۔ دادی اماں نے بچوں کو گھرسے کیا لانے کا کہا؟

ج:دادی اماں نے کہا کہ سب بچے اپنے اپنے گھروں سے جھاڑو لے کر آئین اور وقت کی پابندی کا مظاہر ہ کرتے ہوئے آدھے گھنٹے کے اندر اندر میرے پاس پہنچ جائیں ۔

 س5: فعل مستقبل ہمیں آنے والے وقت میں کسی کام کے ہونے کے بارے میں بتاتا ہے۔ مثال کے طور پر “ہم ملتان گئے تھے”تبدیل ہو کر بنے گا”ہم ملتان جائیں گے”نیچے کچھ جملے دیے گئے ہیں۔ ان جملوں کو فعل مستقبل کے لحاظ سے تبدیل کریں۔

1۔ سارا کام کرتی ہے۔

ج:سارا کام کرے گی۔

2۔ آمنہ چاول کھاتی ہے۔

ج:آمنہ چاول کھائے گی۔

3۔ زاہد کتاب پڑھتا ہے۔

ج:زاہد کتاب پڑھے گا۔

4۔ علی کھڑکی سے باہر دیکھتا ہے۔

ج:علی کھڑکی سے باہر دیکھے گا۔

باب نمبر 19۔احسن کی عید

س1:نیچے دیے گئے جملوں میں کچھ الفاظ کے نیچے لکیر لگائی گئی ہے۔ ان الفاظ کے معانی پر دائرہ لگائیں۔

عید خوشی کا تہوار ہے؟

1.

تمام

(د)

خوشی کا دن

(ج)

پہلا دن

(ب)

دکھ کادن

(الف)

احسن بہت بے چینی سے قصاب کا انتظار کررہا تھا؟

2.

ان میں سے کوئی نہیں

(د)

قصائی

(ج)

مالی

(ب)

حلوائی

(الف)

حمید صاحب اور ان کی بیگم خوشیوں سے محروم رہتے ہوں گے؟

3.

کوئی بھی نہیں

(د)

حق دار

(ج)

جسے کچھ میسر نہ ہو

(ب)

باخبر

(الف)

احسن کو رنگین  مالا بہت پسند آئی؟

4.

تمام

(د)

خوب صورت

(ج)

ہری بھری

(ب)

رنگ دار

(الف)

حمید صاحب ایک ضعیف آدمی تھے؟

5.

کوئی بھی نہیں

(د)

شریف

(ج)

بوڑھے

(ب)

عزت دار

(الف)

جواب:       1۔خوشی کا دن                            2۔                                قصائی                  3۔                   جسے کچھ میسر نہ ہو                       4۔                  رنگ دار              5۔                    بوڑھے

س2: ان الفاظ کے جملے بنائیں۔

جملے

الفاظ

بکرا آنے کے بعد احسن کو کسی کی پرواہ نہیں رہتی تھی۔

پرواہ

میر ے پاس ایک رنگین پنسل ہے۔

رنگین

عید خوشیوں کا تہوار ہے۔

تہوار

کل میں نے ایک ضعیف کو سڑک پار کروائی۔

ضعیف

غریب لوگ بہت سی خوشیوں سے محروم رہتے ہیں۔

محروم

س3: مندرجہ ذیل سوالات کے جواب دیں۔

1۔ احسن کا بکرا کیسا تھا؟

ج:احسن کا بکرا بہت خوب صورت تھا۔ اس کی کھال سفید تھی جس پر بھورے دھبے بنے ہوئے تھے۔ اس کے گلے میں ایک رنگین مالا تھی۔

2۔ حمید صاحب نے بکرا کیوں نہ خریدا؟

ج:حمید صاحب بوڑھے آدمی تھے۔ وہ کوئی کام کاج نہ کر سکتے تھے۔ ان کی آمد ن کا کوئی ذریعہ نہیں تھا، اس لیے حمید صاحب نے بکرا نہ خریدا۔

3۔ احسن عید کی نماز پڑھنے کے بعد کس کا انتظار کرنے لگا؟

ج:احسن عید کی نماز پڑھنے کے بعد قصائی کا انتظار کرنے لگا۔

4۔ عید کیسا تہوار ہے؟

ج:عید خوشیون کا تہوار ہے۔ ہمیں چاہیے کہ ہم اپنی خوشیوں میں ان لوگوں کو بھی شامل کریں جو ان خوشیوں سے محروم ہوتے ہیں۔

س4: فعل ماضی کسی ایسے کام کے ہونےکے بارے  میں بتاتا ہے جو گزرے ہوئے وقت میں ہوا ہو۔ مثال کے طور پر اگر احمد دو سال پہلے کراچی گیا تھا تو ہم لکھیں گے : “احمد کراچی گیا تھا۔”اس جملے میں “گیا تھا”ہمیں بتا رہا ہے کہ احمد یہ کا م کرچکا ہے۔ نیچے کچھ جملے دیے گئے ہیں۔ ان جملوں کو فعل ماضی کے لحاظ سے تبدیل کریں۔

1۔ احمد نے پرانے کپڑے پہنے ہوئے ہیں۔

ج:احمد نے پرانے کپڑے پہنے ہوئے تھے۔

2۔ احسن افسردہ ہے۔

ج:احسن افسردہ تھا۔

3۔ ثانیہ کے ہاتھ میں پلیٹ ہے۔

ج: ثانیہ کے ہاتھ میں پلیٹ تھی۔

4۔ دلاور گانا گا رہا ہے۔

ج:دلاور گانا گا رہا تھا۔

باب نمبر 20۔ برسات

س1: نیچے دیے گئے جملوں میں کچھ الفاظ کے نیچے لکیر لگائی گئی ہے۔ ان الفاظ کے معانی پر دائرہ بنائیں۔

آسمان پر کالی گھٹائیں چھارہی ہیں؟

1.

تمام

(د)

دھند

(ج)

بارش

(ب)

کالے بادل

(الف)

بادل زورو شور سے مینہ برسارہے تھے؟

2.

ان میں سے کوئی نہیں

(د)

اولے

(ج)

بارش

(ب)

بجلی

(الف)

بچے خوشی سے دھوم مچارہے ہیں؟

3.

کوئی بھی نہیں

(د)

سوگ منانا

(ج)

گند مچانا

(ب)

شور مچانا

(الف)

لوگ دل بہلانے کے لئے باغ میں جارہے تھے؟

4.

تمام

(د)

بھاگنا

(ج)

شور مچانا

(ب)

پریشانی دور کرنا

(الف)

لڑکے بالےشور مچارہے تھے؟

5.

کوئی بھی نہیں

(د)

بوڑھے

(ج)

چھوٹی لڑکیاں

(ب)

چھوٹے لڑکے

(الف)

جواب:       1۔کالے بادل                            2۔                                بارش                 3۔                   شور مچانا                     4۔                 پریشانی دور کرنا            5۔                    چھوٹے لڑکے

س2: ان الفاظ کے جملے بنائیں۔

جملے

الفاظ

ہماری کرکٹ ٹیم کی ساری دنیا میں دھوم ہے۔

دھوم

بچے بارش میں دل بہلاتے ہیں۔

دل بہلانا

آج صبح سے کالی گھٹا چھائی ہوئی ہے۔

گھٹا

کل سے پورے ملک میں مینہ برس رہا ہے۔

مینہ

آسمان پر کالے بادل بہت خوب صورت لگتے ہیں۔

بادل

س3: شعر لکھنے والے کو شاعر کہتے ہیں۔ شاعر ہر نظم میں کوئی نہ کوئی پیغام دیتا ہے شاعر کا دیا جانے والا پیغام مرکزی خیال کہلاتا ہے، تین سے چار جملوں میں لکھیں کہ شاعر نے اس نظم میں کیا پیغام دیا ہے؟

ج:شاعر نے اس نظم میں یہ پیغام دیا ہے کہ برسات کا موسم بہت خوش گوار ہوتا ہے ۔بھیڑیں اور دوسرے جانور لطف اٹھاتے ہیں۔ بچے بھی باغوں میں جا کر خوب جھولا جھولتے ہیں اور لطف اٹھاتے ہیں۔

س4: نیچے دو کالم دیے گئے ہیں۔ کالم الف میں چیزوں کے نام لکھے ہوئے ہیں اور کالم ب میں ان کے کیے گئے کام لکھے گئے ہیں۔ مثال کو دیکھتے ہوئے دونوں کالموں کو آپس میں ملائیں۔

کالم ب

کالم الف

 دھوم مچائیں

کالی گھٹائیں

مینہ برسائیں

بھیڑیں

نہائیں

مینڈک

ممیائیں

چڑیاں

ٹرائیں

لڑکے

 

جواب:

کالم ب

کالم الف

مینہ برسائیں

کالی گھٹائیں

ممیائیں

بھیڑیں

ٹرائیں

مینڈک

نہائیں

چڑیاں

دھوم مچائیں

لڑکے

س6: آپ کو یاد ہوگا کہ عام شخص، چیز یا جگہ کے نام کو اسم نکرہ کہتے ہیں اور خاص چیز، جگہ یا شخص کے نام کو اسم معرفہ کہتے ہیں۔

اسم معرفہ

اسم نکرہ

جملہ

احمد

لڑکا

مثال: احمد اچھا لڑکا ہے۔

پاکستان

ملک

ہمار ا ملک پاکستان ہے۔

کراچی، پاکستان

شہر

پاکستان کا سب سے بڑا شہر کراچی ہے۔

بانگِ درا ،علامہ اقبال

کتاب

“بانگِ درا “علامہ اقبالؒ کی کتاب ہے۔

نیلا

رنگ

میرا پسندید ہ رنگ نیلا ہے۔

باب نمبر 21۔اتفاق میں برکت ہے

س1: نیچے دیے گئےجملوں میں کچھ الفاظ کے نیچے لکیر لگائی گئی ہے۔ ان الفاظ کے درست معانی کے گرد دائرہ بنائیں۔

کسان نے اپنے بیٹوں کو لکڑیوں کا ایک گٹھا توڑ نے کو کہا؟

1.

تمام

(د)

دروازہ

(ج)

مجموعہ

(ب)

گلدان

(الف)

اتفاق میں برکت ہے؟

2.

ان میں سے کوئی نہیں

(د)

مل جل کر رہنا

(ج)

دوسرے کی مدد کرنا

(ب)

بانٹنے

(الف)

اے میرے خدا ! میرے بیٹوں کو ہدایت دے؟

3.

کوئی بھی نہیں

(د)

دولت

(ج)

گمراہی

(ب)

راہنمائی

(الف)

باری باری چھڑیوں کے اس گھٹے کو توڑو؟

4.

تمام

(د)

گھاس

(ج)

باریک لکڑیاں

(ب)

موٹی لکڑیاں

(الف)

جواب:       1۔مجموعہ                            2۔                                مل جل کر رہنا                 3۔                   راہنمائی                     4۔                 باریک لکڑیاں           

س2: ان الفاظ کے جملے بنائیں۔

جملے

الفاظ

اللہ تعالیٰ سب کو نیکی کی ہدایت دے۔

ہدایت

ہمیں آپس میں اتفاق اور محبت سے رہنا چاہیے۔

اتفاق

لکڑہارا لکڑیوں کا ایک گٹھا سر پر رکھ کر لارہ تھا۔

گٹھا

بوڑھے کے ہاتھ مین ایک چھڑی تھی

چھڑی

س3: تصویروں کی مدد سے کہانی لکھیں؟

ج:ایک کسان کے چار بیٹے تھے۔ وہ چاروں آپس میں لڑتے جھگڑتے رہتے تھے۔ ان کا بات ان کے روز روز کے لڑائی جھگڑے سے تنگ تھا۔ وہ انہیں ہر وقت لڑنے سے بازرہنے کا کہتا مگر بچوں پر کوئی اثرنہ ہوتا۔

ایک دن کسان کے ذہن میں ایک ترکیب آئی۔ اُس نے اپنے چاروں بیٹوں کوا پنے پاس بلوایا اور کہا کہ سب لڑکے ایک ایک لکڑی لے کر آئیں۔ چاروں لڑکے لکڑیاں لے آئے۔ کسان نے چاروں لکڑیوں کو ایک گٹھے کی صورت میں باندھ دیا اور اپنے لڑکوں سے کہا کہ اس گٹھے کو توڑ دیں۔ سب نے باری باری اس گھٹے کو توڑنے کی کوشش کی مگر وہ اس میں ناکام رہے۔ پھر کسان نے اس گٹھے کو کھول دیا اور ایک ایک لکڑی چاروں لڑکوں کو دے کر کہا اب اس لکڑی کو توڑیں۔ چاروں لڑکوں نے آسانی سے لکڑی توڑ دی۔ اب کسان نے ان سے کہا کہ “دیکھوبچو! اگر تم لکڑیوں کے اس گٹھے کی طرح آپس مین متحد رہو گے تو کوئی بھی تمہیں نقصان نہیں پہنچا سکے گا اور اگر تم ایک ایک لکڑی کی طرح الگ الگ رہے تو ہر کوئی نقصان پہنچا سکتا ہے۔”یہ بات کسان کے بچوں کی سمجھ میں آگئی اور وہ آپس میں اتفاق اور اتحاد سے رہنے لگے۔

نتیجہ :  اتفاق میں برکت ہے۔

باب نمبر 22۔ یومِ آزادی

س1: سبق کے مطابق مختصر جواب دیں۔

1۔ قوموں کی زندگی میں سب سے بڑھ کر کون سی نعمت ہوتی ہے؟

ج:قوموں کی زندگی میں سب سے بڑھ کر آزادی کی نعمت ہے۔

2۔ یومِ آزادی کی سب سے بڑی تقریب ہر سال کہاں منعقد ہوتی ہے؟

ج:یومِ آزادی کی سب سے بڑی تقریب ہر سال پاکستان کے وفاقی دارالحکومت اسلام آباد میں ہوتی ہے۔

3۔ یومِ آزادی کے موقع پر ہم کس عہد کو دُہراتے ہیں؟

ج:یومِ آزادی کے موقع پرہم اس عہد کو دُہراتے ہین کہ وطن عزیز کی حفاظت میں اپنا تن من دھن سب کچھ قربان کردیں گے۔

4۔ بانی پاکستان  کا مزار کس شہر میں واقع ہے؟

ج: بانی پاکستان کا مزار کراچی میں واقع ہے۔

س2: سبق کے مطابق درست جواب کے گرد دائرہ لگائیں۔

یومِ آزادی منایا جاتا ہے؟

1.

11 ستمبرکو

(د)

14 اگست کو

(ج)

21اپریل کو

(ب)

23 مارچ کو

(الف)

دنیا میں عزت اور احترام کی نظر سے دیکھا جاتا ہے؟

2.

فوجی لحاظ سے مضبوط اقوام کو

(د)

معاشی لحاظ سے مضبوط اقوام کو

(ج)

ترقی یافتہ اقوام کو

(ب)

آزاد قوم کو

(الف)

سبز ہلالی پرچم کے سٹال لگ جاتے ہیں؟

3.

مارکیٹوں میں

(د)

گھروں میں

(ج)

دفاتر میں

(ب)

پارکوں میں

(الف)

وفاقی دارالحکومت میں سلامی دی جاتی ہے؟

4.

31 توپوں کی

(د)

30 توپوں کی

(ج)

21 توپوں کی

(ب)

20 توپوں کی

(الف)

علامہ محمد اقبالؒ کا مزار واقع ہے؟

5.

کوئٹہ میں

(د)

سیالکوٹ میں

(ج)

کراچی میں

(ب)

لاہور میں

(الف)

جواب:       1۔14 اگست کو                            2۔                                آزاد قوم کو                 3۔                   مارکیٹوں میں                     4۔                 31 توپوں سے                                   5  ۔ لاہور میں  

باب نمبر 23۔ میجر عزیز بھٹی شہید

س1: مندرجہ ذیل الفاظ کے معانی لکھیں۔

معانی

الفاظ

ارادے

عزائم

خاص

نمایاں

جان قربان کرنے والے

جاں باز

حفاظت

دفاع

انعام

اعزاز

س2: مناسب الفاظ کی مدد سے خالی جگہ پرکریں۔

1۔ بھارت نے 6ستمبر 1965ء کو پاکستان پر حملہ کیا۔                                                                                         (ٹینک)

2۔ میجر عزیز بھٹی شہید نے برکی سیکٹر میں اپنی کمپنی کی کمان کی۔                                              (6ستمبر)

3۔ میجر عزیز بھٹی شہید ٹینک کا گولہ لگنے سے شہید ہوئے۔                                                                                                     (نشانِ حیدر)

4۔ میجر عزیز بھٹی شہید نے نشانِ حیدر حاصل کیا۔                                                         (برکی)

س3: الفاظ کو جملوں میں استعما ل کریں۔

جملے

الفاظ

6 ستمبر 1965ء کو پاکستانی افواج بےخوف ہوکر لڑیں۔

بے خوف

پاکستانی افواج بہادر اور نڈر ہیں۔

بہادر

6ستمبر 1965ء کی جنگ میں افواج پاکستان نے ملک کا بھرپور دفاع کیا۔

دفاع

بہادر نوجوانوں نے ملک کی خاطر جانیں نچھاور کردیں۔

نچھاور کرنا

پاکستانی افواج نے دشمن کا سخت مقابلہ کیا۔

مقابلہ

باب نمبر 24۔ قومی پرچم

س1: درج ذیل سوالات کے جوابات تحریر کریں۔

1۔ باسم ،طیب اور قرۃ العین نے کس رنگ کا لباس پہنا ہوا تھا؟

ج:باسم، طیب اور قرۃ العین نے سبز اور سفید رنگ کا لباس پہنا ہوا تھا۔

2۔ تقریب ختم ہونے پر کس چیز کی دھن بجائی گئی؟

ج:تقریب ختم ہونے پر قومی ترانے کی دھن بجائی گئی۔

3۔ قومی پرچم کے آداب کیا ہیں؟ کم از کم تین آداب لکھیں؟

ج: قومی پرچم کے تین آداب مندرجہ ذیل ہیں۔

1۔ قومی پرچم کو سورج غروب ہونے سے پہلے پہلے اُتار لیں۔

2۔ قومی پرچم پر صرف چاند اور ستارے کا نقش ہونا چاہیے۔

3۔ قومی پرچم لہرایا جائے تو احتراماٌ کھڑے ہوجائیں۔

س2: درست جواب کے گرد دائرہ لگائیں۔

سبز ہلالی پرچم تیار کیا گیا؟

1.

تمام

(د)

سرسید احمد خاں کی ہدایت پر

(ج)

علامہ اقبالؒ کی ہدایت پر

(ب)

قائداعظم ؒ کی ہدایت پر

(الف)

پاکستانی پرچم پر بنا ہوا ہے؟

2.

الف اور ب

(د)

چاند اور تارا دونوں

(ج)

تارا

(ب)

چاند

(الف)

جب قومی ترانے کی دھن بجائی گئی تو سب؟

3.

کوئی نہیں

(د)

چل پڑے

(ج)

کھڑے ہوگئے

(ب)

بیٹھ گئے

(الف)

بچوں کی ہردل عزیز ٹیچر کا نام تھا؟

4.

تمام

(د)

مس اقراء

(ج)

مس عاتکہ

(ب)

مس ناہید

(الف)

قومی ترانہ کس شاعر نے لکھا؟

5.

ان میں سے کوئی نہیں

(د)

کلیم عثمانی نے

(ج)

جمیل الدین عالی نے

(ب)

حفیظ جالندھری نے

(الف)

جواب:       1۔قائداعظم ؒ کی ہدایت پر                            2۔                                چاند اور تارا دونوں                 3۔                   کھڑے ہوگئے                     4۔                 مس اقراء                                   5  ۔ حفیظ جالندھری نے

باب نمبر 25۔ مینارِ پاکستان

س1: درج ذیل سوالات کے جوابات دیں۔

1۔ مینارِ پاکستان کہاں واقع ہے؟

ج:مینارِ پاکستان لاہور میں منٹوپارک (گریٹر اقبال پارک ) میں واقع ہے۔

2۔ قراردادِ پاکستان کب پیش کی گئی؟

ج: قراردادِ پاکستان 23 مارچ 1940ء کو پیش کی گئی۔

3۔ قراردادِ پاکستان کس شخصیت نے پیش کی؟

ج: قراردادِ پاکستان شیرِ بنگال مولوی فضل حق نے پیش کی۔

4۔ مینار ِ پاکستان کب تعمیر کیا گیا؟

ج: مینارِ پاکستان کی تعمیر 1960ء میں شروع اور 1968ء میں مکمل ہوئی۔

س2: درست جواب کے گرد دائرہ لگائیں۔

قراردادِ پاکستان میں پیش ہوئی؟

1.

تمام

(د)

23 مارچ 1941ء کو

(ج)

23 مارچ 1940ء کو

(ب)

23 مارچ 1939ء کو

(الف)

مینارِ پاکستان پیش ہوئی؟

2.

الف اور ب

(د)

پھول کی پتیوں کی طرح

(ج)

پودے کی طرح

(ب)

درخت کی طرح

(الف)

کانگریسی وزارتوں نے مسلمانوں کے ساتھ؟

3.

کوئی نہیں

(د)

دوستی کا رویہ رکھا

(ج)

براسلوک کیا

(ب)

اچھا سلوک کیا

(الف)

منٹوپارک کا نیانام ہے؟

4.

تمام

(د)

گریٹر اقبال پارک

(ج)

سرسید احمد خاں پارک

(ب)

قائداعظم ؒ پارک

(الف)

جنگِ آزادی لڑی گئی؟

5.

ان میں سے کوئی نہیں

(د)

1858ء میں

(ج)

1857ء میں

(ب)

1856ء میں

(الف)

جواب:       1۔23مارچ 1940ء کو                            2۔                                پھول کی پتیوں کی طرح                 3۔                   براسلوک کیا                     4۔                 گریٹر اقبال پارک                                   5  ۔ 1857ء میں

باب نمبر 26۔ دوسروں کی پسند کا خیال رکھیں

) کا نشان لگائیں۔O) اور غلط جملے کے سامنے (Pس1: درست جملے کے سامنے (

)P1۔ دوسروں کی بات کو برداشت کرناچاہیے۔                                                                                                                                                                                                              (

)P2۔ دوسروں کی رائے کا خیال رکھیں۔                                                                                                                                                                                                                   ( 

)O3۔ لڑنا اچھی بات ہے ۔                                                                                                                      (

)O4۔ دوسروں کی پسند کا خیال نہ رکھیں ۔                                                                                                                                      (

)P5۔ قطار بنانا اچھی بات ہے۔                                                                                                                                                        (

)P6۔ سب کو اپنی خوشی میں شریک کریں۔                                                                                                                                                       (

س2: مناسب الفاظ کی مدد سے خالی جگہ پرکریں۔

عزت

محبت

اچھے

پسند

رائے

خیال

1۔ہمیں ایک دوسرے کی ۔۔۔۔۔۔ کرنی چاہیے۔

2۔ ہمیں دوسروں کا ۔۔۔۔۔ رکھیں ۔

3۔ ہمیں دوسروں کی۔۔۔۔۔۔ کا احترام کرنا چاہیے۔

4۔ دوسروں کی پسند کا خیال رکھنے سے آپس میں ۔۔۔۔۔ بڑھتی ہے۔

5۔ سب رنگ۔۔۔۔ ہوتے ہیں۔

6۔ دوسروں کی۔۔۔۔۔ کا خیال رکھنے سے آپس میں محبت بڑھتی ہے۔

جواب:       1۔عزت                            2۔                                خیال                 3۔                 رائے                 4۔                محبت                                   5  ۔ اچھے                     6۔                     پسند

س3: درج ذیل الفاظ کی مدد سے ایسے جملے بنائیں جو ان کامفہوم واضح کردیں۔

جملے

الفاظ

ہمیں چاہیے کہ ہم دوسروں کی ناپسندیدہ باتیں بھی برداشت کریں۔

برداشت

ہمیں دوسروں کی پسند کا خیال رکھنا چاہیے۔

خیال

استاد کا احترام کرنے والا بچہ ہمیشہ کامیاب رہتا ہے۔

احترام

کوشش کرنے سے ہر کام ہوجاتا ہے۔

کوشش

ختم شد

————-

———

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.