نوٹس/ مشقی سوالات وجوابات : مبادیات ہوم اکنامکس جماعت دہم (10) پنجاب ٹیکسٹ بک بورڈ لاہور پاکستان

نوٹس/ مشقی سوالات وجوابات :  مبادیات ہوم اکنامکس جماعت دہم (10) پنجاب ٹیکسٹ بک بورڈ لاہور پاکستان

(Introduction to Home Economics) باب 9      ۔                                                پارچہ بافی اور لباس  کا تعارف

سوالات

سوال1۔ ذیل  میں دے گئے بیانات میں سے ہر بیان کے نیچے چار ممکنہ جوابات دیے گئے ہیں۔ درست جواب کے گرد دائرہ لگائیں۔

1۔ ریشہ کپڑوں کی تیاری کا کونسا جز ہے؟

(الف)                                                                                                           بنیادی                                           (ب)                      اہم                                                                                            (ج)                 مکمل                                                                 (د)                    ثانوی

2۔ ریشوں کی کتنی اقسام ہیں؟

(الف)                                                                                                                                             ایک                                                                                                                                                       (ب)                                                                                                                                                                                                          دو                                                                                                      (ج)                                                                                                                                                                                         تین                                                                                                                                                                                                                                                           (د)                                                                                                                   چار

3۔ پارچہ بافی کے ریشوں کی شناخت کےلئے کتنے طریقے استعمال کیے جاتے ہیں؟

(الف)                                                                                                                          دو                                                                                                                                       (ب)                                                                                                                                                                   چار                                                                              (ج)                                                                                                            پانچ                                                                                                                                                                         (د)                                                                               چھ

4۔ جلانے کے عمل سے کپڑوں کی شناخت کا طریقہ کیسا ہے؟

(الف)                                                                                                         اہم                                                                 (ب)                      غیر اہم                                                      (ج)               قابلِ اعتبار                                                                                                                                                                                        (د)                                                                                     ضروری

5۔نائلون کے ریسے میں کس قد ر چمک ہوتی ہے؟

(الف)                                                                                                         بہت زیادہ                                                                                                                       (ب)                                                                  ہلکی سی                                             (ج)                                                              بالکل نہیں                                                                                                                          (د)                                درمیانی

6۔ قدرتی ریشے کتنے ذرائع سے حاصل ہوتے ہیں؟

(الف)                                            دو                                                                                                                                                         (ب)                                                            تین                                                           (ج)                                                                                             چار                                                           (د)                                                 چھ

7۔ ریشم کس ذریعہ سے حاصل کیا جاتا ہے؟

(الف)                                                                                                           ریشم کے کیڑے سے                                                                                                                                                                                                                               (ب)                                  پودے سے                                                                                            (ج)                                                                                                      بنولے سے                                                                                                                                                             (د)                                                                                           رؤاں

8۔ رے آن کتنے ناموں سے پہچانا جاتا ہے؟

(الف)                                                                                                           تین                     (ب)                                                                                                چار                                                                                               (ج)                                                                    چھ                                                                     (د)                                         سات

9۔ کس ریشے ہر پھپھوندی جلد اثر انداز ہوتی ہے؟

(الف)                                                                                                           سوتی                            (ب)                                                              اونی                                                                                      (ج)                                                                       ریشمی                                                          (د)                                            خودساختہ

10۔ اونی ریشے لمبائی میں کیسے ہوتے ہیں؟

(الف)                                                                                                           بہت بڑے                                                                                   (ب)                                          چھوٹے بڑے                                                                                   (ج)                                                                                 چھوٹے                                                                                       (د)                                          لمبے

جوابات: (1-الف)(2-ج)(3-ج)(4-ج)(5-ب)(6-الف)(7-الف)(8-الف)(9-الف)(10-ب)

سوال 2 ۔ مختصر سوالا ت کے جوابا ت تحریرکریں۔

1۔ پارچہ بافی کی تعریف کریں؟

پارچہ بافی کے معنی بُننا کے ہیں۔ یہ لاطینی زبان کا لفظ ہے۔ پارچہ بافی صنعت و حرفت کاوہ شعبہ ہے جہاں قدرتی اور انسانی خودساختہ ریشوں سے کئی اقسام کے سوتی، اونی ،ریشمی اور دیگرپارچہ جات بنائے جاتے ہیں۔

2۔ لباس کی تعریف کریں؟

لباس کی تعریف:

لباس سے مراد قدرتی اور مصنوعی ریشوں سے تیارکردہ کپڑے ہیں جو جسم کو ڈھانپنے اور انسان کی شخصیت کی شناخت اور آرائش کے لئے استعمال ہوتے ہیں۔ لباس چاہے گھاس، پتے اور کھال کے ہوں یا موجودہ دور کے قدرتی او رمصنوعی ریشوں سے تیارکئے ہوئے ہوں یعنی ہر وہ چیز جو جسم کو ڈھانپنے کے لئے استعمال کی جائے، اسے “لباس یا پوشاک” کہتے ہیں۔مثلاٌ زمانہ قدیم کے لوگ جنگلوں میں رہتے تھے، وہ اپنے جسم کو ڈھانپنے کےلئے درختوں کے پتوں ،چھال اور جانوروں کی کھال استعمال کرتے تھے۔ یہ ان کا لباس تھا۔

3۔ ریشے سے کیا مراد ہے؟ ریشوں کی اقسام کے نام لکھیں۔

ریشے کی تعریف:

یہ خام مال کاوہ تار ہے جس سے دھاگا بنایا جاتا ہے۔ اور یہ دھاگہ کپڑابنانے میں استعمال کیا جاتا ہے۔ ریشہ کپڑے بنانے کے لئے ایک بنیادی جزو ہے۔ مثلاٌ کپاس ایک عام روئی ہے لیکن اس روئی میں ان گنت ریشے ہوتے ہیں۔ ان ریشوں کو مختلف مراحل سے گزار کر دھاگا تیار کیا جاتا ہے۔ جس سے تمام سوتی کپڑے بنائے جاتے ہیں۔ مثلاٌ بھیڑ کی اُون سے اُونی کپڑا بنایاجاتا ہے جو مختلف مراحل سے گزرنے کے بعد دھاگا بنتا ہے۔

ریشوں کی اقسام:

ا۔ قدرتی ریشے

ب۔ انسانی خودساختہ ریشے

ج۔ کیمیائی ریشے

4۔ دھگا توڑنے کے عمل سے کپڑوں کی شناخت کیونکر کی جاتی ہے؟

دھاگاتوڑنے کے عمل سے کپڑوں کی شناخت:

کپڑے کی پائیداری اور مضبوط جانچنے کے لئے کپڑے کے چھوٹے سے ٹکڑے میں سے 10 سے 15 سینٹی میٹر لمبا دھاگا نکالیں اور دھاگے کے بل کھولیں کیونکہ دو یا تین تاروں کو بل دے کر دھاگا بنایا جاتا ہے  دھاگے کی شناخت کے لئے صرف ایک تارلیاجاتا ہے۔ اس تار کو آہستہ سے کھینچیں اور توڑ کر دیکھیں تو مختلف کپڑوں کے دھاگوں کی شکل توڑنے پراس طرح ہوگی۔

کاٹن:

کاٹن کے سرے آگے سے برش کی طرح منتشر ہوتے ہیں۔

لینن:

لینن کاٹن کے مقابلے میں زیادہ ٹوٹتا ہے۔ سرے سیدھے ،لمبے اور تھوڑے سے چمکیلے ہوتے ہیں۔

اُونی کپڑا:

اُونی کپڑالچک سے ٹوٹتا ہے اور دھاگے کی سطح کھردری ہوتی ہے۔

رے آن:

رے آن آسانی سے ٹوٹتا ہے۔ سرے درخت کی شاخوں کی طرح نظرآتے ہیں۔

ریشم:

ریشم زیادہ زور سے ٹوٹتا ہے ۔سرے عمدہ اور چمکیلے ہوتے ہیں۔

نائلون:

نائلون بہت زور سے کھنچنے سے بھی نہیں ٹوٹتا۔

پولی ایسٹر:

پولی ایسٹرز زور سے کھنچنے سے بھی نہیں ٹوٹتا۔

5۔ قدرتی ریشے کن ذرائع سے حاصل کیے جاتے ہیں؟

قدرتی ریشے:

یہ قدرتی ریشے مندرجہ ذیل ذرائع سے حاصل ہوتے ہیں۔

حیوانی ریشے:

ایسے ریشے جو حیوانی ذرائع سے حاصل کیے جاتے ہیں۔ ان کو حیوانی ریشے کہتے ہیں مثلاٌ کیڑوں سے ریشم اور بھیڑوں سے اُون حاصل کی جاتی ہے۔

نباتاتی ریشے :

ایسے ریشے جو نباتاتی ذرائع سے حاصل ہوتے ہیں ، ان کو نباتاتی ریشے کہتے ہیں مثلاٌ کاٹن اور لینن اہم ہیں۔

6۔ انسانی خودساختہ ریشوں کے نام لکھیں؟

انسانی خودساختہ ریشوں کے نام مندرجہ ذیل ہیں۔

1۔ ایسی ٹیٹ

2۔ رے آن وس کوس

3۔ رے آن کیوپرامونیم

7۔ کپڑے کی تعریف کریں اور کپڑابنانے کے مختلف طریقوں کے نام لکھیں؟

کپڑے کی تعریف:

ہم جو کپڑا استعما ل کرتے ہیں وہ عام طور پر مختلف ریشوں سے حاصل کیا جاتا ہے۔ کپڑابنانے کے لئے دھاگے کے دو گروپ تانے اور بانے استعمال کیے جاتے ہیں۔ جن میں ایک دھاگہ یعنی تانے کوبانے کے تاروں میں سے گزار کی تیار کیا جاتا ہے ۔ کپڑا دھاگے /ریشے کی متصل ساخت سے تیار ہوتا ہے۔ مثلاٌ جت والے کپڑے۔ کپڑا بنانے کے لئے مختلف طریقے استعمال کیے جاتے ہیں۔

1۔ کھڈی پر بننا

2۔ بنائی

3۔ نمدہ

8۔ مارکیٹ میں دستیاب خالص اور امتزاجی پارچہ جات کے نام لکھیں؟

مارکیٹ میں دستیاب کپڑوں کی مختلف اقسام ہیں مثلاٌ سوئس لان، اصلی لان، جارجٹ لان، خالص لون، واش اینڈ وئیر، کے ۔ٹی اور اصل لینن وغیرہ۔

سوال 3۔ تفصیلی سوالات کے جوابات تحریرکریں۔

1۔ پارچہ بافی اور لباس کے مطالعہ کی اہمیت بیان کریں؟

پارچہ بافی اور لباس کے مطالعے کی اہمیت:

سترپوشی:

لباس ہمارے جسم کوڈھانپتا ہے اس لئے یہ سماجی زندگی میں اہم کردار ادا کرتا ہے۔ پارچہ بافی اور لباس کا مطالعہ انتہائی اہمیت کا حامل ہے۔کیونکہ دنیا کے معرض، وجود میں آتے ہی بنی نوع انسان نے لباس کو سرپوشی، گرمی و سردی سے بچاؤ اور اپنی شخصیت کو پرکشش بنانے کے لئے استعمال کیا۔

موسمی اثرات سے بچاؤ:

ہم لباس تیارکرنے میں مضبوط اور پائیدارکپڑوں کا انتخاب کرتے ہیں جو ہمارے جسم کو موسمی اثرات سے محفوظ رکھتے ہیں۔ سرد ی میں گرم اور گرمی میں ٹھنڈا لباس استعمال کرتے ہیں تاکہ سردی اور گرمی سے بچ سکیں۔

صفائی:

خوبصورت لباس ہمارے جسم کی مزید خوبصورت بناتا ہے فردمیں دلکشی پیدا کرتا ہے۔ ہم مختلف موقعوں پر مختلف پارچہ جات کا انتخاب کرتے ہیں، جو ہماری پسند کے مطابق ہوں اور جن کی دھلائی میں بھی آسانی ہو۔

ریشوں کا مطالعہ کیا ہے؟

ریشوں کا مطالعہ ایک ایساعلم ہے ، جس میں گھریلو استعمال اور دیگر موقعوں پر پہننے والے کپڑوں کی بناوٹ، آرائش اور خصوصیات کے بارے میں معلومات حاصل ہوتی ہیں۔ ریشوں کا علم بہت گہرااور وسیع ہے۔

پارچہ جات کا استعمال:

کچھ عرصہ پہلے تک لوگوں کا رہن سہن بہت سادہ تھا اور پارچہ جات کا زیادہ استعمال نہ تھا۔ لوگ محدود قسم کے پارچہ جات استعما ل کرتے  تھے۔ لوگوں کے رہن سہن میں آہستہ آہستہ تبدیلی آتی گئی اور ان کے لباس کی ضروریات بھی مختلف ہوتی گئیں اور لوگو ں کی ضروریات کے مطابق پارچہ جات کی ضرورت محسوس کی گئی۔

نئے ریشوں کے دریافت:

لباس کی ضروریات پوری کرنے کے لئے نئے نئے ریشوں کی دریافت ہوئی اور نئے نئے کپڑے تیار ہونے لگے۔صارف  کو ریشوں کے بارے میں صحیح معلومات کپڑوں کے انتخاب میں مدددیتی ہے اور ہنرمند افراد کو اپنی ذہانت اور صلاحیتوں کو اُجاگر کرنے کا موقع بھی ملتا ہے۔

لباس کے مطالعے کی اہمیت :

صارف کی نظر میں لباس کے مطالعے کی اہمیت بہت ضروری ہے۔ کیونکہ کسی بھی لباس کو خریدنے سے پہلے صارف کو یہ علم ہونا چاہیے کہ جس لباس کو وہ خریدنا چاہتا ہے وہ کس ریشے سے تیارکیا ہوا ہے۔ اور وہ ریشہ لباس کی تیاری تک کن مراحل سے گزرتا ہے۔ مثلاٌ ریشے کا انتخاب ،کپڑے کی بنائی، رنگائی، چھپائی اور دیگر مراحل وغیرہ۔

پارچہ بافی کی مارکیٹنگ:

ایک صارف کو یہ معلوم ہونا چاہیے کہ کپڑے کو جدید ڈیزائن میں کس طرح ڈھالاجاسکتا ہے۔ مثلاٌ آج کل مارکیٹ میں کس رنگ کے کپڑے کا فیشن زیادہ چل رہا ہے۔ کپڑوں کی سلائی میں جدیدرحجان کیا ہے۔ مارکیٹ میں ان کپڑوں کو کس طرح فروخت کیا جاسکتا ہے۔ پارچہ بافی کے علم کے اس شعبے کو مارکیٹنگ کہتے ہیں۔

2۔ ریشوں کی شناخت کے مختلف طریقے تحریر کریں؟

ریشوں کی شنا خت:

صارف کے لئے پارچہ بافی کے ریشوں کے شناخت بہت ضروری ہے کیونکہ نئے ریشوں کی دریافت سے نئے نئے کپڑے تیار ہوتے ہیں۔ قدرتی ریشوں کو مصنوعی ریشوں میں اس طریقے سے ملادیاجاتا  ہے کہ ان کی شناخت کرنا مشکل ہوجاتی ہے۔ پارچہ بافی کے ریشوں کی شناخت کے لئے درج ذیل طریقے استعمال کیے جاتے ہیں۔

1۔ محسوس کرنے کے عمل سے

2۔ دھاگہ توڑنے کے عمل سے

3۔ جلانے کے عمل سے

4۔ خوردبین سے

5۔ کیمیاوی عمل سے

1۔ محسوس کرنے کے عمل سے کپڑوں کی شناخت:

کپڑوں کی شناخت کے لئے کپڑوں کو دیکھنا اور محسوس کرنے سے کپڑے کی ظاہری حالت معلوم کی جاسکتی ہے۔پارچہ بافی میں محسوس کرنے کا مطلب یہ ہےکہ کپڑے کا مطلب یہ ہے کہ کپڑے پر ہاتھ کی اُنگلی رکھ کر دیکھا جائے ۔اگر اُنگلی کی حرارت اسی جگہ پر رہے اور کپڑا گرم محسوس ہو تو یہ کپڑا اُونی ہے۔ کیونکہ اُونی کپڑا حرارت کو منتقل نہیں کر سکتا لیکن سوتی کپڑا حرارت کو منتقل کرتا ہے۔جس کی وجہ سے کپڑے کو چھونے سے ٹھنڈا محسوس ہوتا ہے۔ مختلف کپڑوں کی محسوس کرنے کے عمل سے شناخت درج ذیل طریقوں سے معلو م کرتے ہیں۔

محسوس کرنے کے عمل سے شناخت

سوتی:

یہ کپڑا چھونے پر لچک دار نہیں ہوتا او ر ٹھنڈک کا احساس دلاتا ہے۔

لینن:

لینن کا کپڑا چھونے پر لچکدار ہوتا ہے، ٹھنڈا اور سوتی کپڑے کے مقابلے میں زیادہ ہموار محسوس ہوتا ہے۔

اُونی:

اُونی کپڑے کے سطح کھردری ہوتی ہے اور گرمی کا احساس ہوتا ہے۔

رے آن:

رے آن چھونے پر نرم ہوتا ہے لیکن ریشم کے مقابلے میں قدر ے بھاری ہوتا ہے۔

پولی ایسٹر:

پولی ایسٹر ملائم، نرم اور ریشم کی مانند ہوتا ہے۔

نائلون:

نائلون کاکپڑا گرم محسوس ہوتا ہے اس کی حرارت آگے منتقل نہیں ہوتی اور چھونے پر چکنا ہوتا ہے۔

2۔ دھاگا توڑنے کے عمل سے کپڑوں کی شناخت:

کپڑے کی پائیداری اور مضبوط جانچنے کے لئے کپڑے کے چھوٹے سے ٹکڑے میں سے 15-10 سینٹی میٹر لمبا دھاگا نکالیں اور دھاگے کے بل کھولیں کیونکہ دو یا تین تاروں کو بل دے کر دھگابنایا جاتا ہے دھاگے کی شناخت کے لئے صرف ایک تار لیا جاتا ہے۔ اس تار کو آہستہ سے کھینچیں اور توڑ کر دیکھیں تو مختلف کپڑوں کے دھاگوں کی شکل توڑنے پر اس طرح ہوگی۔

کاٹن:

کاٹن کے سرے آگے سے برش کی طرح منتشرہوتے ہیں۔

لینن:

لینن کاٹن کے مقابلے میں زیادہ ٹوٹتا ہے۔ سرے سیدھے، لمبے اور تھوڑے سے چمکیلے ہوتے ہیں۔

اُونی کپڑا:

اُونی کپڑا لچک سے ٹوٹتا ہے اور دھاگے کی سطح کھردری ہوتی ہے۔

رے آن:

رے آن آسانی سے ٹوٹتا ہے۔ سرے درخت کی شاخوں کی طرح نظر آتے ہیں۔

ریشم:

ریشم زیادہ زور سے ٹوٹتا ہے۔ سرے عمدہ اور چمکیلے ہوتے ہیں ۔

نائلون:

نائلون بہت زور سے کھنچنے سے بھی نہیں ٹوٹتا۔

پولی ایسٹر:

پولی ایسٹر زور سے کھنچنے سے بھی نہیں ٹوٹتا ۔

3۔ جلانے کے عمل سے کپڑوں کی شناخت:

کپڑوں کی شناخت کے لئے جلانے کا عمل ایک اہم طریقہ سمجھا جاتا ہے۔ اس طریقہ میں کپڑے کے چھوٹے چھوٹے ٹکڑوں کوجلایا جاتا ہے۔ لیکن اگر کپڑے کے تانے بانے میں مختلف ریشوں کے تاراستعمال ہوئے ہوں تو یہ تار الگ الگ نکال کر جلائے جاتے ہیں۔ اس عمل کے لئے تین چیزوں کا م مشاہدہ ضروری ہے۔ مثلاٌ

ا۔ شعلہ قریب لانے سے کپڑا کس طرح جلتا ہے؟

ب۔ جلے ہوئے حصے کی کیا حالت ہوتی ہے؟

ج۔ راکھ کی شکل اور بو کسی ہوتی ہے؟

جلانے کے عمل سے کپڑوں کی شناخت

کاٹن:

کاٹن کا کپڑا شعلہ قریب لانے سے آگ کو جلدی پکڑتا ہے کیونکہ اس میں سیلولوز ہوتا ہے جوزیادہ بھڑکتا ہے ۔جلنے پر راکھ ہلکی ہوتی ہے۔ اس کی بُو جلے ہوئے کاغذ کی مانند ہوتی ہے۔

لینن:

لینن کاٹن کے مقابلے میں ذراآہستہ سے جلتی ہے ۔جلنے کے بعد راکھ سوتی کپڑے جیسی ہوتی ہے۔ کیونکہ دونوں نباتاتی ریشے ہیں اور بو جلے ہوئے کاغذ جیسی ہوتی ہے۔

اُون:

اُون کا شعلہ قریب لانے سے چنگاریاں نکلتی ہیں۔ ہلکی سی آواز پیدا ہوتی ہے۔ شعلہ دور کرنے سے جلنے کا عمل ختم ہو جاتا ہے ۔ مگریہ سلگتی رہتی ہے۔ راکھ کی خاص قسم کی بو ہوتی ہے جو گندھک کی موجودگی کی وجہ سے ہوتی ہے۔

ریشم:

ریشم آہستہ سے جلتا ہے۔ شعلہ ہٹا لینے سے جلنا بند ہو جاتا ہے۔ اس کی راکھ چمکتے ہوئے موتیوں کی طرح ہوتی ہے۔ چو انگلیوں سے مسلی جاسکتی ہے۔ بوپروں کی جلنے جیسی ہوتی ہے۔

رے آن :

رے آن کا طرح تیزی سے جلتا ہے ۔شعلہ دور کرنے سے بھی جلتا رہتا ہے۔ راکھ کی بو جلے ہوئے کاغذ کی طرح ہے جو مسلی جا سکتی ہے۔

نائلون:

نائلون کا شعلہ قریب لانے سے پگھلتا ہے پھر سکڑ کر گول موتی بن جاتا ہے۔ جس کی اُنگلیوں سے مسلنا مشکل ہوتا ہے۔ جلنے پر بہت ناگوار بُو آتی ہے۔

ڈیکرون:

ڈیکرون جلنے سے پہلے پگھلتا ہے اور آہستہ آہستہ جلتا ہے۔ لیکن اس کی راکھ آسانی سے ٹوٹنے والی ہوتی ہے۔ جو آسانی سے کچلی جاسکتی ہے۔ جلنے پر فروٹ کی طرح کی خوشبوہوتی ہے۔

پولی ایسٹر:

پولی ایسٹر شعلے سے پگھلتا ہے۔ سلیٹی رنگ کے موتی بنتے ہیں جو مسل کر توڑے نہیں جا سکتے ۔

4۔ کیمیاوی اجزاء کے استعمال سے کپڑوں کی شناخت:

کپڑوں کی شناخت کے لئے کیمیاوی اجزائ استعمال کیے جاتے ہیں۔ شناخت کا یہ طریقہ قابلِ اعتبار ہے۔ لیکن یہ طریقہ گھریلو پیمانے پر استعمال نہیں کیا جاتا بلکہ کاروباری طورپر لیبارٹری میں استعمال کیا جاتا ہے۔ تاکہ ریشو ں کی صحیح پہنچان کی جا سکے۔ مصنوعی ریشوں سے بنے ہوئے کپڑون کے لئے کیمیاوی اجزاء استعمال کیے جاتے ہیں مثلاٌ رے آن، پولی ایسٹر، نائلون، ڈریکرون وغیرہ۔

3۔ قدرتی ریشوں کے بارے میں لکھیں ؟

پارچہ بافی کے ریشوں کی درجہ بندی:

ہم روزمرہ زندگی میں جو پارچہ بافی کے ریشے استعمال کرتے ہیں، وہ مختلف ذرائع سے حاصل کیے جاتے ہیں۔ ان ذرائع کو مختلف اقسام میں تقسیم کیا جاتا ہے۔

1۔ قدرتی ریشے:

یہ قدرتی ریشے مندرجہ ذیل ذرائع سے حاصل ہوتے ہیں۔

ا۔ حیوانی ریشے:

ایسے ریشے جو حیوانی ذرائع سے حاصل کیے جاتے ہیں۔ ان کو حیوانی ریشے کہتے ہیں مثلاٌ ریشم کے کیڑوں سے ریشم اور بھیڑوں سے اُون حاصل کی جاتی ہے۔

ب۔ نباتاتی ریشے:

ایسے ریشے جو نباتاتی ذرائع سے حاصل ہوتے ہیں، ان کو نباتاتی ریشے کہتے ہیں مثلاٌ کاٹن اور لینن اہم  ہیں۔

حیوانی ذرائع سے حاصل ہونے والے ریشے

1۔ اُون:

بھیڑوں سے اُونی ریشہ حاصل کیا جاتا ہے۔ بھیڑ کے بال سال میں ایک دفعہ مونڈھ لیے جاتے ہیں ا ن کی اُون اُتار کر فیکٹریوں میں بھیجی جاتی ہے۔ جہاں پر اُون کو مختلف عوامل  سے گزار کر دھاگا تیارکیا جا تا ہے۔ جس سے اُونی کپڑا تیار ہوتا ہے۔ انگورا اور موہیر بھیڑوں کی اُون اچھی سمجھی جاتی ہے۔ ان بھیڑوں کی اُون مہنگی ہوتی ہے۔ بھیڑوں کے علاوہ بلی ،خرگوش اور اونٹ کے بال بھی دھاگا بنانے میں استعمال ہوتے ہیں۔ جن سے کپڑا تیار کیا جاتا ہے۔

2۔ ریشم:

ریشم ایک خاص قسم کے کیڑے سے حاصل کیا جاتا ہے۔ جس کو ریشم کا کیڑا کہتے ہیں۔ یہ کیڑا شہتوت کی نرم کونپلوں پر پالا جاتا ہے۔ جب یہ کیڑا ایک ماہ کا ہوجاتا ہے۔ تو اپنے منہ کے نیچے کے دو سوراں سے لیس دار لعاب نکالتا ہے اس لعاب سے تاربنتا ہے۔ کیڑاپنے اردگرد یہ تار خول کی صورت میں لپیٹ لیتا ہے اور کیڑا خود کو خول مکمل کرنے پر اندر بندکرلیتا ہے اور یہ خول ایک کوکون کی شکل میں ہوتا ہے۔ خول کے بنے دوہفتوں کے بعد کوکونز کو تیز دھوپ یا کھولتے پانی میں رکھا جاتا ہے جس سے کیڑا ختم ہوجاتا ہے اور ریشم کا تار کھول لیا جاتا ہے۔ اس تار کی لمبائی 800 سے 1200 میٹر تک ہوتی ہے۔ یہ قدرتی ریشم میں سب سے لمبا ریشہ ہے۔ ایسے دو تین تاروں کومعمولی بل دے کر دھاگا بنایا جاتا ہے جو ریشمی کپڑا بنانے میں استعمال کیا جاتا ہے۔

نباتاتی ذرائع سے حاصل ہونے والے ریشے

1۔ کاٹن:

کپاس کے پودے سے کاٹن کا ریشہ حاصل ہوتا ہے ، جس سے روئی حاصل کی جاتی ہے۔ کپاس کو کھیتوں سے حاصل کرنے کے بعد فیکٹریوں میں بھیجا جاتا ہےاور ا س کو مختلف مراحل سے گزرنے کے بعد دھاگا تیار کیا جاتا ہے، جس سے سوتی کپڑا بنتا ہے۔

2۔ لینن:

لینن کا ریشہ السی کے پودے سے حاصل کیا جاتا ہے، جس کو فلیکس پودا کہتے ہیں۔ اس کاپودا بیج سے اُگایا جاتا ہے۔ جب یہ پودا پھول لے آتا ہے تو اسے اکھاڑا جاتا ہے اور اس کی بڑی بڑی گھٹڑیاں بنا کر پانی میں پھینک دیا جاتا ہے۔ اس طریقہ کو سڑانا کہتے ہیں ۔ اس کے بعد اسے پانی سے باہر نکال کر پانی سے خشک کرکے مشین کے ذریعے اس کا ریشہ حاصل کیا جاتا ہے۔ جو کہ کات کر دھاگہ بنانے کے کام آتا ہے، اسے لینن کا ریشہ کہتے ہیں۔

4۔ کاٹن اور لینن کے ریشے اور اس سے بنے ہوئے کپڑوں کی خصوصیات بیان کریں؟

لینن  کے ریشے سے بنے ہوئے کپڑوں کی خصوصیات:

 کہتے ہیں۔ دورقدیم میں مصرDlinسے ماخوذ کیا گیا ہے۔ مصر میں یہ جس پودے سے حاصل کیا جاتا ہے اس کو Dlinلینن مصری زبان کا الفاظ ہے جو

کو لینن کا گھر کہا جاتا تھا۔ لینن کا ریشہ کم از کم دس ہزار سال پرانا ہےاوریہ سب سے پہلے مصر میں دریافت ہوا۔

پیداوار کے ممالک:

 کہتے ہیں۔ آسٹریلیا ، بیلجیم ، فرانس، جرمنی، آئرلینڈ، کینیڈا اورFlax Plantمصر کے علاوہ دیگر ممالک جس میں اسے پودے سے یہ ریشہ حاصل کیا

امریکہ اصل لینن بنانے میں مشہور ہیں۔ پاکستان میں اس پودے کی پیداوار نہیں ہوتی۔ یہاں پر جو کپڑا لینن کے نام سے مشہور ہے وہ دراصل رے آن وس کوس اور سوتی ریشے کی ملاوٹ تیار کیا جاتا ہے جو بظاہر لینن کی طرح نظرآتا ہے۔ لیکن اس کی خصوصیات لینن کے کپڑے سے بہت مختلف ہوتی ہیں۔

اصل لینن کی خصوصیات درج ذیل ہیں۔

1۔ نباتاتی ریشہ:

یہ نباتاتی ریشہ ہے۔ کپاس کے مقابلے میں دوگنا مضبوط ہے۔

2۔ نرم اور ملائم:

ہموار، نرم اور بہت ملائم ہوتا ہے اور کپڑے میں ہلکی سی چمک ہوتی ہے۔

3۔ موصل حرارتِ ریشہ:

ریشہ موصل حرارت ہے۔ نمی جذب اور خارج کرتا ہے۔ پہننے پر ٹھنڈا محسوس ہوتا ہے اس لیے گرمیوں کے لباس میں بھی استعمال ہوتا ہے۔

4۔ بغیر لچک ریشہ:

ریشہ بغیر لچک کے ہوتا ہے۔ اس لیے شکنیں پڑنے کی خاصیت ہوتی ہے۔ ایک بار شکن پڑ جائے تو آسانی سے دور نہیں ہوتی۔

5۔ پختہ  رنگ:

ریشے میں رنگ قبول کرنے کی قدرتی صلاحیت ہوتی ہے۔ اس لیے ہر رنگ میں رنگا جا سکتا ہے۔ اور رنگ پختہ ہوتے ہیں۔

6۔ دھلائی میں احتیاط درکار نہیں ہوتی:

دھلائی میں خاص احتیاط درکا رنہیں ہوتی۔ الکلی کار ریشے پر کوئی اثر نہیں ہوتا۔ اس لیے تیز صابن سے دھویا جا سکتا ہے۔

7۔ داغ دھبے:

سوتی کپڑے کی طرح پھپھوندی کا اثرہوتا ہے۔ اس لیے نم دار پڑارہنے سے داغ دھبے پڑ جاتے ہیں۔ جو آسانی سے دور نہیں ہوتے ۔

8۔ تیزاب کا اثر:

ہلکے گرم تیزاب سے خراب ہوجاتا ہے۔ جبکہ ٹھنڈے تیزا ب کو کوئی اثر نہیں ہوتا۔

9۔ عمدہ اور نفیس کپڑے:

اصل لینن بہت نفیس اور عمدہ کپڑا ہے اور اس پر کڑھائی بہت خوبصورت لگتی ہے اس لیے اس کا استعمال بنیادی طور پر ٹیبل لینن اور ہاؤس ہولڈ لینن کے لئے رہا ہے ۔ اب بھی اس کا زیادہ تر استعمال میزپوش، ہیڈکور، نیپکن، ٹرالی سیٹ وغیرہ بنانے میں ہوتا ہے۔ اس کے علاوہ لباس بنانے میں بھی لینن کا استعمال ہوتا ہے۔ لیکن سوتی کپڑے کے مقابلے میں بہت کم استعمال ہوتا ہے۔ کیونکہ یہ کافی مہنگا ہوتا ہے۔

اونی ریشے سے بنے ہوئے کپڑوں کی خصوصیات

پارچہ بافی میں اونی ریشہ دنیا میں سب سے پہلا ریشہ مانا جاتا ہے۔ جس کا ذکر چودہ سوسال پہلے قرآنی پاک کی سورۃ نمبر 14 النحل کی آیت نمبر 80 میں اس طرح بیان کیا گیا ہے” بنادیے بھیڑوں کی اون سے، اونٹ کی ببریوں سے اور بکریوں کے بالوں سے کتنے استعمال کی چیزیں” اونی ریشہ بھیڑوں سے حاصل ہوتا ہے۔ اس ریشے کی کوالٹی کا انحصار بھیڑ کے پالنے ، آب و ہوا،خوراک  اور بھیڑ کی عام صحت پر ہوتا ہے۔

مشہور ممالک:

آسڑیلیا، ارجنٹینا، انڈیا، جنوبی افریقہ اور امریکہ اچھااُونی ریشہ بنانے میں مشہور ہیں۔ پاکستا ن میں کراچی، بنوں، ہرنائی اور لارنس پور میں اُونی کپڑا تیار کیا جاتا ہے۔

اُونی ریشے اور کپڑے کی خصوصیات درج ذیل ہیں۔

1۔ اچھی قسم کے اُونی کپڑے :

اونی ریشے لمبائی میں چھوٹے ہوتے ہیں۔ چھوٹے ریشے ایک سینٹی میٹر سے سات سینٹی میٹر اور بڑے ریشے سات سینٹی میٹر سے دس میٹر تک ہوتے ہیں۔ بڑے ریشوں سے تیارشدہ دھاگا اچھی قسم کے اُونی کپڑے مثلاٌ ورسٹڈ ، گیبرڈین، بنانے میں استعما ل ہوتا ہے۔

2۔ روئیں دار کھردارریشہ:

یہ ریشہ روئیں دار اور کھردرا ہوتا ہے۔ اسی وجہ سے اونی کپڑے میں چمک نہیں ہوتی۔

3۔ کمزورترین ریشہ:

قدرتی ریشوںمیں اونی ریشہ کمزور ترین ریشہ ہے لیکن خاص عوامل سے کپڑے میں پائیداری پیدا کی جاتی ہے۔

4۔ لچکدار قدرتی ریشہ:

قدرتی ریشوں میں اون سب سے زیادہ کھنچا جا سکتا ہے۔ یہ اپنی اصلی حالت میں ٹوٹے بغیر تیس فیصد تک کھینچا جا سکتا ہے۔ اس لیے اس سے بنے ہوئے کپڑوں میں سلوٹیں نہیں ہوتیں۔

5۔ غیر موصل حرارت:

اونی ریشہ غیر موصل حرارت ہے۔ اس سے بنے ہوئے کپڑے جسم کی گرمی کو منتقل کرتے ہیں اور گرم کرتے ہیں۔ اس وجہ سے سردیوں میں استعمال کے لیے مناسب ہوتے ہیں۔

6۔ جذب ریشہ:

اونی ریشے میں جذب کرنے کی صلاحیت بہت زیادہ ہوتی ہے اس لیے بہت اچھا رنگا جاتا ہے۔

7۔ اُونی ریشہ تیزالکلی سے خراب:

اونی ریشہ تیز الکلی سے خراب ہوتا ہے اس لیے اسے دھونے کے لئے تیز صابن استعمال نہیں کرنا چاہیے۔

8۔ اُونی ریشہ تیز گرم استری سے خراب:

اونی ریشہ تیزگرم استری سے خراب ہوجاتا ہے۔ عام استری بھی ہلکا نم دار کپڑا اوپر رکھ کر کرنی چاہیے۔ ورنہ حرارت سے ریشے کے سکڑنے اور جڑنے کا امکان ہوتا ہے۔

9۔ خاص حفاظت درکار:

چونکہ یہ ایک حیوانی ریشہ ہے۔ اس لیے اس پر کیڑا فوری طوراثر کرتا ہے۔ اسی وجہ سے اس سے بنے ہوئے کپڑوں کے لیے خاص حفاظت درکار ہوتی ہے۔

10۔ اُونی ریشہ پانی بہت جلد جذب کرتا ہے:

اونی ریشہ پانی بہت جلد جذب کرتا ہے اور اپنے اندر بہت دیر تک نمی کو برقراررکھتا ہے۔ اصلی اونی ریشے اپنے وزن کی بیس فیصد نمی جذب کرنے کے بعد گیلے محسوس نہیں ہوتے اور پچاس فیصد نمی جذب کرنےتک ان میں سے نمی قطروں کی شکل میں نہیں ٹپکتی ۔ اسی وجہ سے اونی کپڑے دھلنے کے بعد بہت دیر سے سوکھتے ہیں۔

11۔ دھوپ میں ریشہ کمزور ہوجاتا ہے:

دھوپ میں ریشہ کمزور ہوجاتا ہے اور اپنی پائیداری کھودیتا ہے۔ اسی لیے اونی کپڑے دھوپ میں نہیں سکھانے چاہیئں ۔سٹورکرنے سے پہلے ہوالگوانے کے لئے سایے میں رکھنے چاہیئں۔

اُونی کپڑےکا گھریلواستعمال:

اونی کپڑا سردیوں میں مردانہ،زنانہ اور بچوں کے کپڑوں میں سب سے زیادہ استعمال ہوتا ہے۔ سویٹر، موزے، گرم بنیان، انڈروئیر وغیرہ  بھی اونی ریشے سے بنتے ہیں۔ گھریلو استعمال میں کمبل، قالین اورنمدے بنانے میں اونی ریشہ استعمال ہوتا ہے۔

ریشم کے ریشے سے بنے ہوئے کپڑوں کی خصوصیات:

ریشم کو کپڑوں کی ملکہ کہاجاتا ہے۔ پرانی چینی کہاوتوں کے مطابق ریشم ایک چینی ملکہ نے دریافت کیا تھا۔ اس کے بعد چینیوں نے تین ہزار سال تک اس کے حاصل کرنے کے طریقے کو ایک راز رکھا۔ حتیٰ کہ ریشم دریا کے راستے جاپان اور جاپانیوں کی معرفت یورپ پہنچا۔ اس کے بعد تمام دنیا میں ریشم حاصل ہو ااور پہننے میں استعمال ہوا۔

ریشم کے ریشے اور کپڑے کی خصوصیات مندرجہ ذیل ہیں۔

1۔ ملائم اور نرم کپڑے:

ریشم کا یہ ریشہ ایک مسلسل تار ہے جو قدرتی ریشوں میں سب سے لمبا ریشہ ہے۔ اس کی لمبائی 800 سے 1200 میٹر تک ہوتی ہے۔ اس لئے اس سے بنے ہوئے کپڑے بہت ملائم اور نرم ہوتے ہیں۔

2۔ ریشم وزن میں بہت ہلکا:

ریشم کا ریشہ تارکی شکل میں بہت باریک ہوتا ہے۔ اس لیے اصل ریشم سے بنا ہوا کپڑا وزن میں بہت ہلکا ہوتا ہے۔

3۔ چمکدارکپڑے :

ریشم کی تار میں قدرتی چمک ہوتی ہے۔ اس لئے ریشم کے کپڑے چمکدار ہوتے ہیں ۔ قدرتی ریشوں میں یہ واحدریشہ ہے جس میں یہ چمک ہوتی ہے۔

4۔ ریشمی کپڑے بہت پائیدار اور مضبوط:

ریشم کا ریشہ نہایت مضبوط ہوتا ہے۔ اسی وجہ سے ریشمی کپڑے بہت پائیدار اور مضبوط ہوتے ہیں۔ لیکن مہنگے ہوتے ہیں۔

5۔ موصل حرارت ریشہ:

ریشم کا ریشہ موصل حرارت ہونے کی وجہ سے جسم کی حرارت کو منتقل نہیں کرتا اس لیے گرم محسوس ہوتا ہے۔ ہلکا ہونے کی وجہ سے گرمی میں بھی استعمال ہوتا ہے۔

6۔ ریشمی کپڑوں کے رنگ پختہ اور خوبصورت:

ریشم کے ریشے میں رنگ جذب کرنے کی صلاحیت موجود ہوتی ہے۔ اس لیے ریشمی کپڑوں کے رنگ پختہ او ر خوبصورت ہوتے ہیں۔

7۔ گروغبار سے محفوظ:

ریشم کا ریشہ لمبا ہونے کی وجہ سے ریشمی کپڑا نرم اور ملائم ہوتا ہے اس پر گردوغبار جمع نہیں ہوتا اور مٹی وغیرہ لگنے کی صورت میں آسانی سے اتر جاتی ہے۔

8۔ ہموار سطح کا کپڑا:

مسلسل تار کی شکل میں ہونے کی وجہ سے ہموار سطح کاکپڑابنتا ہے جو دھلنے پر نہیں سکڑتا۔

9۔ ہلکے صابن کا استعمال:

تیزصابن کے استعمال سے خراب ہوتا ہے اس لیے ہلکے صابن کا استعمال ضروری ہے۔ پسینے سے خراب ہوجاتا ہے۔ اور رنگ اترے نے دھبہ پڑجاتا ہے۔

10۔ دھوپ کے اثرسے خراب:

دھوپ  کے اثرسے ریشہ کمزورہوجاتا ہے۔ اس کے علاوہ سفید ریشم زیادہ دیر دھوپ میں رہنے سے زردی مائل ہوجاتا ہے۔

11۔ شادی بیاہ کے لباس کی تیاری:

ریشمی کپڑوں کا استعمال تقریبات اور شادی بیاہ کے لباس میں کافی ہوتا ہے۔

5۔ کپڑابنانے کے مختلف طریقے بیان کریں؟

کپڑے کی تعریف:

ہم جو کپڑا روزمرہ استعمال کرتے ہیں وہ عام طور پر ریشوں سے حاصل کیے جاتے ہیں۔ کپڑا بنانے کے لئے دھاگے کے دوگروپ تانے اور بانے استعمال کیے جاتے ہیں۔ جن میں ایک دھاگہ یعنی تانے کو بانے کے تاروں میں سے گزار کر تیار کیا جاتا ہے ۔کپڑا دھاگے /ریشے کی متصل ساخت سے تیارہوتا ہے مثلاٌ بنت اور بنائی والے کپڑے ۔ کپڑابنانے کے لئے مختلف طریقے استعمال کیے جاتے ہیں۔

1۔ کھڈی پر بننا:

اس طریقہ میں دھاگے کو کپڑے کی شکل میں تبدیل کر کے دو دھاگوں کو زاویہ قائمہ پر ایک دوسرے کے درمیان سے گزارا جاتا ہے۔ اس میں لمبائی کے رخ گزرنے والے دھاگوں بانا کہا جاتا ہے۔ کپڑا بننے کے لئے دستی کھڈیاں اور الیکٹرک کھڈیاں بھی چلائی جاتی ہیں۔

دستی کھڈی:

دستی کھڈی ہاتھ سے چلائی جاتی ہے۔ ہاتھ سے چلنے والی کھڈیوں پر کپڑاجلدی نہیں بنا جاتا۔ ہاتھ سے چلنے والی کھڈیوں سے چھوٹے پیمانے پر پارچہ بافی کی جاتی ہے۔

الیکٹرک کھڈی:

کپڑا تیار کرنے کے بڑے کارخانوںمیں بجلی سے چلنے والی کھڈیوں سے کپڑا بناجاتا ہے ۔ جن سے ہزاروں گز کپڑا دن بھر میں بنتا ہے۔ کھڈی چاہے دستی ہو یا بجلی سے چلنے والی اس میں کپڑا بننے کے لئے تانے کو تنا جاتا ہے پھر تانے کو رولرز میں لپیٹ لیا جاتا ہے، اس طریقے میں بانے کی تاریں تانے میں سے گزار کر کپڑابنا جاتا ہے۔کھڈی کے بنے  ہوئے کپڑوں میں مندرجہ ذیل چاربنایاں استعمال کی جاتی ہیں۔

ا۔ سادہ بنائی

ب۔ ساٹن بنائی

ج۔ ٹویل بنائی

د۔ بردار بنائی

1۔ سادہ بنائی:

کپڑے کی بنائی میں سادہ بنائی ایک بنیادی طریقہ ہے۔ اس طریقہ میں صرف ایک تار(دھاگہ) تانا اور بانا کے لئے استعمال کیا جاتا ہے۔ کپڑے کی بنائی میں تانے کے آدھے تار ایک بار اُوپراُٹھتے ہیں اور بانے کے تار ان میں سے گزرجاتے ہیں۔ اور دوسری بار نیچے کے تار اوپر اٹھتے ہیں اور اوپر کے تار نیچے آجاتےہیں۔ اس طریقے سے سادہ بنائی کی کپڑا بنتا ہے مثلاٌ لٹھا، ململاور وائیل۔

 تانے کے ساتھ بنائی:

اس طریقہ میں دو دھاگے لئے جاتےہیں۔ سادہ بنائی کے تانے اور بانے میں تھوڑا سا فرق کرکے دو تار کا کپڑا بنایا جاتا ہے۔ مثلاٌ دو سوتی کپڑا۔ یہ کپڑا نہایت مضبوط او ر پائیدار ہوتا ہے۔ اس بنائی میں تانے اور بانے میں دودوتار ہوتے ہیں۔ سادہ بنائی میں چار تار تانے کے اور چار تار بانے کے استعمال کرکے چار سوتی کپڑا تیار کیاجاتا ہے۔

ٹویل بنائی:

کپڑے کی بنائی میں یہ طریقہ سادہ بنائی سے کم لیکن کافی زیادہ استعمال ہوتا ہے۔ ٹویل بنائی کے لئے تانا سادہ بنائی کی طرح تنا جاتا ہے۔ اس میں تانا سادہ بنائی کی طرح لگایاجاتا ہے۔ لیکن بانے کے تار کو تانے کے ایک سے زائد تاروں کے اوپر اور نیچے سے عموماٌ دو ایک کے حساب سے گزارتے ہیں اور زیادہ سے زیادہ چار تاروں سے بانے کے تار گزارتے ہیں۔ مگرہر باربانے کا تار اس دویاچار کے گروپ کو توڑتا ہے یعنی ہر بارایک ہی رخ میں ایک ایک بڑھا کرترچھی دھاری بنائی جاتی ہے۔ مگرحساب وہی رہتا ہے یعنی دو تار نیچے اور ایک تار اوپر ہوتا ہے۔ اس بنائی میں سوتی ،ریشمی اور گرم کپڑا بنا جاتا ہے۔ یہ نہایت مضبوط اور پائیدار بنائی ہے۔ عمدہ گرم کپڑا ٹویل بنائی میں بنایاجاتا ہے۔ سرج گیبرڈین اور ورسٹیڈ کپڑے اس کی مثال ہیں۔

ساٹن بنائی:

یہ بنائی زیادہ تر ساٹن کا کپڑا بنانے میں استعمال ہوتی ہے۔ اس بنائی میں تانے کا ایک تار اور اور چار نیچے رکھ کر بانے کا تار گزارا جاتا ہے اور ہر بار ان چار تاروں کے گروپ کو توڑا جاتا ہے۔ اس طرح گوبانے کا ایک تار ایک ترچھی دھاری میں نظر آتا ہے۔ مگر یہ دھاری ٹویل سے مختلف ہوتی ہے اور کپڑے کے اوپر مسلسل لہریں بنتی ہیں لیکن کوئی واضح ڈیزائن نہیں ہوتا۔ ساٹن کی بنائی کے لئے بانے میں دھاگے کم بٹاہوا استعمال کیا جاتا ہے اور تانے کا دھاگا بٹا ہوا ہوتا ہے جو کپڑے کو ملائم اور ہموار بنانے میں مدددیتا ہے۔ اس کپڑے میں چمک ہوتی ہے۔ ساٹن کا کپڑا زیادہ پائیدار نہیں ہوتا کہتے ہیں اور اگریہ تارکسی چیز سے اٹک جائیں تو پورے کا پورا تار Floatsکیونکہ اس میں کپڑے کی سطح پر لمبے لمبے بغیر بنے تار ہوتے ہیں ان تاروں

کھینچ کر کپڑے کانقصان پہنچاتا ہے ۔ اس کے علاوہ استعمال کے بعد اس کپڑے کی سطح پر بتیاں سی بن جاتی ہیں جن سے کپڑا بدنما لگنے لگتا ہے۔

بردار بنائی:

بردار بنائی میں دھاگے سطح پر کھینچ لیے جاتے ہیں اور ان کو یا تو اس طرح رہنے دیا جاتا ہے جیسے تولیہ کی بنائی میں ہوتا ہے یا پھر برابر رہنے دیاجاتا ہے ۔ اس بنائی کے لئے تانے میں دھاگے کے دو سیٹ استعمال کیے جاتے ہیں جن میں سے ایک کو سطح پر ڈھیلا چھوڑ دیا جاتا ہے۔ اور دوسرا بانے کے تاروں کہتے ہیں۔Pillerکے ساتھ بناجاتا ہے۔ روئیں یا بُر کو موٹا کرنے کے لئے بانے میں زائد دھاگے بھی شامل کیے جاتےہیں جن کو

2۔ بنائی:

کپڑے کو اگر مشین یا اون سلائیوں سے بنایا جائے وہ نٹنگ کہلاتا ہے۔ اس بنائی میں صرف ایک دھاگا تانے اور بانے میں استعمال کیا جاتا ہے۔ اس طریقہ میں تانا نہیں تناجاتا بلکہ ایک ہی دھاگے سے گھنڈیاں بنتی ہیں جو ایک دوسرے میں گزرتی چلی جاتی ہے ۔ اس بنائی سے تیار کیے ہوئے کپڑوں میں کھنچاؤ او ربڑھاؤ کی بہت گنجائش ہوتی ہے۔ مثلاٌ بنیان ، جانگیے اور پیراکی کے لباس وغیرہ اس کی مثال ہیں۔ تانے کے ساتھ بنائی میں دو دھاگے استعمال ہوتے ہیں اس سے بنا ہوا کپڑا مضبوط ہوتا ہے، جلدی پھٹتا نہیں مگر اس میں سادہ بنائی جیسی کھنچاؤ اور بڑھاؤ کی گنجائش نہیں ہوتی۔ مثلاٌ جرسی وغیرہ۔

3۔ نمدہ فیلٹنگ:

اس طریقہ میں ریشوں کو ہموار سطح پر تہہ در تہہ بچھا دیاجاتا ہےپھر ان کو نمی اور حرارت دی جاتی ہےاو رپھر مناسب دباؤ ڈال کر ان ریشوں کو دبادیا جاتا ہے۔ یہ عمل حسب ِ ضرورت کیا جاتا ہے جب تک کہ تمام ریشے دب کر ایک شیٹ کی شکل اختیار نہ کریں۔ اس طرح تیار کیا ہوا کپڑا دیرپا اور مضبوط نہیں ہوتااور نہ ہی اس میں لچک ہوتی ہے۔ ان کپڑوں کی مثال فیلٹ ہے اس سے مراد واسکٹ ، سوتی ، چغہ، نمدے ، ٹوپیاں ، بوٹ، اور دستی بیگ بنائے جاتے ہیں۔ ابتداء میں صرف اونی کپڑا ہی نمدہ کے طریقہ سے بنایا جاتا تھا مگر اب سوت ،فراور انسان کے خود ساختہ ریشوں سے بھی اس طریقے پر سے کپڑے تیار کیے جاتے ہیں۔

(Dress Making) باب 10۔ لباس بنانا

سوالات

سوال1۔ ذیل  میں دے گئے بیانات میں سے ہر بیان کے نیچے چار ممکنہ جوابات دیے گئے ہیں۔ درست جواب کے گرد دائرہ لگائیں۔

1۔ سلائی کی اشیاء کو ان کے استعمال کی مناسبت سے کتنی اقسام میں تقسیم کیا جاتا ہے؟

(الف)                                                                                                        ایک                                                                                                   (ب)                      دو                                                                                     (ج)                تین                                                                 (د)                    چار

2۔ٹریسنگ وہیل ایک چھوٹا سا ہینڈل والا اوزار ہے۔ جس کے آگے کیا ہوتا ہے؟

(الف)                   دندانے دار پہیہ                                                                                                                                                                                                                                                                  (ب)                                                    سوراخ         (ج)                                                                                                                   کٹاؤ                                                        (د)                                                                  سادہ ہوتا ہے

3۔ سلائی کی قینچی کے دستے کیسے ہوتے ہیں؟

(الف)                                                                                                                          سیدھے                (ب)                                                                                                                                 چوکور                                                                  (ج)                                                              لمبے                                                                                                (د)                                                                              برابراور گول

4۔ سوئی کا استعمال کس لحاظ سے کیا جانا ضروری ہے؟

(الف)                                                     کپڑے کی نوعیت                                                                                                                                                        (ب)                      کڑھائی                                                                                                                                                          (ج)               سلائی                                                                                                                                                                                        (د)                                                                                     لمبائی

5۔کپڑوں کی سلائی کے لئے کیا استعمال ہوتی ہے ؟

(الف)                                                                                                        کروشیا                                                                                     (ب)                                                                  پرزے                                                                                                               (ج)                            سلائی مشین                                                                                                                 (د)                                                                                      فٹنگ مشین

6۔ مشین کی سلائی کے کتنے اُصول ہیں؟

(الف)                                                                                                          چودہ                                                              (ب)                                                            پندرہ                                                                                                               (ج)                                 تیرہ                                                                                                                                                        (د)                                                 اٹھارہ

7۔ ڈرافٹ بنانے کے لئے کیا لینا ضرور ی ہے؟

(الف)                                                                                                           جسم کاناپ                                                                                                                        (ب)                                                                          کاغذ                                                                                            (ج)                                                                                                      کپڑا                                                                                             (د)                                                                                           سلائی

8۔جسم کے کتنے بنیادی حصوں کا ناپ لیا جاتا ہے؟

(الف)                                          ایک                                                                (ب)                                                                                                چار                                                                                               (ج)                  نو                                                              (د)                                         گیارہ

جوابات: (1-ج)(2-الف)(3-د)(4-الف)(5-ج)(6-ج)(7-الف)(8-ج)

سوال 2۔ مختصر سوالات کے جوابات تحریر کریں۔

1۔ سلائی/ٹیلرنگ کی تعریف کریں؟

تمام اقسام کے پارچہ جات کی مناسب کاٹ چھانٹ اور اس کی سلائی کے آرٹ  کو”ٹیلرنگ” کہتے ہیں۔

2۔ سلائی کی اشیاء کے نام لکھیں؟

سلائی کے سامان کی اقسام:

1۔ ناپ لینے اور نشان لگانے والی اشیاء

2۔ کٹائی کرنے والی اشیاء

3۔ سلائی میں استعمال ہونے والی اشیاء

3۔ سوئنگ کٹ سے کیا مراد ہے؟

سوئنگ کٹ:

سلائی اور کٹائی کی اشیاء کو حفاظت سے رکھنے والا مستطیلی شکل کا ایک ڈبہ یا بیگ ہوتا ہے جو سوئنگ کٹ کہلاتا ہے ۔ عام طور پر اس ڈبے میں مندرجہ ذیل چیزیں ہوتی ہیں۔

1۔ دھاگے

2۔ سوئیاں

3۔ انگشتانہ

4۔ ٹانکے ادھیڑنے والا پرزہ

4۔ بچوں کے لباس کے لئے جسم کے بنیادی ناپ لکھیں؟

بچوں کے جسم کے بنیادی ناپ مندرجہ ذیل ہیں:

1۔ تیرہ

2۔ سینہ

3۔ کمر

4۔ گدی سے کمر تک کا ناپ

5۔ فراک کی لمبائی

6۔ آستین کی لمبائی

7۔ پاجامہ ،شلوا ر یاپتلو ن کی لمبائی

8۔ میانی

9۔ کولھے

5۔ ڈرافٹ سے پترن بنانے سے کیا مرا د ہے؟

کسی جسم کا صحیح ناپ اور فارمولے کے مطابق ڈرافٹ کے لئے حساب کرنے کے بعدوہ بنیادی ڈرافٹ بنایاجاتا ہے جس میں ڈیزائن کے مطابق تبدیلیان کرکے پیٹرن بنایاجاتا ہے۔ بنیادی ڈرافٹ کسی بھی پیٹرن کی کامیابی کا رازہوتا ہے اس لیے بنیادی ڈرافٹ کی مدد سے لباس کی فٹنگ کا درست اندازہ کریں پھر فٹنگ ک مطابق تبدیلی کرنے سے پیٹرن بنائیں۔ اس سے غلطی کا امکان نہیں رہے گا۔

6۔ شخصیت کے مطابق لباس کا انتخاب کرتے وقت کن اُصولو ں کو مدِ نظر رکھنا ضروری ہے؟

سنجیدہ شخصیت والے اشخاص کے لئے گرے، نیلے یا سبز رنگ اور سیدھی سیدھی لائنوں والے ڈیزائن کے کپڑے زیادہ موزوں ہوتے ہیں۔ ان کا جسم کی بناوٹ سے بھی گہرا تعلق ہوتا ہے۔ اس لئے مناسب اور موزوں لباس کا انتخاب کرتے ہوئے شخصیت کے علاوہ آرٹ اور ڈیزائن کے اُصولوں اور عناصر کو بھی مدِ نظر رکھنا چاہیے۔

7۔ بنیادی رنگ  کون کون سے ہیں؟

دراصل بنیادی رنگ تین ہی ہیں۔ یہ رنگ سرخ، نیلا اور پیلا ہیں۔ ان تین بنیادی رنگوں کی آمیزش سے دیگر رنگ بنتے ہیں۔

سوال 3۔ تفصیلی سوالات کے جوابا ت تحریر کریں۔

1۔ سلائی مشین کے اہم پرزوں اور ان کے کام کے بارے میں لکھیں؟

سلائی مشین کے اہم پرزے اور ان کا کام:

سلائی مشین کی قسم کی بھی ہو مختلف پرزوں پر مشتمل ہوتی ہے۔ اگر ہم اسے مہارت سے استعمال کرنا چاہتے ہوں تو سب سے پہلے اس کے مختلف پرزوں ان کے کام اور مشین کی حفاظت و احتیاط کے بارے میں جاننا ضروری ہے۔ ہر کمپنی کی مشین مختلف قسم کی ہوتی ہے البتہ کسی ایک کمپنی کی سلائی مشین کی بناوٹ سے بنیادی واقفیت کی وجہ سے دوسری مشین چلانے میں آسانی ہوتی ہے۔ ہرمشین کے پرزے معمولی ردوبدل کے ساتھ ہوتے ہیں۔

1۔ بازو:

یہ مشین کے اوپر کا سامنے والا حصہ ہوتا ہے۔ اس کے اوپر ایک کیل جیسی لمبی پن لگی ہوتی ہے جس پر ریل رکھ دیتے ہیں اور پھر ریل کا دھاگہ اس میں سے گزارتے ہیں۔ اگر صفائی یا کسی وجہ سے مشین کے اوپر کے حصے کو اُٹھانا ہو یعنی کھولنا ہو تو اس سمیت ہی کھولنا پڑتا ہے۔

2۔پہیہ:

یہ سلائی مشین کے دائیں ہاتھ گول پہیے کی شکل کا ہوتا ہے۔ اس کی مدد سے مشین حرکت کرتی ہے۔ یہ دھاگے کے لیور او رسلائی کی حرکت کو کنٹرول کرتا ہے۔

3۔ نلکی لگانے کی کیل:

یہ مشین کے اوپر لوہے کی ایک چھوٹی سی سلاخ ہوتی ہے جس پر سلائی کرنے کے لئے دھاگے کی نلکی لگائی جاتی ہے۔

4۔ دھاگا کسنے والا پرزہ:

مشین کے بائیں ہاتھ کو لگے ہوئے سپرنگ کے اوپر ایک چکرہوتا ہے۔ اس سے دھاگے کو کھینچا جاسکتا ہے اور ڈھیل بھی دی جاسکتی ہے ۔ اگر اوپر والادھاگہ سختی سے آئے تو وہ باربار ٹوٹتا ہے۔ اگرڈھیلا ہو تو ٹانکے ڈھیلے آتے ہیں۔ اگر اس سپرنگ والے چکر کو گھماکر دائیں یا بائیں کریں اوردھاگے کی ڈھیل کو مناسب رکھیں تو ٹانکے ٹھیک آتے ہیں۔

5۔ دھاگے کا لیور:

یہ سوئی میں دھاگے کو روانی سے بھیجتا ہے۔ مشین چلاتے وقت یہ اوپر نیچے ہوتا ہے۔

6۔دباؤ کا پیچ:

یہ کپڑے پر مشین کے پیر کے دباؤ کو کم یا زیادہ کرنے میں مدددیتا ہے۔ اور کپڑے کو سلائی کے دوران کنٹرول میں رکھتا ہے یعنی ادھر ادھر نہیں ہوتا۔

7۔ دندانے:

یہ پرزہ سلائی کے وقت کپڑے کو بڑھاتا ہے۔

8۔ بیڈ:

یہ مشین کا نیچے کا حصہ ہوتا ہے جو ہموار ہوتا ہے۔ اس پر مشین کے تمام پرزے لگے ہوتے ہیں۔

9۔ سلائیڈ پلیٹ:

یہ ایک چپٹی سٹیل کی پلیٹ ہوتی ہے۔ جو شٹل اور پھرکی کو ڈھکے رکھتی ہے اور ضرورت پڑنے پرپھرکی کو نکالنے اور لگانے کے لئے آگے پیچھے کی جاتی ہے۔

10۔ پھرکی میں دھاگا بھرنے والا:

یہ مشین کی ہتھی کے ساتھ لگا ہوا ایک پن ہوتا ہے اس پر پھرکی لگاکر اس کے اوپر لگاہوا حصہ انگوٹھے سے دبادیتے ہیں اور ہتھی چلاکر دھاگہ بھر لیتے ہیں۔ کچھ مشینوں میں یہ حصہ پھرکی بھرنے کے بعد خودبخود رک جاتا ہے جس سے یہ پتہ چلتا ہے کہ پھرکی میں مزید دھاگا بھرنے کی گنجائش نہیں ۔

11۔ پیر اٹھانے والا پرزہ:

یہ مشین کی پشت پر نصب ہوتا ہے جس کو اٹھانے سے کپڑے کو مشین کے نیچے سے نکالتے ہیں او رنیچا کرنے سے سلائی کرتے ہیں۔ یعنی جب سلائی کرنا ہو تو نیچے کردیتے ہیں جب کپڑا باہر نکالنا ہو تو اوپر کردیتے ہیں۔

12۔ ٹانکا چھوٹا یا بڑا کرنے والا پرزہ:

اس میں ایک گول سپرنگ سا لگا ہوتا ہے جس کو اوپر نیچے کرنے سے دھاگے کو ڈھیل ملتی ہےاور ٹانکے کو چھوٹا یابڑا کرسکتے ہیں۔ اس پر نمبر لگے ہوتے سینٹی میٹر میں کتنے ٹانکے لگتے ہیں ۔اس پرزے کی مدد سے اُلٹی سلائی بھی کی جاسکتی ہے۔2.5ہیں جو ظاہر کرتے ہیں کہ

13۔ پیر:

سلائی کرتے ہوئے اسے نیچے کردیتے ہیں۔ اس سے کپڑا کنٹرول میں رکھا جاتا ہے اور یہ کپڑوں کو دندانوں پر دبائے رکھتا ہے۔

14۔ سوئی کسنے والا پیچ:

یہ ایک چھوٹا سا پیچ نما پرزہ ہوتا ہے جو سوئی لگانے کی جگہ پر لگا ہواہوتا ہے۔ اس کو سوئی لگا کر کس دیا جاتا ہے یہ سوئی کو مضبوطی سے جکڑے رکھتا ہے۔

15۔ پیرکسنے والا پرزہ:

اس پرزے کو ڈھیلا کرکے پیراُتارا جاتا ہے اور کسنے سے پیراپنی جگہ پر جم جاتا ہے۔

16۔ پھرکی بھرتے وقت دھاگا کسنے والا پیچ:

یہ پرزہ پھرکی بھرتے وقت دھاگے کو مناسب مقدار میں چھوڑتا ہے تاکہ پھرکی اچھی طرح دھاگے سے بھر جائے۔

کچھ مشینوںمیں ان پرزوں کے علاوہ دیگر پرزوں بھی ہوتے ہیں۔

1۔ ترپائی:

یہ پرزہ تر پائی کرنے کے کام آتا ہے۔

2۔ مغزی لگانے کا پرزہ:

یہ پرزہ مغزی لگانے کے کام آتا ہے۔

3۔ پلیٹ ڈالنے کا پرزہ:

یہ پرزہ کپڑے میں پلیٹ بنانے کے لئے استعمال ہوتا ہے۔

4۔ کاج بنانے والا:

یہ پرزہ کاج بنانے کے لئے استعمال ہوتا ہے۔

5۔ کوئلٹر کرنے کا پرزہ:

یہ پرزہ کپڑے میں جنٹ بنانے کے لئے استعمال ہوتا ہے۔

6۔ چنٹین ڈالنے والا:

یہ پرزہ کپڑے میں چنٹ بنانے کے لئے استعمال ہوتا ہے۔

7۔ ڈسک:

کمپیوٹر سے چلنے والی مشین میں مختلف ڈیزائن بنانے کے لئے کچھ ڈسک بھی ہوتے ہیں جن کو لگانے سے مختلف دیزائن بنتے ہیں۔

2۔ مشین کی سلائی کرتے وقت کن بنیادی اُصولوں کو مدِنظر رکھنا ضروری ہے؟

مشین کے سلائی کرنے کے بنیادی اصول:

مشین سے سلائی کرتے وقت چند بنیادی اُصولوں کا خیال رکھناضروری ہے۔

1۔ کپڑا سینے سے پہلے:

کپڑا سینے سے پہلے سلائی کے دونوں حصوں کو اچھی طرح برابر ملائیں ورنہ ایک حصہ بڑا یا چھوٹا ہو جاتا ہے ۔

2۔ کپڑے کی سلائی شروع کرنا:

کپڑے کی سلائی شروع کرتے وقت دبانے والے پرزے کو نیچے کرنے سے پہلے دھاگا لینے والے پرزے کو پورا نیچے کھینچیں تاکہ سلائی شروع کرتے ہی اوپر والا دھاگا نکل نہ جائے۔

3۔ کپڑے کا بڑا حصہ بائیں ہاتھ رکھنا:

کپڑے کا بڑا حصہ بائیں ہاتھ کی طرف رکھیں تاکہ مشین کے اندروالے حصے میں کپڑا اکٹھا نہ ہواور سلائی کرنے میں دقت نہ ہو۔

4۔ کپڑ ے کی سلائی کے طریقے:

کپڑے کی سلائی کو شروع اور آخر میں مضبوط کرنا لازمی ہوتا ہے۔ ورنہ یہ اُدھڑ جاتی ہے۔ اس کے لئے عام طور پر دو طریقے استعمال کیے جاتے ہیں۔

ا۔ سلائی کا پہلا طریقہ:

سلائی کا ایک طریقہ یہ ہے کہ سلائی شروع کرنے پرکپڑا مشین کے پاؤں کے نیچے رکھ کر مشین چلائیں لیکن کپڑے کو سرکنے نہ دیں اور ایک ہی جگہ دو تین ٹانگے لگائیں۔ اس طرح سلائی کے شروع کے ٹانکے لگائیں۔ اس طرح سلائی کے شروع کے ٹانکوں میں ایک چھوٹی سی گرہ بن جائے گی جس سے سلائی نہیں کھلے گی۔ یہی عمل سلائی مکمل ہونے کریں۔

ب۔ سلائی کا دوسرا طریقہ:

سلائی کا دوسرا طریقہ یہ ہے کہ سلائی کو پلٹ کر دوبارہ تین سینٹی میٹر تک ٹانکے لگائیں۔ یہ طریقہ گولائی والے حصون کے لئے خاص طورپر موزوں ہوتا ہے مثلاٌآستین کو قمیض سے جوڑنے کے لئے یہ مناسب طریقہ ہے۔ اس طریقے سے سلائی بہت مضبوط رہتی ہے ۔

5۔ سیدھی یا ترچھی پٹی:

سینٹی میٹر2.5گلے پر سیدھی یا ترچھی پٹی لگاتے ہوئے پٹی کی چوڑائی مناسب رکھیں ورنہ گولائی میں جھول آئیں گے۔ عام طور پر ترچھی پٹی کی چوڑائی

رکھی جائے۔

6۔ ترچھی پٹی:

گلے پر ترچھی پٹی لگاتے ہوئے پٹی کو بالکل نہ کھینچیں کیونکہ اس طرح کرنے سے گلے میں صفائی اور خوبصورتی نہیں آتی۔

7۔ ترچھے اور سیدھے حصے کو جوڑنا:

ترچھے اور سیدھے حصے کو جوڑنے کے لئے ترچھا حصہ اوپر اور سیدھا حصہ نیچے رکھ کر جوڑنے سے سلائی میں صفائی آتی ہے۔

8۔ جھول دار اور سیدھے حصے کو جوڑنا:

جھول دار اور سیدھے حصے کو جوڑنے کے لیے جھول دار حصہ اوپر اور سیدھا حصہ نیچے کو رکھ کر جوڑنے سے سلائی میں صفائی آتی ہے۔

9۔ دوہری سیونوں میں سلائی:

دوہری سیونوں میں سلائی کی گنجائش کم سے کم رکھیں تاکہ جھول پیدا نہ ہو۔ مثال کے طور پر گلابناتے ہوئے ترچھی یا سیدھی پٹی قمیض کے گلے کے ساتھ غلط سل جانے پرکپڑے کوکبھی کھینچ کر نہ اُدھیڑیں بلکہ سوئی سے نجیہ ڈھیلا کرکے ادھیڑیں۔

10۔ کسی جوڑ کے غلط سل جانے پر:

کسی جوڑ کے غلط سل جانے پر کپڑے کی سلائی کی لائن پر پہلے ہاتھ سے کچاکریں اور پھر اس پر مشین کی سلائی کریں۔

11۔ سلائی کی لائن کو ہاتھ سے کچا کرنا:

سلائی سیکھنے کے لئے ضروری ہے کہ کپڑے کی سلائی کی لائن کو ہاتھ سے کچاکریں اور پھراس پر مشین سے سلائی کریں ۔

12۔ فالتو دھاگے:

کسی چیز کا چھوٹا یابڑا حصہ سینے کے بعد فالتو دھاگے ساتھ کے ساتھ کاٹتی جائیں ۔ ورنہ آخر میں بہت سے دھاگے کاٹنے مشکل ہوجاتے ہیں۔

13۔ سوتی کپڑے کی سلائی:

سوتی کپڑے کی سلائی کافی آسان ہوتی ہے اس لئے سلائی سیکھنے کے لئے ضرور ی ہے کہ سوتی کپڑوں پر مہارت حاصل کرنے کے بعد ریشمی اور باریک کپڑوں پر سلائی کی جائے۔

3۔ مختلف کپڑوں کی کٹائی اور سلائی کا طریقہ کار لکھیں؟

مختلف کپڑوں کی کٹائی اور سلائی کا مناسب طریقہ کار:

تمام اقسا م کے کپڑوں کی مناسبت کے اعتبار سے ان کی کٹائی اورسلائی کے بارےمیں جاننا بہت اہم ہے۔ کیونکہ کپڑے مختلف ریشوں سے بنائے جاتے ہیں اس لئے ان کی کٹائی و سلائی میں احتیاط بہت ضروری ہے۔

مختلف کپڑوں کی کٹائی و سلائی کا طریقہ ذیل میں دیاگیا ہے۔ سلائی کٹائی کرتے وقت ان باتوں کو مدِ نظر رکھنا ضرور ی ہے۔

1۔ سوتی:

سوتی کپڑوں کوکٹائی سے پہلے سکیڑنا سب سے پہلا مرحلہ ہے۔ سوتی یا گرم کپڑے کو پانی میں کچھ گھنٹوں تک بھگو دیں اس کے بعد سوکھنے کے لئے ڈال دیں اور سوکھنے کے بعد اچھی طرح استری کرکے تمام شکنیں دور کردیں۔اس کے بعد اس کپڑے کی کٹائی کریں۔ سوتی کپڑے کی کٹائی اورسلائی باقی کپڑوں سے نسبتاٌ آسانی سے کی جاسکتی ہے۔

2۔ فر:

فروالے کپڑوں کی کٹائی وسلائی کرتے وقت اس بات کا خاص خیال رکھنا ضرور ی ہے کہ اس کی فر کا رخ نیچے کی طرف ہو اور کٹائی کرتے وقت ڈرافٹ کا پن لگائیں یا ڈرافٹ کوایک تہہ پر رکھی کر دوسری طرف پیر رکھ لیں تاکہ کپڑا کھسکنے نہ پائے اور کٹائی میں دقت پیش نہ ہو۔ فر والے کپڑوں کی سلائی کرتے وقت مشین کے تناؤ اور ٹانکوں کو پہلے کسی فالتو کپڑے پر ضرور چیک کرلیں۔ اس سے کپڑا کھسکے گا نہیں اور دوسرا ٹانکے صحیح ہونے کے ساتھ ساتھ سلائی مضبوط ہوگی۔ ایسے کپڑوں کے لئے زیادہ تر سادہ سیون کااستعمال صحیح رہتا ہے۔ فر والے کپڑوں کو استری کرنا بھی ضروری نہیں ہوتا۔

3۔ لینن:

لینن کے کپڑوں کی کٹائی کرتے وقت سلائی کاحصہ زیادہ رکھنا چاہیے کیونکہ تار نکلنے سے یہ کپڑا جلد ادھڑ جاتا ہے۔لینن کے کپڑوں پر ہمیشہ تیز استری استعمال کی جاتی ہے۔ لیکن استری کرتے وقت اس بات کا خاص خیال رکھیں کہ اگر کپڑے پر سجاوٹ کے لئے کچھ چیزیں لگائی کئی ہوں تو پھر کپڑے کو اُلٹا کر کے استری کریں۔

4۔ ایکریلیک کپڑوں کی کٹائی و سلائی:

ایکریلیک کپڑے مختلف برانڈ سے مشہور ہیں مثلاٌ ایکریلین اور لان وغیرہ ۔ یہ کپڑے مضبوط اور دیرپا ہوتے ہیں اور ان کی کٹائی و سلائی میں کوئی خاص دشواری پیش نہیں ہوتی۔

5۔  شیفون، وائل، جارجٹ کی کٹائی و سلائی:

شیفون ، وائل، جارجٹ ان سب کپڑوں کا وزن ہلکا ہوتا ہے اور یہ بہت نازک ہوتے ہیں جس کی بنا پر ان کی کٹائی اور سلائی بڑی احتیاط سے کرنا پڑتی  ہے۔ ان کو کھینچنے سے پھٹ جاتے ہیں،۔ ان کی کٹائی کے وقت ڈرافٹ کو پن لگالینا چاہیے۔ سلائی کرتے ہوئے ان کے درمیان اخبار یا ٹشو پیپررکھنا بہتر ہوتا ہے جس سے کپڑا کھسکتا نہیں اور سلائی میں چنٹ یا کھینچاؤ نہیں آتا جس سے سلائی مضبوط ہو جاتی ہے۔ ان کپڑوں کو کھینچ کر سلائی نہیں کرنی چاہیے کیونکہ کھینچ کر سلائی کرنے سے ان میں چنٹ آجاتی ہے۔ سلائی کے بعد کپڑوں کے کناروں کو صفائی سےکاٹ لینا چاہیے یا کناروں کو اوو رکاسٹ یا زگ زیک کرلینا چاہیے۔ شیفون اور جارجٹ وغیرہ کیمیاوی ریشوں سے تیارکیے جاتے ہیں ان پر ہمیشہ نیم گرم استری استعمال کرنی چاہیے۔

6۔لیس یا جالی دار کپڑوں کی کٹائی و سلائی:

لیس یا جالی دار کپڑے معتدل موسم میں استعمال ہوتے ہیں۔ ان کی چوڑائی مختلف ہوتی ہے۔ ان کپڑوں پر کٹاؤ بنے ہوتے ہیں  اور کچھ سادہ ڈیزائن میں ہوتے ہیں۔ لیس کو کسی بھی طرح سے کاٹا جاسکتا ہے۔ لیکن سلائی کرتے وقت فنشنگ کاخیال ضروری ہوتا ہے اس سے سلائی میں نفاست آجاتی ہے۔ لیس کو زیادہ مرتبہ اپنی جگہ سے نہیں ہلانا چاہیے کیونکہ اس سے لیس کی کٹائی میں فرق آسکتا ہے۔ لیس کی سلائی کرتے ہوئے مشین کے تناؤ کو کپڑے کے مطابق سیٹ کرلینا چاہیے اور پھر کپڑے پر کاغذ رکھ کر سلائی کرنا آسان ہو جاتا ہے۔

7۔ بروکیڈکپڑوں کی کٹائی و سلائی:

بروکیڈ کپڑوں کی سلائی کرتے وقت اخبار کوکپڑے پر رکھ کر سلائی کرنی چاہیے۔ اس سے ٹانکے صحیح اور مضبوط ہوتے ہیں۔ ان کپڑوں کے لئے سلائی کا حق ہمیشہ زیادہ رکھیں اور ترپائی کی خاطر کپڑا زائد رکھیں۔ یہ زائد کپڑا 2 سینٹی میٹر ہو تو بہتر ہے۔ سلائی کرنے کے بعد سلائی کے حق کے کناروِں، کندھے ،آستین کی گولائی اور ایسی جگہوں پر جہاں زیادہ زور پڑتا ہے ربن یا کپڑا لگا کرسلائی کریں۔ جس سے سلائی ادھڑے گی نہیں اور لباس میں صفائی آئے گی۔بروکیڈ کےکپڑے کے نیچے ہمیشہ استر کا استعمال کرنا چاہیے۔ اس سے کپڑ اپہننے میں آرام دہ ہو جاتا ہے۔

نائلون کی کٹائی و سلائی:

یہ کپڑا بہت پھسلتا ہے ۔ اس کی کٹائی کرتے وقت احتیاط کرنا چاہیے۔ کٹائی کرتے وقت ڈرافٹ کو ہمیشہ پن لگائیں اور سلائی ہمیشہ کاغذ رکھ کر کریں۔

9۔ گرم کپڑوں کی کٹائی وسلائی:

گرم کپڑوں کی کٹائی کرتے وقت ڈرافٹ کو کپڑے پر رکھ کر پن لگائیں۔ کٹائی تیز قینچی سے کریں۔ ان کپڑوں پر سلائی کا حق زیادہ رکھیں اور ٹریسنگ وہیل یا چاک سے سلائی کی لائیں ٹریس کریں۔ گرم کپڑوں کی فنشنگ کے لئے ہاتھ سے یا مشین سے اوورکاسٹ کریں۔ گرم کپڑوں کے نیچے استر ضرور لگاچاہیے۔ گولائی والی سلائیوں پر کچاٹانکالگانا چاہیے اور بعد میںمشین کا ٹانکا درمیان رکھ کر سلائی کریں۔

4۔ بنیادی ڈرافٹ سے پیٹرن بناتے وقت کن نقاط کو مد ِنظر رکھنا ضروری ہے؟

بنیادی ڈرافٹ سے پیٹرن بناتے وقت مندرجہ ذیل نکات کو مدِ نظررکھنا ضروری ہے۔

1۔ سلائی کا حق:

  سم رکھیں۔ 2.5سم اور لباس کی اطراف پر 1.5سلائی کے حق کے لئے گلے، کندھے، اور مونڈھوں  پر

2۔ کپڑوں کے سروں سے دھاگے:

جن کپڑوں کے سروں سے دھاگے زیادہ نکلتے ہیں ، ان کے لئے 2/1 سم سلائی کا حق زیادہ رکھنا چاہیے۔ سلائی کے بعد کناروں کو پختہ کرنے کے لئے پہلے فالتو کپڑے کو کاٹ لیں۔

3۔ گلے کے ڈیزائن:

پیٹرن پر گلے کے ڈیزائن ، گلے کی پٹی وغیرہ کی نشاندہی کرلیں۔

4۔ ڈیزائن میں پلیٹ، سجاوٹ یا چنٹ:

ڈیزائن میں پلیٹ، جیب سجاوٹ کے لئے سلائی کی لائیں یا چنٹ وغیرہ ہونے پر ان کے نشانات پیٹرن لگائیں ۔

5۔ پیٹرن کے کپڑے پر گرین لائین:

پیٹرن پر گرین لائین کی نشاندہی نشان سے ضروری ہے۔ اس سے پیٹرن کو کپڑے پر گرین لائین کے حساب سے رکھنا آسان ہوگا۔ کپڑے میں تانے کے رخ گرین لائین کے کناروں کے متوازی دھاگے زیادہ مضبوط ہوتے ہیں۔ اس لیے لباس کی لمبائی اسی رخ رکھی جاتی ہے۔ جس سے لباس جسم پر ٹھیک بیٹھتا ہے اور اس کی وضع قطع بھی خراب نہیں ہوتی ۔لیکن لباس کے کچھ ڈیزائن ایسے بھی ہوتے ہیں جن میں خوبصورتی پیداکرنے کےلئے ان کو آڑے رخ رکھ کر کاٹا جاتا ہے۔ اس لئے اس کا نشان بھی پیٹرن پر لگا نا ضروری ہوتا ہے۔

6۔ کپڑے کی تہہ کا نشان :

پیٹرن کی جس لائن کو کپڑے کی تہہ پررکھنا ہو ۔وہاں تہہ کا نشان لگایا جائے۔

7۔ لبا س کا ڈیزائن پیٹرن کے حصے:

جب لباس کا ڈیزائن ایسا ہو جس میں پیٹرن کے کئی حصے ہوں یعنی اگلا حصہ،یوک،آستین، جیب، کف ،کالر،جھالر،گلے کی پٹی ،کاج کی پٹی وغیرہ وغیرہ تو ہر حصے پر اس کا نام اور تعداد لکھیں۔ اس سے آپ کو پیٹرن کے مختلف حصوں کا اندازہ رہے گا۔

8۔ پیٹرن پر اگلے اور پچھلے حصے:

پیٹرن پر یہ بھی لکھیں کہ اس کو کپڑے کی کتنی تہوںمیں رکھ کر کاٹنا ہے۔ پیٹرن پر اگلے اور پچھلے حصوں کی نشاندہی بھی کریں۔

9۔ قمیض کے اگلے اور پچھلے حصے:

لباس کی سلائی میں آسانی کے لئے قمیض کے اگلے اور پچھلے حصوں کی درمیانی لائن پر موٹا سا نقطہ یا نشان لگائیں۔ مندرجہ بالاتمام تفصیلات پیٹرن پر موجود ہ ہونے سےلباس کی کٹائی اور سلائی آسان ہو جاتی ہے۔

5۔ کٹائی کے بنیادی اصول کون کون سے ہیں؟

کٹائی کے بنیاد ی اُصول:

گھروں میں کٹائی سلائی کے لئے کوئی خاص جگہ نہیں ہوتی جس سے لوگوں کو اس کی اہمیت کا پتہ نہیں ہوتا۔ اس سے سلائی میں بہت سے خامیاں رہ جاتی ہیں۔ اسی لیے درزی  نے کپڑ ے کاٹنے کے لئے ایک خاص قسم کی مناسب اونچی میز رکھی ہوتی ہے۔ جس سے ایک طرف کام آسان ہوجاتا ہے تو دوسری طرف کٹائی بھی بہترہوتی ہے۔ جبکہ گھروں میں یہ کام کھانے کی میز پر بھی کیاجاسکتا ہے۔کپڑاکاٹنے سے پہلے لباس کا مکمل ڈرافٹ تیار کرلیا جائے۔ یہ ڈرافٹ کپڑے پر اس طرح رکھنا چاہیے کہ کم سے کم کپڑا استعمال ہو۔ کٹائی کرنے سے پہلے مندرجہ ذیل باتوں کو مدِ نظر رکھنا ضروری ہے۔

1۔ تیزدھار قینچی:

قینچی کی دھار تیز اور نوک ٹھیک ہونی چاہیے۔

2۔ قینچی کو صحیح طریقے سے پکڑیں:

قینچی صحیح طریقے سے پکڑیں اور کپڑے کو کبھی بھی ہاتھ میں لے کر نہ کاٹیں۔ جب کہ کپڑے کو ہمیشہ میز پر یا زمین پر بچھا کر کاٹیں اور ہاتھ سے دبا کر کپڑے کو کاٹیں۔

3۔ کپڑے کو سیکڑکراستری کرلیں:

کاٹنے سے پہلے کپڑے سیکڑ لیں اور استری کرلیں۔

4۔ دھاگا کھینچ کر سیدھا کرنا:

سیدھا کپڑا کاٹنا ہو تو کاٹنے سے پہلے کپڑے کو دھاگا کھینچ کر سیدھا کرنے کے بعد کاٹیں۔

5۔ کپڑے کی تہیں کاٹنا:

اگر کپڑے کی دو چارتہیں کاٹنی ہوں تو کپڑے کو پن لگا کر کاٹیں اور کاٹنے کے بعد ٹکڑے اکٹھے رکھیں تاکہ کاٹے ہوئے ٹکڑے ادھرادھر نہ بکھریں۔

6۔ قینچی سے ٹک لگانا:

کپڑے پر جن مقامات پر مخصوص نشان دینے ہوں یعنی کمر کی فٹنگ، چاک کی لمبائی کانشان، مونڈھے کا درمیانی حصہ وغیرہ ان جگہوں پر قینچی سے چھوٹا سا ٹک لگائیں۔

ڈرافٹ پر لگائے گئے سلائی کے حق کو بھی کپڑے پر ٹریس کرلیں اس سے سلائی آسان ہوگی۔

6۔ لباس میں خطوط کے استعمال کے شخصیت، شکل و صورت اور قدو قامت پر کیا اثرات مرتب ہوتے ہیں؟

لباس میں خطوط کے استعمال کے شخصیت ، شکل و صورت اور قدو قامت پر اثرات:

لباس میں اُفقی ، عمودی اور ترچھے خطوط کا استعمال پہننے والے کی شکل و صورت  اور قدو قامت پر نمایاں اثرڈالتا ہے۔ کیونکہ ان خطوط سے اصل لمبائی اور چوڑائی کو چھپا کر موزونیت پیداکرسکتے ہیں مثلاٌ

اُفقی خطوط والالباس:

اُفقی خطوط سے چوڑائی کا احساس پیدا ہوتا ہے۔ یوں لمبے قد او ردبلی پتلی جسامت کے لئے اُفقی لباس زیادہ موزوں رہتا ہے کیونکہ اس سے جسم سڈول دکھائی دیتا ہے نیز قد میں کمی کا احساس پیدا ہوتا ہے۔

عمودی خطوط والا لباس:

عمودی خطوط  سے لمبائی کا احسا س پیدا ہوتا ہے ۔ جس سے چھوٹے قد اور موٹی جسامت کے لئے عمودی خطوط والا لباس موزوں رہتا ہے۔ جس سے قد لمبا محسوس ہوتا ہے اور جسامت بھی مناسب نظرآتی ہے۔

ترچھے خطوط والا لباس:

ترچھے خطوط سے چوڑائی یا دھکیلنے اور کھینچنے کا احساس پیدا ہوتا ہے۔ جس سے درمیانے قد اور جسامت کے لئے ان کا استعمال موزوں رہتا ہے۔ لیکن لباس میں ان خطوط کا باہم امتزاج مناسب تاثر پیدا کرتا ہے۔

خطوط میں ایک نمایاں خوبی یہ ہوتی ہے کہ ان کاصحیح استعمال ناپسندیدہ وضع قطع کو دلکش بنا سکتا ہے ۔انسانی شخصیت میں چہرہ نمایا ں حیثیت رکھتا ہے۔ بنیاد ی طورپر چہرے کی بناوٹ تکون ،مربع، گول اور بیضوی ہوتی ہے۔ اس لئے چہر ے کی بناوٹ کو مدِنظر رکھتے ہوئے موزوں قسم کے گلے اور بالوں کا سٹائل اپنانا چاہیے مثلاٌ

1۔ گول چہرے والے اشخاص:

گول چہرے کے لئے قمیض کا گول گلا موزوں نہیں ہوتا کیونکہ اس سے چہرے کی گولائی مزید نمایاں ہوجاتی ہے۔ جبکہ گول چہرے کے لئےوی گلے کا استعمال مناسب رہتا ہے۔ کیونکہ اس سے ایک تو چہر ہ کم گول نظر آتا ہے اور دوسرے گردن بھی لمبی دکھائی دیتی ہے۔ گول چہرےوالے اشخاص کو پانی مانگ بھی زیادہ وضاحت سے نہیں نکالنی چاہیے۔کیونکہ پیچھے کی طرف کئے ہوئے بال  بہتر رہتے ہیں۔ مانگ نکالنی ہو تو یہ بالکل سر کے درمیان میں نہیں ہونی چاہیے اور نہ ہی ایک طرف کو زیادہ جھکی ہوئی ہونی چاہیے۔

2۔ مربع اور چوڑے چہرے:

مربع اور چوڑے چہرے کے لئے قمیض کا چوکور گلا موزوں نہیں ہوتا ۔کیونکہ چوڑے چہرے کے لئے بیضوی اور گہرا گلا مناسب رہتا ہے۔ کیونکہ اس سے چہرے کی چوڑائی میں کمی کااحساس پیدا ہوتا ہے۔ بال بنانے میں بھی چوڑے چہرے والوں کو خاص خیال رکھنا چاہیے۔ کانوں پڑ ڈھیلے ڈھالے بال ہونے چاہیئں جو چہرے کی چوڑائی کو کم کرنے میں مددگار ہوتے ہیں۔ اس کے علاوہ سیدھی مانگ نکالنے سے بھی چہرہ بہتر لگتا ہے۔

3۔ بیضوی چہرے والے اشخاص:

بیضوی چہرے کے لئے اونچا گول گلا بہت موزوں رہتا ہے۔ اس کے علاوہ سر کے بال کھینچ کر بنانے کی بجائے ماتھے پر ڈھیلے ڈھالے رکھنے چاہئیں اور ٹیڑھی مانگ نکالنے سے چہر ہ دیکھنے میں بہت متناسب نظر آتا ہے۔

4۔ تکون چہرے والے اشخاص:

تکون چہرے کے لئے وی گلا موزوں نہیں ہوتا  کیونکہ اس سے ٹھوڑی کی نوک بھی زیادہ واضح ہو جاتی ہے۔تکون چہرے کے لئے اونچاگول گلہ سب سے موزوں رہتا ہے۔ علاوہ ازیں ٹیڑھی مانگ اور کانوں پر ڈھیلے ڈھالے بال تکون چہرے کو خوبصورت بنادیتے ہیں۔ خطو ط کے ان اُصولوں کو صرف قداور چہرے میں تناسب پیدا کرنے کےلئے ہی استعمال نہیں کیا جاتا بلکہ ان سے شکل و صورت کی بہت سے خامیاں بھی بہت حد تک کم ہو سکتی ہیں۔

5۔ اونچی اور لمبی ناک والے اشخاص:

ناک بہت اونچی ہوتو بھی وہاں بالوں کو ڈھیلا اور ماتھے کےآگے رکھنے سے مددملتی ہے۔ اور ناک چھوٹی دکھائی دیتی ہے ۔اس کے برعکس اگر ناک بہت چھوٹی ہوتو بالوں کو ماتھے کے پیچھے رکھنا موزوں رہتا ہے۔ جس سے ناک چہرے پر بہت چھوٹی چھوٹی دکھائی نہیں دیتی۔

6۔ بڑی ٹھوڑی والے اشخاص:

ٹھوڑی بہت بڑی ہونے کی صورت میں کھینچا ہو جوڑا یاکسی ہوئی چٹیا بنانے سے ٹھوڑی اور بھی زیادہ نمایاں لگتی ہے۔ اس کے لئے بالوں کے ماتھے اور کانوں پر ڈھیلا چھوڑنے اور ڈھیلی ڈھالی چٹیا یا نیچی قسم کا جوڑا بنانے سے بہت مدد ملتی ہے۔ اس کے برعکس اگر ٹھوڑی بہت اندر کی طرف ہو تو کانوں اور گردن پر بال ڈھیلے چھوڑنا موزوں ہوتا ہے۔

(Clothing Requirements of Different Age Groups) باب 11۔عمر کے مختلف ادوار میں لباس کی ضروریات

سوالات

سوال1۔ ذیل  میں دے گئے بیانات میں سے ہر بیان کے نیچے چار ممکنہ جوابات دیے گئے ہیں۔ درست جواب کے گرد دائرہ لگائیں۔

1۔ ہروہ چیزجو ہمار ا جسم ڈھانپنے کے لئے استعمال ہوتی ہے کیا کہلاتی ہے؟

(الف)                                                                                                           لباس                                                                                                   (ب)                      کپڑا                                                                                          (ج)                 شخصیت                                                                 (د)                    زندگی

2۔ لباس کی وضع میں کتنے عوامل اہمیت کے حامل ہیں؟

(الف)                                                                                                                                                                                                                     ایک                                                                                                                                                                                                                                    (ب)                                                                                                                                                                    دو                                                                                                      (ج)                                                                                                             تین                                                                                                                                                                                    (د)                                                                                                                   چار

3۔ شیرخوار بچوں کے کپڑے کس رنگ میں بہتر رہتے ہیں؟

(الف)                                                                                                                          شوخ رنگ                                                                                                                                                                                                                                                                 (ب)                                                                                                                                                                   ہلکے رنگ                                                                              (ج)                                                                                                            سیاہی مائل رنگ                                                                                                                                                                                                                                           (د)                                                                               دھندلے رنگ

4۔ اٹھارہ سے پچیس سال کی عمر کے لئے کیسے رنگ استعمال کرنے چاہیئں؟

(الف)                                                                                                         صوفیانہ رنگ                                                                                                                                                     (ب)                      شوخ رنگ                                                                                                                                                          (ج)               سیاہی مائل رنگ                                                                                                                                                    (د)                                                                                     کالے رنگ

5۔لباس خاندان کے بجٹ میں کس اہمیت کا حامل ہے؟

(الف)                                                                                                         دوہری                                                                                                                                                                                          (ب)                                                                  ثانوی                                                                                                               (ج)                                                              اختیاری                                                                                                                          (د)                                                                                      خریداری

6۔شخصیت کی کتنی اقسام ہیں؟

(الف)                                                                                                           پانچ                                                                                                                                                      (ب)                                                           چھ                                                                                                               (ج)                                                                                             سات                                                                                                                                                        (د)                                                 آٹھ

7۔ انسان کی شخصیت خواہ کیسی ہو وہ کس کا مالک ہوتا ہے؟

(الف)                                                                                                         دلچسپ ہستی                                                                                                                (ب)                                                                           سنجیدہ شخصیت                                                      (ج)                                                                                                      خاموش                                                     (د)                                                                                           ڈرامائی

8۔ زندگی کے ابتدائی سالوں میں بچو ں کی کیاتیزی سے ہوتی ہے؟

(الف)                                                                         طبعیت                                 (ب)                                                                                                نشوونما                                                                                               (ج)                                         صحت                                                                     (د)                                         مضبوطی

9۔دوسے پانچ سال کی عمر کے بچے جسمانی نشوونما کے ساتھ ساتھ کیا حاصل کرلیتے ہیں؟

(الف)                              مذہبی شعور                                                      (ب)                                                              کھیل کود                 (ج)                                                                       مشاغل                                                          (د)                                            احساس

10۔ پرانے لباس کو تھوڑے سے ردوبدل سے کیسا بنایا جاسکتا ہے؟

(الف)                                                                                                         نیا                                      (ب)                                          پرانا                                                                                   (ج)                                                                                 ضائع                                                                                  (د)                                          محنت

جوابات: (1-الف)(3-ج)(2-ب)(2-ب)(1-الف)(2-ب)(1-الف)(2-ب)(2-ب)(1-الف)

سوال 2۔ مختصر سوالات کے جوابات تحریر کریں۔

1۔ لباس کی وضع میں کتنے عوامل اہمیت کے حامل ہیں؟

لباس کی وضع میں تین عوامل اہمیت کے حامل ہیں جن کے انتخاب میں ہمیشہ اپنی مذہبی اقدار کو پیشِ نظر رکھنا ضروری ہے ہمیں چاہیے کہ ہم جو فیشن بھی اپنائیں وہ اسلامی حدود وقیود کی حد بندی میں ہونا چاہیے۔

اس سلسلہ میں مندرجہ ذیل تین عوامل اہمیت کے حامل ہیں۔

ا۔ کپڑے یا پارچہ جات کا انتخاب

ب۔ لباس کی تراش خراش

ج۔ لباس کا ڈیزائن و سٹائل

2۔ لباس کی تراش و خراش سے کیا مراد ہے؟

لباس کا انتخاب کرتے وقت اس بات کو مدِ نظررکھنا چاہیے کہ لباس خواہ کسی بھی رواج یا سٹائل کے مطابق تراشا جائے وہ ہمیشہ ڈھیلا ڈھالا ہوناچاہیے۔ قمیض یا شلوار درمیانہ فٹنگ میں سلا کر پہنی جائے تو اس سے رائج الوقت فیشن کے ساتھ ساتھ بھی ہوجاتا ہےاورلباس کا مقصد بھی پورا ہوجاتا ہے۔ اگرچنے ہوئے دوپٹوں کی بجائے کھلے دوپٹے یا چادر استعمال کی جائے تو اس سے پردے کا مقصد پورا ہوجاتا ہے۔ پاکستان کے بہت سارے علاقوں میں کھلی چادراوڑھنے کا رواج عام ہے۔ جس سے جسم بھی ڈھک جاتا ہے اور بے پردگی بھی نہیں ہوتی۔

3۔ شخصیت کی کتنی اقسام ہیں ؟ نام لکھیں۔

1۔ نازک اندام شخصیت

2۔ کھلاڑی شخصیت

3۔ ڈرامائی شخصیت

4۔ شرمیلی شخصیت

5۔ باوقار شخصیت

6۔ زندہ دل اور شوخ شخصیت

4۔ لباس کی موزونیت کن عوامل پر مبنی ہے؟

لباس کی موزونیت بہت سے عوامل پر منحصر ہے۔ یہ عوامل درج ذیل ہیں۔

1۔ عمر و جنس

2۔ پیشے اور سرگرمیاں

3۔ آمدنی /گھریلو وسائل

4۔ مذہبی اقدار

5۔ موسم اور موقع محل

6۔ شخصیت

7۔ رسم و رواج

5۔ گیارہ سال سے سولہ سال کی عمر کے بچوں کے ملبوسات کیسے ہونے چاہئیں؟

اس عمر کے بچوں میں پسند اور ناپسند کا شعور پیدا ہوجاتا ہے اوربچے عمدہ لباس کومحسوس کرنے کے ساتھ ساتھ اپنے دوست احباب کی رائے کو بہت اہمیت دیتے ہیں اور اپنے عمر کے بچوں سے بہت متاثر ہوتے ہیں ، اپنے ساتھیوں جیسا لباس پہننا پسند کرتے ہیں اس لیے ضروری ہے کہ اس عمر کے بچوں کی شخصیت ، قدوقامت اور جسامت کاخیال کرتے ہوئے ملبوسات کے پرنٹ ،ڈیزائن اور رنگ کاانتخاب کرنا چاہیے۔

سوال 3۔ تفصیلی سوالات کے جوابات تحریر کریں۔

1۔ پیشے وسرگرمیوں اور مذہبی اقدار کے مطابق لبا س کے انتخابات پر نوٹ لکھیں؟

لباس کی شخصیت کا آئینہ دار :

لباس شخصیت کا آئینہ دار ہوتا ہے۔ اس لئے صحیح لباس کا انتخاب ہماری زندگی میں بہت زیادہ اہمیت کا حامل ہے۔ اس لیے ہمارے جو کپڑے ڈیزائن اور رنگ کے لحاظ سے پہننے والے کی شخصیت اور موقع محل کے مطابق ہونے چاہیئں۔

لباس کی بنیادی ضروریات:

جسم ڈھانپنے کے لئے جو چیز استعمال ہوتی ہے، اسے لباس کہتے ہیں۔ اس لئے لباس ہماری نیند ضروریات ہے۔ ہر وہ چیز جو جسم ڈھانپنے کے لئے استعمال ہوتی ہے۔ ہمارا”لباس” کہلاتی ہے۔

موزوں لباس:

موزوں لباس سے مراد”ایسالباس جو پہننے والے کی عمر ،رنگت ، مزاج ،موسم اور موقع محل کے مطابق ہواور وقت کے تقاضوں کو بھی پورا کرے ، موزوں لباس کہلاتا ہے”۔ موزوں لباس سے مراد ریشمی یا قیمتی لباس نہیں بلکہ لباس کی موزونیت  لباس کے صحیح انتخاب پر منحصر ہے۔ لباس ایسا پہننا چاہیے جو شخصیت کو جاذب نظر بنائے اور ہماری خامیوں کو چھپائے رکھے۔

لباس اور مذہبی روایات:

آج کل فیشن صرف اپنے معاشرے کی اقدار و ثقافت کو مدِ نظررکھ کر نہیں کیا جاتا بلکہ مغرب کا فیشن بھی اپنایا جاتا ہے۔ ہر معاشرے کے لباس کی اکثرروایات مذہب سے لی جاتی ہیں۔

اسلامی اقدار کے مطابق لباس کا انتخاب:

ہمارامذہب ہمیں اسلامی اقدار کے مطابق لباس پہننے کی تلقین کرتا ہے۔ جس کی وجہ یہ ہے کہ اسلام میں پردہ اور حیا سب سے اولین مقام رکھتے ہیں۔ اس لئے لباس بھی اسلامی وضع قطع پر مبنی ہونا چاہیے۔ لباس کی وضع میں تین عوامل اہمیت کے حامل ہیں جن کے انتخاب میں ہمیشہ اپنی مذہبی اقدار کو پیش نظررکھنا ضروری ہے ہمیں چاہیے کہ ہم جو فیشن بھی اپنائیں وہ اسلامی حدود قیود کو حد بندی میں ہونا چاہیے۔

اس سلسلہ میں مندرجہ ذیل تین عوامل اہمیت کےحامل ہیں۔

ا۔ کپڑے یا پارچہ جات کا انتخاب

ب۔ لباس کی تراش خراش

ج۔ لباس کا ڈیزائن و سٹائل

1۔ کپڑے یا پارچہ جات کا انتخاب:

لباس ہماری شخصیت کو نمایاں کرتا ہے اور اس میں انفرادیت بھی پیدا کرتا ہے۔ اس کے علاوہ لباس کا بنیادی مقصد جسم ڈھانپنا اور سترپوشی کرنا ہے۔ اس کے لئے ایسے کپڑے کا انتخاب کرنا چاہیے جو اس مقصد کو پورا کرسکے۔ کپڑا اتنا موٹا ہوناچاہیے جس سے جسم دکھائی نہ دے۔ باریک کپڑوں مثلاٌ جارجٹ اور شیفون کے نیچے سوتی کپڑا ضرور لگوانا چاہیے تاکہ جسم نظرنہ آئے۔ اس کے برعکس لٹھے، پاپلین یا موٹے کپڑے کا لباس استعمال کرنے سے انسان مہذب اور مدبر نظرآتا ہے۔ ہمیں سوتی کپڑوں میں سین فورائزڈ کاٹن مرسرائزڈ کاٹن  اور اسی قسم کے دیگر ہلکے کپڑے استعمال کرنے چاہئیں۔ لان یا موٹی وائل وغیرہ بھی سرگرمیوں میں پہننے کے لئے موزوں کپڑے ہیں۔ ہلکے اور سفیدی مائل اور قدرے گہرے، شوخ اور مٹیالے رنگوں کے نیچے شمیص پہننے سے جسم نمایاں نہیں ہوتا ۔

2۔ لباس کی ترا ش خراش:

لباس کا انتخاب کرتے وقت اس بات کو مدِ نظر رکھنا چاہیے کہ لباس خواہ کسی بھی رواج یاسٹائل کے مطابق تراشا جائے وہ ہمیشہ ڈھیلاڈھالا ہوناچاہیے  ۔ قمیض اور شلوار درمیانہ فٹنگ میں سلاکر پہنی جائے تو اس سے رائج الوقت فیشن کے ساتھ ساتھ پردہ بھی ہو جاتا ہے اور لباس کا مقصد بھی پورا ہو جاتا ہے۔ اگر چنے ہوئے دوپٹوں کی بجائے کھلے دوپٹے یا چادر استعمال کی جائے تو اس سے پردے کا مقصد پورا ہوجاتا ہے۔ پاکستان کے بہت سے علاقوں میں کھلی چادر اوڑھنے کارواج عام ہے۔ جس سے جسم بھی ڈھک جاتا ہے اور بے پردگی بھی نہیں ہوتی۔

3۔ ڈیزائن و سٹائل:

لباس میں گلا ،بازواور اگلاپچھلا حصہ وغیرہ جس طرح کا بنایا جاتا ہے، اسے ڈیزائن یا سٹائل کہتے ہیں۔ ہمیشہ پورے بازو کی آستین ،مناسب اونچائی کے گلے اور مناسب فٹنگ کے کپڑے پہننے چاہئیں کیونکہ اس  سے اچھی کوئی اور چیز نہیں نیز مذہبی حدود میں رہ کر مختلف قسم کے سٹائل اور فیشن اپنانے چاہئیں جو اسلام کی ہدایات کے خلاف نہ ہوں۔

2۔ شخصیت کی مختلف اقسام کو مدِ نظر رکھتے ہوئے لباس کا انتخاب کیونکر کیا جاسکتا ہے؟

شخصیت کے مختلف لباس کاانتخاب:

چونکہ لباس انسان کی مکمل شخصیت کا آئینہ دار ہوتا ہے۔ جبکہ شخصیت انسان کی امتیازی صفات و خصوصیات کے مجموعہ کا نام ہے جو کسی فرد میں نمایاں طور پر موجود ہوتی ہیں۔ ہرانسان کی شخصیت اور مزاج دوسرے سے مختلف ہوتی ہے۔ کچھ لوگ بہت شوخ اور چنچل مزا ج ہوتے ہیں، کچھ بہت خاموش ، ڈرامائی اور سنجیدہ ہوتے ہیں، شخصیت خواہ کیسی ہی ہو ایک دلچسپ ہستی کا مالک ہوتا ہے۔

لباس اور شخصیت کی موزونیت:

لباس ہماری شخصیت پر نمایاں اثرات ظاہر کرتا ہے جبکہ ہر دلعزیز بننے کے لئے لباس کی موزونیت بہت ضروری ہے۔ اس لئے لباس کا انتخاب کرتے وقت اپنی شخصیت کو مدِ نظر رکھنا ضروری ہوتا ہے۔ مناسب لباس کا انتخاب کرتے وقت درج ذیل دو پہلوؤں کو مدِ نظر رکھنا ضروری ہوتا ہے۔

شخصیت کے دو اہم پہلو

ا۔ شخصیت نفسیاتی اعتبار سے

ب۔ شخصیت جسمانی اعتبار سے

1۔ شخصیت کی نفسیاتی اعتبار سے درج ذیل اقسا م ہیں۔

1۔ نازک اندام شخصیت

2۔ کھلاڑی شخصیت

3۔ ڈرامائی شخصیت

4۔ شرمیلی شخصیت

5۔ باوقار شخصیت

6۔ زندہ دل اور شوخ شخصیت

1۔ نازک اندام شخصیت:

وہ لوگ جو دیکھنے میں انتہائی نرم ونازک اور نسوانیت سے بھرپور تاثرات رکھتے ہیں۔ انہیں نازک اندام اشخاص کہتے ہیں۔ یہ لوگ نازک ہوتے ہیں وہ زندگی میں نفاست اور نزاکت کو اہمیت دیتے ہیں۔ اس لیے ایسے اشخاص کے لئے باریک اورنرم کپڑے بہت مناسب رہتے ہیں۔ جس کی تراش خراش اور آرائش نہایت نفاست سے کی گئی ہو۔ جبکہ ہلکے اور چھوٹے پرنٹ ان کی شخصیت کو نمایاں کرتے ہیں۔ ایسے اشخاص بڑے پرنٹ اور شوخ رنگوں والے کپڑوں میں پراعتماد نہیں ہوتے ۔

2۔ کھلاڑی شخصیت:

کھلاڑی عام طورپر اپنے آپ کو بھاگ دوڑ اور ایسے کاموں میں مصروف رکھتے ہیں جس سے ان کو بیٹھنا نہ پڑے انہیں گہرے اور تیز رنگ کے کپڑے پہننا پسند کرتے ہیں۔ موٹے چیک دار، ٹوئیڈ ،گیبرڈین وغیرہ ان کی شخصیت میں اُبھار پیدا کرتے ہیں۔

3۔ ڈرامائی شخصیت:

یہ لوگ بہت پھرتیلے ہوتے ہیں اس لئے ان کے لئے شوخ رنگ اور عام ڈیزائنوں سے ہٹ کر ان کپڑوں کا انتخاب کرنا چاہیے۔ ایسے لوگ اپنے موڈ کے مطابق کپڑے  پہنتے ہیں۔ یہ لوگ نئے فیشن کے کپڑے بہت اعتماد سے پہناتے ہیں۔ اسی لیے انہیں ٹرینڈ سیٹر بھی کہتے ہیں۔

4۔ شرمیلی شخصیت:

یہ لوگ ڈرامائی شخصیت سے سو فیصد مختلف ہوتے ہیں۔ اور اس بات سے خوفزدہ رہتے ہیں کہ وہ کسی جگہ بھی مرکز نگاہ نہ رہیں۔ اسی وجہ سے وہ ایسے ڈیزائن اور فیشن اپناتے ہیں جو بہت عام، آرام دہ ، سادہ اور پرسکون ہوں۔ ایسے اشخاص وہ رنگ پسند کرتے ہیں جو سادہ ،ہلکےا ورمدھم ہوں اور ان پر صرف سرسری نگاہ پڑے۔

5۔ باوقار ،سنجیدہ و متن شخصیت:

ایسے اشخاص طبعاٌ سنجیدہ ،کم گو اور روایتی قدموں کے حامل ہوتے ہیں اور ان کی فطرت میں چلبلا پن نہیں ہوتا۔ لباس کے انتخاب میں ایسے اشخاص نہایت سوبر رنگ اور سادہ تراش خراش والے لباس اپناتے ہیں اور زیادہ آرائش ، سجاوٹ سے اجتناب کرتے ہیں۔ انہیں تیز اور گہرے رنگ اچھے نہیں لگتے ۔

لباس اور وقار میں اضافہ:

باوقار لوگ  عام طورپر کالے،نیلے ،سبز اور دیگر درمیانے رنگوں والے کپڑے پہننا پسندکرتے ہیں، ان کے لباس کی سلائی زیادہ ڈھیلی ڈھالی یازیادہ فٹنگ والی نہیں ہوتی ۔ہلکے رنگوں کے ڈیزائن والے لباس ان کی شخصیت کے وقار میں اضافہ کرتے ہیں۔

6۔ زندہ دل اور شوخ شخصیت:

زندہ دل لوگ زندگی میں عام طور پر روشن پہلو دیکھنے کے عادی ہوتے ہیں۔ ان کو ایسا لباس پہننا چاہیے جس سے ان کی شخصیت میں نکھار پیدا ہو۔ یہ خوش مزاج ،ہنستے اور مسکراتے لوگ اپنی شوخ اور زندہ دل طبعیت کے پیشِ نظر بہت پھر تیلے ہوتے ہیں اس لیے شوخ اور نت نئے ڈیزائن اور خوشنما کشیدہ کاری والے لباس ان کی شخصیت میں نکھار پیدا کرتے ہیں۔

7۔ رسم و رواج کے مطابق لباس کا انتخاب:

انسانی ماحول اور تہذیب و ثقافت کسی ملک کے رسم و رواج پر اثرانداز ہوتے ہیں۔ اس لئے کسی ملک اور علاقے کے رہنے سہنے اوڑھنے اورکھانے پینے کے رسم و رواج مخصوص ہوتے ہیں۔ کسی فرد کے ملک و قوم اور طبقے کا اندازہ اس کے لباس سے لگایا جاسکتا ہے۔

پاکستان کا قومی لباس:

پاکستان کے عوام کا قومی لباس شلوار قمیض ہے۔ پاکستان کے مختلف صوبوں میں رہنے والے لوگوں کا لباس مخصوص ہے اور ایک دوسرے صوبے سے مختلف ہے۔ یعنی پنجاب کے عوام کاقومی لباس خیبر پختونخواہ ، بلوچستان اور سندھ کے عوام سے مختلف ہے جوان کے مختلف تہذیب و تمدن کی وجہ سے ہے۔

3۔ چھ سال سے بارہ سال کی عمر کے بچوں کے ملبوسات کے بارے میں تحریر کریں؟

چھ سال سے گیارہ سال کی عمر کے بچوں کے ملبوسات:

چھ سے گیارہ سال کی عمر کی لڑکیوں اور لڑکوں کے لباس کی ضروریات الگ الگ ہونے کی بناء پر ان کے دو گروپ بنائے جاسکتے ہیں۔

لڑکیوں کے ملبوسات

1۔ لڑکیوں کی جسمانی نشوونما قمیض یا کرتے کا ڈیزائن:

لڑکیوں کے ملبوسات کوان کی جسمانی نشوونما کو مدِ نظر رکھتے ہوئے ڈیزائن کرنا چاہیے۔ ان کی قمیض یا کرتے کوزیادہ موڑ کر ترپائی کرنی چاہیے تاکہ بعد میں لمبائی بڑھائی جا سکے۔ قمیض پر سینے اور کندھوں کے درمیان افقی اور عمودی پلیٹ بھی ڈالے جانے چاہئیں تاکہ بوقتِ ضرورت کھول کر لمبائی اور چوڑائی کو بڑھایا جاسکے۔ کرتے میں یہ خاصیت ہوتی ہے کہ اس کا ناپ جسم کی نشوونما کے بڑھنے سے جسم پر کافی عرصے تک پور ا آسکتا ہے۔

2 ۔ مونڈھے کی تنگ گہرائی اور تنگ فٹنگ والی آستین:

اس عمر کی لڑکیوں میں مونڈھے کی تنگ گہرائی اور تنگ فٹنگ والی آستین آرام دہ نہیں ہوتی کیونکہ یہ کھیل کے دوران رکاوٹ کاباعث بنتی ہے۔

3۔ زیادہ چنٹ یا سجاوٹ والا لباس:

اس عمر کی بچیوں کے لباس میں لیس، چنٹ یا زیادہ سجاوٹ اچھی نہیں لگتی لیکن کبھی کبھار پہناوے والے ملبوسات پر اس کا استعمال کیا جاسکتا ہے۔

4۔ لباس کا سٹائل یا ڈیزائن:

اس عمر کی بچیوں کے لباس کا سٹائل یا ڈیزائن ایسا ہونا چاہیے جو کہ آسانی سے پہنا اور تبدیل کیا جا سکے ۔ ایسے لباس میں پٹی سامنے بنانی چاہیے۔ ایسے لباس میں چھوٹے بٹن،ہک اور زپ کا استعمال نہیں کرنا چاہیے۔

5۔ پائیدار کپڑا:

اس عمر کی بچیوں کے لباس کے لئے کپڑا پائیدار، دھلنے اور استری کرنے میں آسان اور آرام دہ ہونا چاہیے۔

6۔ الاسٹک والے زیرجامے:

اس عمر کی بچیوں میں ہوزری کے بنےہوئے کپڑوں سے تیارکردہ ایسے زیر جامے مفید ہوتے ہیں جن میں الاسٹک  ڈالا گیا ہو اس کی وجہ یہ ہے کہ یہ بہت کم سکڑتے ہیں اور انہیں دھونے کے بعد استری کرنے کی ضرورت نہیں ہوتی۔

7۔ سلائیوں  میں گنجائش:

اس عمر کی بچیوں کے لباس کی سلائیوں میں کافی گنجائش ہونی چاہیے تاکہ یہ سلائیاںملبوسات کو پہننے کے دوران خراب نہ ہوں اور کھیل کے دوران کھینچا تانی اور بھاگ دوڑ سے اُدھڑ نہ سکیں۔

8۔ جاذبِ نظر ڈیزائن:

اس عمر کی بچیوں کے رنگ، ڈیزائن دلکش، جاذبِ نظر اور رنگ پختہ ہونے چاہئیں تاکہ زیادہ دھونے سے وہ خراب نہ ہو سکیں۔

9۔ سوتی اور ریشمی کپڑوں کا استعمال :

اس عمر کی بچیوں کے عام لباس کے لئے سوتی کپڑوں کا استعمال موزوں رہتا ہے۔ لیکن شادی بیاہ کی تقریبات وغیرہ کے لئے ریشمی کپڑوں کا استعمال کیا جاسکتا ہے۔

لڑکوں کے ملبوسات:

اس دور میں لڑکوں کی شخصیت نکھرتی ہے۔ اس عمر کے لڑکوں کے لئے عمر کا یہ دورانیہ بہت خوبصورت ہوتا ہے وہ آزاد اور خودمختار ہونے کی کوشش کرتے ہیں۔ اس لیے اس عمر کے لڑکوں کے لباس کا انتخاب کرتے وقت درج ذیل باتوں کو مدِنظر رکھنا چاہیے۔

1۔ سخت ،موٹے ،اکڑے ہوئے اور بھاری کپڑے:

اس عمر کے لڑکے ایسالباس پہننا پسند کرتے ہیں جس کو پہن کر انہیں بھاگنے دوڑنے اور اُچھل کود کرنے میں آسانی ہو۔ اس لئے تنگ لباس، سخت ، موٹے ،اکڑے ہوئے اور بھاری کپڑے استعمال نہیں کرنے چاہئیں۔

2۔ سادہ ڈیزائن:

اس عمر کے بچوں کے ملبوسات کے ڈیزائن سادہ ہونے چاہئیں اور ان میں کھلا کرنے کی گنجائش ہونی چاہیے اس کے لئے پاجامے اور پتلوں کو زیادہ موڑ کر ترپائی کی جاسکتی ہے اور ملبوسات کی سلائی کو کھولنے کی زیادہ گنجائش ہونی چاہیے۔ اس کے لئے شلوار اور پاجامے کے نیفے کو ذرا چوڑا موڑکررکھنا چاہیے تاکہ بوقتِ ضرورت اسے کھول سکیں اگر نیکر یا پتلوں میں کمر کی پٹی میں الاسٹک (پچھلی طرف ) ہوتو اس سے کافی عرصے تک کمر سے نیکر یا پتلوں تنگ ہوتی اور بدلے بغیر استعما ل کرسکتے ہیں۔

3۔ پختہ رنگ اور سوتی کپڑوں کا استعمال:

اس عمر کے بچوں کے ملبوسات سوتی اور ان کا رنگ پختہ ہونا چاہیے۔ مثلاٌ لٹھا ،کارڈرائے ، زین وغیرہ کو دھوناآسان ہوتا ہے او ر یہ پہننے میں بھی بہتررہتے ہیں۔ اس عمر کے بچوں کے ملبوسات چھوٹے پھولدار پرنٹ ،چیک اور دھاریوں والے ملبوسات استعمال کرنے چاہئیں۔

گرمیوں کے کپڑے:

گرمیوں میں ٹھنڈے اور ہلکے رنگ مثلاٌ نیلے،گلابی، بادامی،کریم اور سفید رنگ وغیرہ۔

سردیوں کے کپڑے:

سردیوں میں گہرے رنگ مثلاٌ نیلے، براؤن، میرون  وغیرہ کا استعمال موزوں رہتا ہے۔

4۔ ڈیزائن اور کپڑوں کے رنگ:

اس عمر میں بچوں کے کپڑے پھٹنے ،داغ دھبے لگنے اور خراب ہونے کے امکانات زیادہ ہوتے ہیں۔ اس لئے ایسے رنگوں، ڈیزائن اور کپڑوں کاانتخاب کرنا چاہیے جو داغ دھبے لگنے کے باوجود استعمال ہو سکیں۔

بارہ سال سے سولہ سال کی عمر کے بچوں کے ملبوسات:

اس عمر کے بچوں میں پسند اور ناپسند کا شعور پیدا ہوجاتا ہے ۔ اور بچے عمدہ لباس کو محسوس کرنے کے ساتھ ساتھ اپنے دوست احباب کی رائے کو بہت اہمیت دیتے ہیں اور اپنے عمر کے بچوں سے بہت متاثر ہوتے ہیں اپنے ساتھیوں جیسا لباس پہننا پسند کرتے ہیں اس لیے ضروری ہے کہ اس عمر کے بچوں کی شخصیت ،قدوقامت اور جسامت کا خیال کرتے ہوئے ملبوسات کے پرنٹ ،ڈیزائن اور رنگ کا خیال کیاجائے۔

4۔ اٹھارہ سے پچیس سال کی نفاست پسند، ڈرامائی اور باقاعدہ شخصیت کی حامل خواتین کا لباس کیسا ہوناچاہیے؟

اٹھارہ سے پچیس سال کی عمر کے ملبوسات:

اٹھارہ سے پچیس سال کی عمر کے افراد کے ملبوسات کی ضروریات بالکل مختلف ہوتی ہیں۔ کیونکہ فیشن اور جدت پیدا کرنے کی یہی عمر ہوتی ہے۔ اس عمر کے بچوں کے ملبوسات کا انتخاب کرتے ہوئے مندرجہ ذیل باتوں کو مدِ نظر رکھنا چاہیے۔

1۔ اس عمر کے بچوں کا لباس ان کے جسمانی خدوخال، ضروریات اور سرگرمیوں کو مدِ نظر رکھتے ہوئے منتخب کرنا چاہیے۔

2۔ اس عمر کے بچوں کے لباس کا رنگ اور ڈیزائن کا استعمال فیشن کی مناسبت سے کرنا چاہیے اور لباس کو اسلامی تقاضوں سے ہم آہنگ ہوناچاہیے۔

3۔ اس عمر کے بچوں کی بھرپور نشوونما ہوتی ہے، اس لئے ان کے لباس کا انتخاب شخصیت ، جسامت، ضروریات اور سرگرمیوں کو سامنے رکھتے ہوئے ضروری ہوتا ہے۔ شخصیت کی مختلف اقسام مثلاٌ نفاست پسند شخصیت ،قوی و مضبوط شخصیت ، باوقار سنجیدہ شخصیت ، ڈرامائی شخصیت ،شرمیلی شخصیت اور زندہ دل و شوخ شخصیت ۔ ان کے لباس کا انتخاب ان کی شخصیت کو مدِ نظر رکھتے ہوئے کرنا چاہیے۔

1۔ نفاست  پسند شخصیت کی حامل لڑکیوں کے ملبوسات:

اس عمر میں لڑکیاں نفاست پسند نازک مزاج ،نسوانیت اورنزاکت سے بھرپور ہوتی ہیں۔ اس لیے ان کے لیے نرم و ملائم کپڑے موزوں رہتے ہیں۔ ہلکے رنگوں میں نازک پرنٹ استعمال ہونے چاہئیں۔ لڑکیوں کی شخصیت کو نمایاں کرنے کےلیے سلائی میں پف دار بازو، چھوٹی چھوٹی خوبصورت ہلکی پھلکی جھالریں، نرم نرم چنٹیں، ہلکی اور نفیس کڑھائی ہونی چاہیے۔

2۔ قوی و مضبوط شخصیت کی حامل لڑکیوں کے ملبوسات:

اس عمر کی لڑکیاں قوی و مضبوط شخصیت کی حامل ہوتی ہیں اس لئے ان لڑکیوں کے لئے درمیانے موٹے، گہرےاور تیز رنگوں میں لکیردار اور چیک دار ڈیزائنوں والے پارچہ جات موزوں رہتے ہیں۔ عام سٹائل کی سلائی ،کف، کالراور جیبوں کا استعمال بہتر رہتا ہے۔ جن پر سادہ مگر خوبصورت کا لر اور کناری دار لیس کا استعمال کیاگیا ہے۔

3۔ باوقار سنجیدہ شخصیت کی حامل لڑکیوں کے ملبوسات:

اس عمرکی حامل لڑکیاں باوقار سنجیدہ شخصیت کی ہوتی ہیں۔ اس عمر کی لڑکیوں کے لیے درمیانہ موٹائی کے مضبوط اور درمیانہ نرمی کے پارچہ جات خصوصی طورپر سوتی اور لینن وغیرہ موزوں رہتے ہیں۔ ان کی شخصیت اور مزاج سے سنجیدہ اور ہلگے رنگ ہم آہنگ ہوتے ہیں۔ ا ن کے ملبوسات میں شوخ رنگوں کا استعمال کیا جاسکتا ہے۔ ان لڑکیوں کے لئے کالے، سلیٹی اور گہرنے نیلے رنگ بہتر رہتےہیں۔

4۔ ڈرامائی شخصیت کی حامل لڑکیوں کے ملبوسات:

اس عمر کی حامل لڑکیاں ڈرامائی شخصیت کی حامل ہوتی ہیں۔اس عمرکی لڑکیوں کے لیے ہر قسم کا موٹا ،پتلا، چمکداریا غیر چمکدار کپڑا موزوں ہوتا ہے۔ نیز ان کے لئے تیز اور نمایا ں قسم کے شوخ رنگ اچھے لگتے ہیں۔ ایسی لڑکیوں کے لئے غیر معمولی قسم کے پرنٹ اور عام رنگ موزوں ہوتے ہیں۔ ان لڑکیوں کے ملبوسات میں چوڑی لائنوں والے ڈیزائن موزوں ہوتے ہیں۔ ان کے لباس میں تھوڑی بہت جھالر اور پیچیدہ قسم کے ڈیزائن اچھےلگتے ہیں۔

5۔ شرمیلی شخصیت کی حامل لڑکیوں کے ملبوسات:

اس عمر کی لڑکیاں عموماٌ شرمیلی شخصیت کی حامل ہوتی ہیں ۔ ان کے لئے سادہ بُنتی کے چھوٹے پھولدار ڈیزائن اور کاسنی ،پستہ اور بے بی پنک رنگ موزوں رہتے ہیں۔ ان کےلئے سادہ اور پرینٹیڈ امتزاج کے چیک یا پڑنٹ کا استعمال بھی ان کے موزوں رہتا ہے۔ سادہ سلائی کالباس ان کی شخصیت کو اُجاگر کرتا ہے۔

6۔ زندہ دل اور شوخ شخصیت کی حامل لڑکیو کے ملبوسات:

اس عمر کی لڑکیاں زندہ دل اور شوخ شخصیت کی حامل ہوتی ہیں اور یہ طبعاٌ شوخ و چنچل ،زندہ دل اور خوش مزاج ہوتی ہیں۔ ان کے لئے سادہ اور عام لباس زیادہ اچھے رہتے ہیں۔ ایسے لباس کے بٹن بند کرنے یا نفاست سے استری کرنے میں انہیں زیادہ وقت نہیں لگتا ۔ ہلکے اور گہرے رنگ مثلاٌ نارنجی، گلابی، کاسنی، گہراسبز وغیرہ کے زندگی سے بھر پور اور رنگا رنگ پرنٹ ان کے لئے موزوں رہتے ہیں۔ ان کے کپڑوں کے ڈیزائن بھی فیشن کے لحاظ سے ہونے چاہئیں۔

5۔ کپڑوں میں ردوبدل کر کے انہیں نیا بنانے کے بارے میں کن تجاویز پر عمل کرنا ضروری ہے؟

آؤٹ فیشن ملبوسات کونیا بنانا:

عام طورپر گھروں میں ایسے بہت سے کپڑے ہوتے ہیں جو آؤٹ فیشن ہونے کی وجہ سے ناکارہ ہوجاتے ہیں ان کو ضائع کرنے کی بجائے اگر ان پر تھوڑی سی لگن سے ان میں ردوبدل کیا جائے تو ا ن کو نیا بنایا جاسکتا ہے۔ پیسہ ضائع کیے بغیر پرانے کپڑوں کو قابل استعمال بنایا جاسکتا ہے۔

پرانے کپڑوں کو فیشن کے مطابق تیارکرنے کے لئے چند تجاویز درج ذیل ہیں۔

1۔ قمیض لمبائی میں تنگ ہو:

قمیض کی لمبائی بہت کم یا تنگ ہونے کی صورت میں اس سے چھوٹے بچوں کا کرتا فراک ،شلوار یا قمیض بنائی جا سکتی ہے۔

2۔ قمیض لمبائی میں کم ہو:

اگر قمیض کی لمبائی کم ہو تو اس کے نیچے اس سے ملتی جلتی لیس یا مختلف رنگوں کی پٹیاں لگاکر اس کو فیشن کے مطابق بنایاجاسکتا ہے جس کے لئے ضروری ہے کہ لیس یا پٹیوں کا استعمال قمیض کے بازو یاگلے پرہوں۔ ا س سے ان میں توازن پیدا ہوگا۔

3۔ قمیض چوڑائی میں تنگ ہو:

اگرقمیض چوڑائی میں تنگ ہے اور اس کی فٹنگ آپ کی جسامت کے مطابق نہ ہوتو اس کے اندر مختلف انداز میں پٹیاں ڈال کر اسے چوڑا کیا جاسکتا ہے۔ اس سے گھیرے دار فراک تیار کیا جاسکتا ہے۔ ان پٹیوں پر کڑھائی بھی کی جاسکتی ہے اور لیس بھی لگائی جا سکتی ہے۔

4۔ کلیوں میں اضافہ:

اس طریقہ کار میں کرے کی چوڑائی زیادہ کرنے کے لئے اس میں کلیوں کا اضافہ کی جاسکتا ہے۔

5۔نیفہ ڈالنا:

اس طریقہ کار میں نیفہ ڈال کر شلوار کی لمبائی کو زیادہ کیا جا سکتا ہے۔ اگر شلوار کے پائنچے تنگ ہوں تو اس صورت میں بھی نیفہ ڈال کر پائنچے چوڑے کیے جاسکتے ہیں۔

6۔ مدھم رنگ کے کپڑوں کو دوبارہ رنگدار بنانا:

اس طریقہ کار میں سادہ قمیض پر باتیک یا ٹائی اینڈ ڈائی کیا جاسکتا ہے وہ کپڑے جن کا رنگ مدھم ہو گیا ہوان کو دوبارہ مختلف رنگ دے کر دوبارہ قابلِ استعمال بنایا جا سکتا ہے۔

7۔ سوٹوں کے دوپٹون سے قمیض تیار کرنا:

مختلف سوٹوں کے دوپٹون سے قمیض یا بچوں کے فراک شلواریں وغیرہ تیار کی جاسکتی ہیں۔

8۔ کام والے کپڑوں میں ردوبدل کرکے کپڑے تیار کرنا:

شادی بیاہ کے کپڑوں یا کام والے کپڑوں میں ردوبدل کر کے انہیں دوبارہ قابلِ استعمال بنایا جا سکتا ہے۔

9۔ پرانی ساڑھیوں سے سوٹ بنانا:

پرانی ساڑھیوں میں ردوبدل کرکے اور کاٹ کر سوٹ بنائے جاسکتے ہیں۔

10۔ پرانے غرارے یا لہنگے سے نئے فیش کے ملبوسات تیا رکرنا:

پرانے غراروں یا لہنگوں میں ردوبدل کرکے مختلف جسامتو ں اور نئے فیشن کے ملبوسات تیار کیے جاسکتے ہیں۔

11۔ کام والے دوپٹوں سے سوٹ تیار کرنا:

سوٹوں کے ساتھ مختلف کام والے دوپٹے ہوتے ہیں، ان میں ردوبدل کرکے ہم رنگ یا متضاد رنگوں کے سوٹ بنائے جا سکتے ہیں۔ پرانے کپڑون کو دوبارہ نیا بنایا جاسکتا ہے۔ اس کے لئے مہارت ،شوق ، کوشش کا ہونا ضروری ہے۔ جس سے پیسوں کی بچت اور خواتین کی سلیقہ شعاری کا پتا چلتا ہے۔

(Introduction to Management) باب 12۔ انتظام کا تعارف

سوالات

سوال1۔ ذیل  میں دے گئے بیانات میں سے ہر بیان کے نیچے چار ممکنہ جوابات دیے گئے ہیں۔ درست جواب کے گرد دائرہ لگائیں۔

1۔ گھریلو انتظام کے کتنے پہلو ہیں؟

(الف)                                                                                                                                                                                                                     ایک                                                                                                                                                                                                    (ب)                                                                                                                                                                         دو                                                                                                      (ج)                                                                                                            تین                                                                                                                                                                                                           (د)                                                                                                                   چار

2۔حکمت عملی ایک ایسا لائحہ عمل ہے جو منصوبوں کو کیا پہناتا ہے؟

(الف)                                                                                                                                                                                                                     عملی جامہ                                                                                                                                                                                                                                                                (ب)                                                                                                                                                                                                          کامیابی                                                                                                      (ج)                                                                                                                                                                                         ناکامی                                                                                                                                                                                                                                                           (د)                                                                                                                   پیش بینی

3۔ انتظام کیسا عمل ہے؟

(الف)                                                                                                                          جسمانی                             (ب)                                                                                                                                                                   ذہنی                                                                              (ج)                                                                                                            پڑتالی                                                                                                                                                                                                           (د)                                                                               کامیاب

4۔ انتظام کس سے محفوظ رکھنے کی ترغیب دیتا ہے؟

(الف)                                                                                                         نااہلی                                                                                                                                                        (ب)                      بدانتظامی                                                                                                                                                      (ج)               کامیابی                                                                                                                                                                                        (د)                                                                                     معاونت

5۔فیصلہ کرنے کے کتنے اقدامات ہیں؟

(الف)                                                                                                                                                                                                                     ایک                                                                                                                                                                                                                                                                  (ب)                                                                                                                                                                                                          دو                                                                                                      (ج)                                                                                                                                                                                         تین                                                                                                                                                                                                                                                           (د)                                                                                                                   چار

6۔ اقدار سے مراد ہمارے کیسے احساسات ہیں جو ہم محسوس کرتے ہیں؟

(الف)                                                                                                           خوشگوار                                                                                                                                                         (ب)                                                           ناخوشگوار                                                                                                               (ج)                                                                                             اہم                                                                                                                         (د)                                                 ناکام

7۔ مقاصد سے مراد ہماری ایسی خواہشات ہیں جن کے حصول کی خاطر کیا درکار ہوتا ہے؟

(الف)                                                                                                           جدوجہد                                                                                                                                                             (ب)                                                                           محنت                                                                                            (ج)                                                                                                      احساس                                                                                                                                                             (د)                                                                                           سکون

8۔معیارِ زندگی خواہشات کا کیا ہیں جن کا حصول زندگی کی تسکین ،اطمینان اور خوشی کے لئے ضروری ہوتا ہے ؟

(الف)                                                                                                           کام                                                                                                                                      (ب)                                                                                                مجموعہ                                                                                            (ج)                                                                   خواہش                                                                     (د)                                         حصول

9۔ اقدار کی کتنی اقسام ہیں؟

(الف)                                                                                                           دو                   (ب)                                                              تین                                                                                     (ج)                                                                       چار                                                          (د)                                            پانچ

10۔ اقدار کا ہماری زندگی سے کیسا تعلق ہونے کا ثبو ت ملتا ہے؟

(الف)                                                                                                           گہرا                                                                                                                                                             (ب)                                          پوشیدہ                                                                                    (ج)                                                                                 پسندیدہ                                                                                       (د)                                          ناپسندیدہ

11۔کن مقاصد کے حصول کے لئے مدت یا وقت کا کوئی تعین نہیں ہوتا؟

(الف)                                                                                                           فوری                                                                                                   (ب)                      غیرمعینہ                                                                                  (ج)                 معینہ                                                                 (د)                    تکمیل

12۔ مقاصد کا تین کیسا عمل ہے؟

(الف)                                                                                                                                   مسلسل                                                   (ب)                                                                       اہم                                                                                                      (ج)                                                                                                                                    غیر اہم                         (د)                                                                                                                   فوری

13۔ انسانی زندگی کے اجزاء کے لئے ذرائع و وسائل کیسا مقام رکھتےہیں؟

(الف)                                                              کم اہم                                                                                                      (ب)                                                                                                                                     اہم ترین                                                                              (ج)                                                                                                            بہترین                                                                                           (د)                                                                               خوشگوار

14۔ ذرائع و وسائل کی کتنی اقسام ہیں؟

(الف)                                                                                                         ایک                                                                              (ب)                      دو                                                                                                                                                          (ج)               چار                                                                                                                                                                                        (د)                                                                                     پانچ

15۔وقت کی تعریف کرنا نہایت مشکل مگر اس کے پیمائش کرنا کیسا ہے؟

(الف)                                                                                                       آسان                                                               (ب)                                                                  دیرپا                                                           (ج)                                                              اہم                                                                                                                          (د)                                غیر اہم

16۔ روپے پیسے کی اہمیت سے کیا نہیں کیا جاسکتا ؟

(الف)                                                                                                          اقرار                                                                                                                                                         (ب)                                                           انکار                                                                            (ج)                                                                                             کام                                                              (د)                                                 ضرورت

17۔ آمدنی کے انتظام کا عمل کیا ہوتا ہے؟

(الف)                                                                                                           افرادخانہ                                                                                                                                                                                                                               (ب)                            گروہی                                                                                            (ج)                                                                                                      مقصدی                                                                                                                                                           (د)                                                                                           انفرادی

18۔ آمدنی کے انتظام کے رہنما اقدامات کتنے ہیں؟

(الف)                                                                                                           تین                                                                                                               (ب)                                                                                                چار                                                                                               (ج)                                                                    چھ                                                                     (د)                                         سات

19۔آمدنی اور اخراجات کی صحیح تصویر کشی کس کے ذریعے ہوسکتی ہے؟

(الف)                                                                                                           بجٹ                                                                                                               (ب)                                                              اخراجات                                                                                      (ج)                                                                       توازن                                                          (د)                 غیر متوازن

20۔ کن ذرائع ووسائل میں قوت و توانائی ایک بہت بڑا ذریعہ ہے؟

(الف)                                                                                                           انسانی                                                                                                                                                             (ب)                                         غیرانسانی                (ج)                                                                                 توانائی                                                                                   (د)                                          آمدنی

21۔ قوت و توانائی کے صحیح استعمال کے اقدامات سے ہم کس طرح محفوظ رہ سکتے ہیں؟

(الف)                                                                                                           ذہنی و جسمانی تھکاوٹ                                                                                                                                                             (ب)                                          کام                                                                                   (ج)                                                                                 مناسب استعمال                                                                                   (د)                                          ذہنی کیفیت

22۔ قوت کا انتظام کتنے مقاصد پر مشتمل ہوتا ہے؟

(الف)                                                                                                                                                                                                                     تین                                                                                                                                                                                                                                                       (ب)                                                                                                                                                                                                          چار                                                                                               (ج)                                                                                                                                                                                         پانچ                                                                                                                                                                                                                                                         (د)                                                                                                                   چھ

     جوابات: (1-ج)(2-الف)(3-الف)(4-ب)(5-ج)(6-الف)(7-الف)(8-ج)(9-ب)(10-الف)(11-الف) (12-الف)(13-ب)(14-ب)(15-الف)(16-ب)(17-ب)(19-الف)(20-الف) (21-الف)(22-د)

سوال 2۔ مختصر سوالات کے جوابات تحریر کریں۔

1۔ انتظام کی تعریف کریں؟

انتظام سے مراد “اپنے استعمال کی چیزوں ،روپےپیسے ،وقت و قوت کو شعوری یا لاشعوری طورپر استعمال کرنے، خرچ کرنے اور رکھنے کے طریقوں سے ہے”۔

2۔ گھریلو انتظام سے کیا مراد ہے؟

گھریلوانتطام سے مراد” خاندانی مقاصد کے حصول کے لئے ذرائع و وسائل کی منصوبہ بندی کرنے ، اس منصوبہ بندی پر پابندی سے کاربندر ہنے اور نتائج کی تنقیدی جانچ پڑتال کرنے سے ہے یا پھر ذرائع آمدنی کے مطابق اپنی ضروریات کی منصوبہ بندی کرنا، اسے کنٹرول کرنااور اس کے نتائج پر غور کرنا تاکہ خاندانی مقاصدحاصل ہوسکیں۔

3۔ اقدار کی تعریف کریں؟

اقدار ہماری زندگی میں اولین اہمیت کی حامل ہیں۔

4۔ مقاصد سے کیا مراد ہے؟

مقاصد سے مراد”ہماری ایسی خواہشات ہیں جن کے حصول کی خاطر ہمیں جدوجہد کرنا ہوتی ہے اور جس کے حصول کے لئے ہم اپنے وسائل او ر ذرائع کو استعمال کرتے ہیں تاکہ کام پایہ تکمیل تک پہنچ سکے”۔ مقاصد کے حصول کے لئے کم مدت یا زیادہ مدت درکار ہوتی ہے۔

5۔ معیارِ زندگی کی تعریف کریں؟

معیارِ زندگی:

“معیارِ زندگی خواہشات کاوہ مجموعہ ہوتا ہے جن کا حصول زندگی کی تسکین ،اطمینان اورخوشی کے لئے ضروری ہوتا ہے”۔

6۔ اقدار کی کیا اہمیت ہے؟

اقدار کی اہمیت:

ہمارے وہ خوشگوار احساسات جو ہم محسوس کرتے ہیں۔ یہ محسوسات جو فردیا خاندان اپنے اندازِ فکر اور تجربات سے حاصل کرتا ہے اس کی “قدر”کہلاتے ہیں۔اقدار ہماری زندگی میں اولین اہمیت کی حامل ہیں۔ لیکن ہر اچھا یا برا احساس قدر نہیں کہلاتا۔ قدر صرف ان احساسات کا نام ہے جو انسان کو یا خاندان کو فرحت بخشتے ہوں جن کی ہمیں قدردانی ہویا جو ہمیں پسند ہوں اور جو ہمارے لیے اہم ہوں۔

7۔ مقاصد کی کتنی اقسام ہیں؟

ا۔ فوری مقاصد

ب۔ معینہ مدت کے مقاصد

ج۔ غیرمعینہ مدت کے مقاصد

8۔ ذرائع و وسائل کے انتظام سے کیا مرا د ہے؟

ذرائع ووسائل سے مراد ایسے اثاثے اور طریقہ کار ہیں جن کا استعمال ہمارے مقاصد کی تکمیل کے لیے ضروری ہے۔

9۔ کام کو آسان اور سادہ بنانے کے کتنے عوامل ہیں؟

کام کی جگہ ترتیب دینے سے نہ صرف کام جلد ہوجاتا ہے بلکہ قوت و دانائی اور دقت کی بھی بچت ہوتی ہے۔

10۔ بجٹ سے کیا مراد ہے؟

بجٹ سے مراد نقد آمدنی اور اخراجات کا تخمینہ لگانے سے ہے تاکہ آمدنی اور اخراجات میں توازن پیدا کیا جاسکے۔

11۔ قوت و توانائی کی تعریف کریں؟

قوت و توانائی دوطرح کی ہوتی ہے یعنی جسمانی اور ذہنی۔

12۔ قوت کے انتظام سے کیا مراد ہے؟

قوت کا انتظام تین بڑے مقاصد پر مشتمل ہوتا ہے مثلاٌ قوت کا انتظام بہتر طریقے سے کرنا، کام کے اختتام پر اس میں قوت کا موجود ہونا، اس کے علاوہ قوت کا کچھ حصہ محفوظ ہونا وغیرہ۔

سوال 3۔ تفصیلی سوالات کے جوابات تحریر کریں۔

1۔ انتظام کے عوامل پر نوٹ لکھیں؟

خانہ داری کا انتظام:

اثاثوں کا ایسے طریقے سے استعمال کرنا جن سے خواہشات کی تکمیل ہو سکے خانہ داری کا انتظام کہلاتا ہے ہوم اکنامکس کے مختلف ماہرین نے خانہ داری کے انتظام کی مختلف انداز میں تعریف کی ہے۔ سادہ ترین الفاظ میں اس کی تعریف یوں کی جاسکتی ہے کہ “اثاثوں کا ایسے طریقے سے استعمال کرنا جن سے خواہشات کی تکمیل ہوسکے۔” اس تعریف میں اثاثون سے مراد وہ چیزیں ہیں جو گھر کے افراد کو میسر ہوں۔

ذرائع ووسائل:

وقت، قوت ،روپیہ پیسہ ، تمام گھریلو اشیاء ، علم ،مہارتیں اور صلاحیتیں وغیرہ یہ تمام اشیاء ہماری زندگی میں اولین حیثیت رکھتی ہیں اگر یہ چیزیں اہلِ خانہ کو میسر نہ ہوں تو زندگی مفلوج ہو جاتی ہے۔ انہیں ذرائع و وسائل کہاجاتا ہے۔

خواہشات:

انفرادی یا خاندان کی وہ تمام ضروریات اورتمنائیں جن کے حصول کے لئے گھر کے افراد کام کرتے ہیں۔ مثلاٌ جائیداد بنان، گھر بنانا، ٹی وی خریدنا، بچوں کو تعلیم دلوانا، معیار ِزندگی بلندکرنا، شادی بیاہ کرنا یا ایسی ہی بے شمار خواہشات ہوتی ہیں جن کو پورا کرنے کے لئے خاندان کے افراد محنت اور کوشش کرتے ہیں ان خواہشات کو مقاصد کہتے ہیں۔

گھریلوانتظام:

مقاصد کی تکمیل کے لئے ذرائع او روسائل کا استعمال کرنا انتظام کہلاتا ہے۔ انتظام کا عمل انفرادی بھی ہوسکتا ہے۔ اور اجتماعی بھی۔ جب یہ عمل گھر کے ذرائع ووسائل کے استعمال کے لئے کیا جاتا ہے تو گھریلو انتظام کہلاتا ہے۔

نکل اینڈ ڈورسل کے مطابق تعریف:

نکل اینڈ ڈورسل کے مطابق گھریلو انتظام سے مراد “خاندانی مقاصد کے حصول کے لئے ذرائع ووسائل کی منصوبہ بندی کرنے، اس منصوبہ بندی پر پابندی کرنے، اس منصوبہ بندی پر پابندی سے کاربند رہنے اور نتائج کی تنقیدی چانچ پڑتال کرنے سے ہے یا پھر ذرائع آمدنی کے مطابق اپنی ضروریات کی منصوبہ بندی کرنے انہیں کنٹرول کرنے اور ان کے نتائج پر غور کرنے سے ہے تاکہ خاندانی مقاصد حاصل ہوسکیں۔

گراس اینڈ کرینڈل کے مطابق تعریف:

کراس اینڈ کرینڈل کے مطابق”گھریلوانتظام کا عمل فیصلوں کی ایسی سلسلہ وارکڑی پر مشتمل ہے جو خاندانی ذرائع ووسائل کے استعمال و جدوجہد کے لئے لائحہ عمل مرتب کرنے میں مدددیتا ہے تاکہ خاندانی مقاصد کی کامیابی سے حاصل ہو سکیں “۔ اس کے تین پہلو ہیں مثلاٌ

ا۔ منصوبہ بندی کرنا۔

ب۔ منصوبہ بندی کےدوران مختلف عوامل پر قابو رکھنا۔

ج۔ منصوبہ بندی کے نتائج پر غورو خوض کرنا اور آئندہ کےلئے لائحہ عمل تیار کرنا۔

انتظام کا عمل:

انتظام اور گھریلو انتظام کے لئے درج ذیل عوامل ضروری ہیں۔

1۔ منصوبہ بندی یا پیش بینی:

منصوبہ بندی ایک ذہنی عمل ہے جس پر عمل کرنے کے لئے طریقوں اور راستوں کی تقش بندی کی جاتی ہے  تاکہ چھوٹی بڑی منزلوں تک رسائی ممکن ہو سکے۔ منصوبہ بندی سے مراد ایسی سوچی سمجھی تدابیر ہیں جن پر عمل کے کے افراد ،کنبہ یا گروہ اپنے کم مدت اورلمبی مدت کے مقاصد کو حاصل کرنے کے لئے خواہاں ہوتے ہیں یا یہ مستقبل کے لئے ایسے منصوبوں کی پیش بینی کرتی ہے جن پر عمل کرنا آسان ہوتا ہے۔

2۔ حکمت ِ عملی یا انضباط:

حکمت عملی سے مراد منصوبوں کو عملی جامہ پہنانا ہے جوان تمام انفرادی یا اجتماعی کوششوں اور جدوجہد پر مشتمل ہے جس کے مطابق منصوبہ بندی کی جاتی ہے جس سے مقاصد کا حصول کامیابی سے ممکن ہوسکے۔

3۔ انضباط:

انضباط سے مراد ایسا طرزِ عمل ہے جو کام کی مقدار، معیار اور کارکردگی کو منصوبے کے مطابق رکھتا ہے اور ایسی تدابیر کرتا ہے جس سے طے شدہ مقاصد کا حصول ممکن ہو سکے۔ یعنی یہ منصوبہ بندی پر عمل پیرارہنے اور عمل کے دوران دوسری خواہشات ،ضروریات اور اخراجات پر ضبط رکھنے میں معاون ہوتا ہے تاکہ منصوبہ بندی ناکام نہ ہو۔ اس کے لئے درج ذیل عوامل پر کاربند ہونالازمی ہے۔

انتظام کے عوامل:

ا۔تنظیم یعنی کام کرنا اور اس پر عمل کرنا اور کام بانٹنا۔

ب۔ نگرانی سے گھریلو امور کی دیکھ بھال ،عمریا وقت اور قوت و اہلیت کے مطابق کام سونپنا اور اس پر عمل کرنا ،ہدایا ت جاری کرنا، ترتیب دینا اورروابط پیداکرنا۔

ج۔ ہدایات کام پر اُکسانا ،کام کی ترغیب دینا اور کام کی طرف مائل کرنا۔

د۔ رابطہ  کے ذریعے افرادِ خانہ کے مشاغل میں تعلق پیدا کرنا، کام کرنے والوں کے جائز مطالبات کو تسلیم کرنا،کاموں کے لئے لوگوں سے رابطہ رکھنا جس سے کام وقت پر ختم ہوسکے۔

جائزہ لینا:

جائزہ لینا، پرکھنے اور جانچ پڑتال کا ہونا ہوتا ہے جو مستقبل کے لئے رہنمائی کا سبب بنتا ہے تاکہ اگلی منصوبہ بندی میں نقائص اور خامیاں نہ ہوں۔ اس عمل سے مقاصد کے حصول میں کامیابی اور ناکامی کی پیمائش ہوتی ہے۔اس پیمائش سے مقاصد کا تعین کرنا آسان اور سہل ہوجاتا ہے اور کام میں اصلاح ہوتی ہے۔ ہم گھریلو نظم ونسق میں منصوبے کی کامیابی یا ناکامی کا جائزہ اس بات سے لگا سکتے ہیں کہ منصوبے کی تکمیل سے خاندان اپنے مقاصد اور منزل کے حصول میں کتنا کامیاب ہوا ہے۔ یہ مقاصد اور نصب العین جتنے زیادہ واضح ہوں گے ان کا جائزہ لینا اتنا ہی آسان ہو گا۔

2۔انتظام کی اہمیت بیان کریں؟

انتظام سے مراد:

ہم جانتے ہیں کہ جہاں کہیں دویا زائد افراد کرتے ہیں یا کام کررہے ہوتے ہیں وہاں چند فوائد کے ساتھ ساتھ بیشتر اعتراضات بھی ہوتے ہیں ۔ ایک ہی گھر میں مختلف اشخاص کی طبعیت، مزاج، ضرورت ،مشاغل اور تقاضے ایک دوسرے سے مختلف ہوتے ہیں۔ اگر ان ذرائع کو احتیاط سے اور سوچ سمجھ کر استعمال نہ کیا جائے تو مقاصد کا منزل تک پہنچنا ابتداء ہی میں مشکل ہوتا ہے۔ جیسے کہ اگر کسی بچے کا ڈاکٹر بننے کا ارادہ ہے۔ اس کی فیس کا بندوبست مشکل سے ہوتا ہے یاو ہ پڑھائی کی طرف توجہ یا وقت نہیں دیتا یا ذہنی طور پر کمزو ر ہے تو میڈیکل تو بہت دور کی با ت ہے وہ بمشکل چند شروع کی جماعتیں ہی پڑھ سکے گا۔ اس کے حل کے لئے عقل مندی ،سوجھ بوجھ اور صحیح فیصلوں کی انتہائی ضرورت ہے۔ یہی تمام اقدام و انتظام کا تقاضا ہوتے ہیں اور انتظام کی اہمیت یہ ہے کہ

انتظام کی اہمیت:

1۔ انتظام بدانتظامی سے بچنے کی کوشش ہوتی ہے۔

2۔ انتظام قلیل و محدود ذرائع میں مقاصد حاصل کرانے میں مدد گار ہوتا ہے۔

3۔ انتظام خوشحالی  و کامیابی کی ضمانت دیتا ہے۔

4۔ انتظام افراد کو ہمہ وقت اپنے موجودہ ذرائع ووسائل کو استعمال کرنے اور ان کے ذریعے مزید وسائل میں اضافہ کرنے کی ترغیت دیتا ہے۔

5۔ انتظام خود عمل نہیں کرتا بلکہ یہ افراد خاندانوں کے لئے عمل کی وجہ بنتا ہے۔

6۔ انتظام کا تعلق چونکہ مقاصد کے حصول کے لئے ذرائع ووسائل استعمال کرنے سے ہے اس لئے اس کا ہر عمل ذہنی عمل ہوتا ہے جس میں فیصلے ،منصوبہ بندی ،مقاصد کا تعین اور عمل درآمد کرنے کے طریقے شامل ہوتے ہیں۔

3۔ فیصلہ کرنے کے اقدامات کون کون سے ہیں؟

فیصلہ کرنے کے اقدامات درج ذیل ہیں۔

1۔ مسئلے کا تجزیہ:

مسئلے کے تجزیے کے لئے لازمی ہے کہ یہ ذہن میں لازمی ہو،تاکہ اس مسئلے کے حل کی ضرورت اور اس کی اہمیت کا احساس پیدا ہو سکے اور اس کو پوری لگن سے حل کرنے کی کوشش کی جاسکے یعنی اس کے پیدا ہونے کی وجوہات اور محرکات کے بارے میں عمل ضروری ہے۔

2۔ مسئلے کا حل تلاش کرنا:

مسئلے کے حل کے لئے ہر طرح کے ذرائع ووسائل ،طریقہ کاراور ہر ممکن عمل شامل ہوسکتا ہے۔ مثلاٌ روپے پیسے کی کمی کا مسئلہ حل کرنے کے لئے۔

ا۔ بچوں کو ٹیوشن پڑھانا

ب۔ دفتر میں اوور ٹائم لگانا

ج۔چیزوں کو اپنی مہارت اور ہنر سے گھر پر بناکر فروخت کرنا

د۔ سلائی، کڑھائی کرنا وغیرہ

3۔ مسئلے کے حل کے مطابق عمل کرنا اور جائزہ لینا:

مسئلے کے حل کی چند خصوصیات درج ذیل ہوتی ہیں۔

ا۔ اپنے سامنے موجود حل کا الگ الگ سوچ سمجھ سے مطالعہ کرنا۔

ب۔ نتیجے کا تصورکرنا اس طرح یہ مرحلہ تصوراتی مرحلہ ہوتا ہے جس میں انسان خود کو اس حل کے نتیجے پر پہنچاتا ہے۔ گویا یہ مرحلہ سوچ سمجھ اور انتخاب و تردید پر مبنی ہوتا ہے۔

4۔ اقدار کی اقسام کے بارے میں لکھیں؟

اقدار کی اقسام:

اقدار کی درج ذیل تین اقسام ہیں۔

1۔ بنیادی یا جبلتی اقدار:

یہ اقدار ہر انسان کے اندر فطری طور پر موجود ہوتی ہیں اور یہ دوسری اقدار پر اثرانداز نہیں ہوتیں مثلاٌ خوبصورتی ، ایمانداری ،سچائی وغیرہ۔

2۔ تعمیری یا مقاصدی اقدار:

ان میں ایسی اقدار شامل ہیں جو دراصل مقاصد کی حیثیت رکھتی ہیں یا مقاصد میں تبدیل ہو جاتی ہیں مثلاٌ مہارتیں، قابلیتیں ، صلاحیتیں او ر تنظیم وغیرہ۔ یہ اقدار گھر کی معاشی فلاح اور معیار زندگی کو بہتر بنانے کا ذریعہ بنتی ہیں۔

یہ جبلتی اقدار کی طرح متعدد دوسری اقدار ملوث ہوتی ہیں۔ جیسا کہ عام طور پر ایک قدر ہے اس کو حاصل کرنے کا انحصار اس فرد یا کنبے کی ایمانداری اور سچائی کی اقدار پر ہے۔ یعنی ایک قدر کسی دوسری قدر پر انحصار کرتی ہے۔

3۔ دونوں اقدار کا امتزاج:

اقدار کی یہ قسم دونوں اقدار کی خصوصیات کی متحمل ہوسکتی ہے۔ یہ اپنی ذات کے لئے بھی اہم ہوتی ہے اور اس کے ذریعے دوسری اقدار یا مقاصد تک رسائی ہو جاتی ہے۔

افرادِ خانہ فلاح و بہبود:

جیسا کہ محبت ، صحبت، آرا م و تسکین، تعلیم ،عقلمندی ، تفریحات، آرٹ، مذہب وغیرہ۔ یہ تمام اقدار مل کر گھر کی فلاح و بہبود اور بہتر نظام جیسی اقدار کو سودمند انتخاب اور فیصلے کرنے میں رہنمائی کی اہمیت رکھتی ہیں۔

گھریلو زندگی کے آغاز کے لئے اقدار:

میاں بیوی گھریلو زندگی کا آغاز کرتے وقت جو اقدار استوار کرتے ہیں وہ انتہائی اہم ہوتی ہیں۔کیونکہ ان اقدار کے مشترک ہونے سے افرادخانہ کے آپس میں تعلقات استوار ہوتے ہیں اور ان سے ایک دوسرے کے ساتھ رہن سہن کے طریقے متعین کیے جاتے ہیں۔

پارکر کے مطابق اقتدار:

پارکر کی رو سے مشترکہ طور پر مانی ہوئی اقدار جو انسانی ،رویوں اور زندگی گزارنے کے طریقوں کو ایک خاص رنگ عطا کرتی ہیں۔ اور ہر خاندان ، فرد اور معاشرے میں موجود ہوتی ہیں یہ اقدار درج ذیل ہیں۔

1۔ محبت:

کوئی انسان دنیا میں اکیلا نہیں رہ سکتا اور ہر شخص ایک دوسرے کے پیار کا خواہاں ہوتا ہے۔ مثلاٌ والدین بہن بھائی، عزیزو اقارب ،ملک و قوم اور انسانیت  وغیرہ سے محبت۔

2۔ آرام:

ہر شخص زندگی میں آسائشوں ،ذہنی سکون اور آرام کا خواہاں ہوتا ہے۔

3۔ صحت:

اس میں جسمانی ،ذہنی و نفسیائی صحت شامل ہے۔

4۔ علم و دانش:

ہر شخص کی یہ خواہش ہوتی ہے کہ وہ دوسرے اشخاص پر اپنی عقل و دانشمندی اور علم کی وجہ سے برتری حاصل کرے۔

5۔ کامیابی:

ہر شخص اپنی کامیابی و کامرانی کے لئے کوشش کرتا ہے۔

6۔ مہارت:

کسی کام کو مہارت سے کرنا اور ہرچیز کو صحیح طریقے اور مہارت سے استعمال کرنے کا ہنر اور فن اور استعداد اہمیت رکھتے ہیں۔

7۔ فنون لطیفہ:

فنون لطیفہ  کو بڑی اہمیت حاصل ہے مثلاٌ خوبصورتی کو ہماری زندگی میں بہت بڑ امقام حاصل ہے۔

8۔ مذہب:

مذہب اچھائی اور نیکی میں دلچسپی اور برائی میں فرق کی تلقین کرتا ہے۔

9۔ کھیل و تفریحات:

اس میں تخلیقی و تخیلاتی مشاغل اور تفریحات شامل ہیں۔

10۔ پختہ یقین:

پختہ یقین ہر شخص میں موجود رہتا ہے جبکہ اس پر اعمل درآمد رویوں کا انحصار اس کی اپنی اقدار پر مشتمل ہوتا ہے۔

5۔ ذرائع ووسائل کی اقسام بیان کریں؟

ذرائع ووسائل کا انتظام:

انسانی زندگی کے اجراء کے لئے ذرائع ووسائل اہم ترین مقام رکھتے ہیں اوران کے بغیر زندگی کی بحالی یا برقراری مشکل بلکہ ناممکن ہوتی ہے۔ بلکہ یہ کہنا بے جانہ ہوگا کہ انسانی زندگی کا دارومدار ذرائع ووسائل پرہوتا ہے۔ ذرائع ووسائل سے مراد”ایسے اثاثے اور طریقہ کار ہیں جن کا استعمال ہمارے مقاصد کی تکمیل کے لئے ضروری ہوتا ہے”۔ یا” ایسی سہولتیں ہوتی ہیں جن کو مقاصد کے حصول کے لئے بروئے کار لانا ضروری ہوتا ہے۔”

ذرائع ووسائل کی اقسام:

ذرائع ووسائل کی درج ذیل د واقسام ہیں۔

1۔ انسانی یا غیر مادی ذرائع ووسائل:

وہ ذرائع جو پیدائشی  طور پر انسان کے ساتھ ہوتے ہیں اور اس کے اندر انسانی قوتوں کے طورپر جنم لیتے ہیں۔ یہ انسانی حدود میں ہوتے ہیں۔ یہ غیر مادی ہونے کی بناء پر چھوئے یا دیکھے نہیں جا سکتے ۔ یہی وجہ ہے کہ انہیں غیر مادی ذرائع ووسائل کہتے ہیں۔مثلاٌ قوت ،مہارت، علم اور وقت وغیرہ۔

6۔ وقت کے انتظام پر اثرانداز ہونے والے عوامل کیونکر ضروری ہیں؟

وقت کے انتظام سے مراد:

وقت کے انتظام سے مراد کا کاج کے ایسے طریقے اختیار کرنا ہے جو اس مخصوص کام کے لئے وقت کے ضائع کرنے میں مددگار ہوتے ہیں۔ اس سے تھوڑے وقت میں زیادہ کرنے کے ساتھ ساتھ وقت کی بچت بھی ہوتی ہے اور اس سے آرام اور تفریح کا موقع بھی مل جاتا ہے۔

وقت پر اثرانداز ہونے والے عوامل:

وقت کی کمی اور اصراف  کا انحصار درج ذیل عوامل پر ہوتا ہے۔

1۔ مختلف مشاغل بہت اہم ہوتے ہیں:

جیسے  کہ پکوائی، دھلائی اور صفائی وغیرہ۔

2۔ خاندانی زندگی کے مراحل:

خاندانی زندگی کے مختلف مراحل ہوتے ہیں جو کہ بچں کی پیدائش سے لے کران کی تعلیم ،نوکری، شادی بیاہ اور بڑھاپے پر مشتمل ہوتے ہیں۔

3۔ افرادِخانہ کی عمر:

مختلف افرادِ خانہ ایک دوسرے پر انحصار کرتے ہیں۔ مثلاٌ اپنے والدین پر انحصارکرتے ہیں جوبعد میں بالغ ہو جاتے ہیں اور پھر اپنی ضروریات خود پوری کرنے کے قابل ہوجاتے ہیں۔

4۔ افرادخانہ کی تعداد:

مختلف خاندانوں میں افرادِخانہ کی تعدا د مختلف ہوتی ہے او ر خاندان میں افراد زیادہ ہونے کی وجہ سے مختلف کاموں کی فراوانی ہوتی ہے۔

5۔ آمدنی ،آسائش:

خاندان کے افراد مختلف کام سرانجام دے کر اپنی آمدنی میں اضافہ کرتے ہیں جس سے وہ مختلف آسائشیں اور آرام حاصل کرتے ہیں۔ آمدنی کم ہونے کی صورت میں کام خود کرنا پڑتا ہے یا مددگار ملازم رکھ کرکام کا بوجھ ہلکا کیا جاتا ہے۔ بازار سے تیار شدہ اشیاء خریدی جاتی ہیں خودسینے کی بجائے درزی سے سلوائے جاتے ہیں یا ریڈی میڈ کپڑے پہنے جاتے ہیں۔

6۔ کام کرنے کے بارے میں لوگوں کے رویے:

بعض لوگ کام کی اہمیت کے لحاظ سے وقت کی قدرکرتے ہیں اور کام کوچندگھنٹوں میں سرانجام دیتے ہیں لیکن بعض لوگ کام کو کئی گھنٹوں میں سرانجام دیتے ہیں لیکن بعض لوگ کام کو کئی گھنٹوں میں مکمل کرتے ہیں۔

7۔ وقت کی منصوبہ بندی کے آلات تحریر کریں؟

وقت کی منصوبہ بندی کے آلات:

وقت کی منصوبہ بندی میں کچھ آلات مددگارثابت ہوتے ہیں۔ یہ کام کوآسان اور سادہ طریقے سے کردیتے ہیں۔ یہ آلات مندرجہ ذیل ہیں۔

1۔ کام کی اکائی:

کام کی وہ تعداد جو ایک شخص عام حالات میں ایک گھنٹے میں مکمل کرسکتا ہے۔ کسی کام کے مختلف حصوں کو سرانجام دینے کے لئے ایک بنیادی معیاری پیمانہ ہوتا ہے۔ کام کرنے کے لئے جس قدروقت درکار ہوتا ہے اس کو ماپاجا سکتا ہے۔

بنیادی مقاصد:

اس کا بنیادی مقصد یہ ہے کہ ایسے کام ایک ہی وقت میں کرلیے جائیں جن کی تکمیل میں برابر وقت درکار ہوتا ہے۔ مثلاٌ گوشت یا سبزی کو چولہے پر چڑھا کر کپڑوں کی دھلائی کرلی جائے یا کپڑوں کو استری کر لیاجائے۔

2۔ بوجھل اوقات:

بوجھل اوقات سے مراد متعدد کاموں کا دن بھر ہفتے یا مہینے کے کسی خاص حصے میں یوں جمع ہوجانا ہے کہ وقت کی شدید کمی کا سامنا کرناپڑے۔ کاموں کی یہ بھرمار دووجہ سے ہوتی ہے۔

ا۔ کام کا اکٹھے ہوجانا:

مختلف کاموں کوسرانجام دینے کے لئے ایک مخصوص وقت درکار ہوتا ہے جوکہ دن یا ہفتے کے کسی خاص حصے میں سرانجام دیا جاسکتا ہے۔ اس خاص وقت میں بہت سے کام اکٹھے ہوجاتے ہیں۔ جیسے صبح کے وقت جب خاتون ِخانہ کو مختلف افراد خانہ کواور بچوں کے لیے ناشتہ تیار کرنے سکول و کالج اور دفتر وقت پر بھیجنے کے لئے انتہائی بوجھل وقت ہوتا ہے۔

ب۔ کام کو ملتوی کرنا:

کم وقت کی بناپر کچھ روزمرہ کام کو آئندہ ہفتے یا چھٹی کے دن کے لئے ملتوی کردیا جاتا ہے۔ یہ متعدد مشاغل وقت کو بوجھل بنادیتے ہیں۔

کام کے بوجھ کو ہلکاکرنے کے لئے مندرجہ ذیل طریقے اختیار کرناچاہئیں۔

1۔ اگرروزانہ کے کاموں ک جلدی اور صبح شروع کیا جائے تو کام جلدی ختم ہوجاتے ہیں۔

2۔ روزمرہ کاموں کا کچھ حصہ بیشتر ہی مکمل کرنے سے بوجھل لمحات کو کم کیا جاسکتا ہے۔ دو تین دن کا گوشت گلالیاجائے،دو تین دن کا مصالحہ اکٹھا بنالیا جائے، لہسن پیاز وغیرہ کو پیس کر رکھ لیاجائے تو بوجھ ہلکا ہو جاتا ہے۔

3۔ آلات کی مدد سے کام کو سادہ اور آسان بنایا جاسکتا ہے۔

4۔ وقتی ملازم/ملازمہ رکھنے سے زیادہ قت والے کام ان سے کروا کر بوجھل وقت کو کم کیا جاسکتا ہے۔ ملازم کی بجائے دوسرے افرادِ خانہ کے ذمے بھی مختلف کام لگائے جاسکتے ہیں۔

8۔ آمدنی سے کیا مرا د ہے۔ خاندانی ضروریات کو پورا کرنے میں آمدنی کے انتظام کا کیا طریقہ کار ہے؟

آمدنی سے مراد:

آمدنی سے مراد عام طور پر صرف روپیہ پیسہ سمجھا جاتا ہے۔ روپے پیسے کی بہت زیادہ اہمیت ہوتی ہے جس سے انکار ممکن نہیں۔

گھریلو آمدنی:

روپے پیسے ،خدمات ،اشیاء ، سامان کا ایسااجریارواں سلسلہ جس کا انضباط کنبے کے اختیار میں ہوتا ہے۔ وہ اسے حسبِ منشا استعمال کرکے اپنی ضروریات اور خواہشات کی تکمیل کرسکے ۔ گھریلو آمدنی کہلاتا ہے۔

آمدنی ایک اہم ترین ذریعہ:

آمدنی ایک ایسا اہم ترین ذریعہ ہے جو کسی فرد یا کنبے یا ملک کی بحالی ، خوشحالی اوربقاء کے لئے اشد ضروری ہے ۔ اس کے بغیر ضروریاتِ زندگی پوری نہیں کی جاسکتی ۔

آمدنی کی اقسام:

آمدنی کی درج ذیل قسمیں ہیں۔

1۔ نقدیا اقتصادی آمدنی:

نقدآمدنی رقم کی صورت میں ہوتی ہے جو مقررہ وقت میں خاندان کو وصول ہوتی ہے۔ اس سے قوتِ خرید کی اہلیت پیدا ہوتی ہے۔

2۔ اصل آمدنی:

اصل آمدنی کی گھریلو سازوسامان اور افرادِ خانہ کی خدمات پر مشتمل ہوتی ہے جس پر خاندان کی کل آمدنی کا ایک بڑا حصہ انحصار کرتا ہے۔ مثلاٌ فرنیچر گھریلو سازوسامان اور گھر کی تمام اشیاء پوری کرسکتے ہیں۔

آمدنی کے انتظام کو موثر بنانے کے اقدامات:

آمدنی کی منصوبہ بندی اور مناسب انتظام کرنے کے لئے خاندانی ادوار کو چھوٹی بڑی مدت میں تقسیم کرنا چاہیے تاکہ اس مخصوص مدت کی ضروریات اور اخراجات کا صحیح اندازہ کیا جاسکے۔

آمدنی کا انتظام:

آمدنی کے انتظام سے مراد گھریل آمدنی کی منصوبہ بندی کرنا، اس پر منضبط عمل درآمد کے لئے اپنی ضروریات اور خواہشات پر قابو رکھنا اور پھر نتائج پر غور و خوض اور تنقیدی جائزہ لینا۔ آمدنی ایک ایسا اہم ترین ذریعہ ہے جس کے انتظام کے پسِ پشت تمام وہی مقاصد پوشیدہ ہوتے ہیں جو ہر ذریعے کے انتظام کاتقاضاکرتے ہیں۔

آمدنی کے انتظام کاعمل ایک مقصدی عمل ہوتا ہے اور اس کا اخلاق انفرادی یا گروہی صورتوں میں یکساں ہوتا ہے۔ آمدنی کے انتظام میں وہ اقدامات جو آمدنی کی منصوبہ بندی میں نہایت رہنماثابت ہوتے ہیں ۔ بہت اہم ہوتے ہیں۔

آمدنی کے انتظامات میں رہنما اقدامات:

آمدنی کے انتظامات میں مندرجہ ذیل اقدامات اہم ہوتے ہیں۔

1۔ خاندانی مقاصد سے بخوبی آگاہی ہونا:

آمدنی کے انتظامات میں خاندانی مقاصد سے آگاہی ہونا ضروری ہے ۔خاندانی سربراہ کو افراد کی ضروریات اور خواہشات کاپتاہوناچاہیے۔ یہ مقاصد کو ابھارتا اور آمدنی کو خرچ کرنے کا رخ دیتا ہے۔ ان خواہشات ،ضروریات اور مقاصد کے پیچھے کنبے کی فلاسفی اور اقدار کارفرماہوتی ہیں جو مقاصد کاتعین کرنے کے ساتھ ساتھ آمدنی کے اخراجات کے طریقے بیان کرتی ہے۔

2۔ خاندان کو حاصل ذرائع ووسائل کی پہچان ہونا:

خاندان کو اصل ذرائع ووسائل کی پہچان اقتصادی آمدنی کو ملاجلا کر حاصل ہونے والی کل آمدنی کا اندازہ کیا جاسکتا ہے۔ جو کہ منصوبہ بندی کے تحت اخراجات پر مناسب طورپر تقسیم ہوسکتا ہے۔ وہ خاندان جن کی آمدنی متوقع مدت کے بعد باقاعدگی سے آتی رہتی ہے۔ ا ن کی اصل آمدنی کا اندازہ لگانا مشکل ہوتا ہے۔ جبکہ ایسے خاندان جن کی آمدنی کی مقررہ وقت کے بعد متوقع مقدار میں ہمیشہ نہیں آتی ان کے لئے اصل آمدنی کے ساتھ ساتھ نقد آمدنی کا اندازہ لگانا بھی کافی مشکل ہوتا ہے۔

3۔ نقدآمدنی کا کم عرصے کے دورانیہ میں تجزیہ کرنا:

نقدآمدنی کاکم عرصے کے دورانیہ میں تجزیہ سے کرنا منصوبہ بندی کر کے آمدنی کا کامیاب طریقے سے استعمال کرسکتے ہیں اور یہ کم عرصے کی منصوبہ بندیاں مل کر لمبی مدت کی منصوبہ بندی تعمیر کرتی ہیں۔

4۔ زندگی بھر کے لئے خاندان کی اصل آمدنی کا تجزیہ کرنا:

زندگی بھر کے لئے خاندان کی اصل آمدنی کا تجزیہ مستقبل قریب کے علاوہ مستقبل بعید کے بارے میں بھی دوراندیشی سے منصوبہ بندی کی جاسکتی ہے جیسے کہ بڑھاپے میں آمدنی کا ذریعہ کیا ہوگا۔

5۔ زندگی کے مختلف ادوار کی تشخیص کرنا:

زندگی کے مختلف ادوار کی تشخیص سے ایک خاندان اپنے حیاتی سفرکے دوران گزرتا ہے۔

خاندان کے سات مراحل:

کوئی بھی خاندان سات مراحل مثلاٌ ابتداء سے لے کر پھیلاؤ اور سکڑنے کے ادوار سے گزرتا ہے جس میں ہر دور کے مخصوص تقاضے اور ضروریات ہوتی ہیں جن سے پیش از وقت آگاہی آمدنی کے بہترانتظام کی مرہونِ منت ہوسکتی ہے۔

6۔ مختلف ادوار کے حسبِ منشاء مقاصد کی تکمیل کا اندازہ لگانا:

مختلف ادوار کے حسبِ منشا مقاصد کے تقاضوں پر درکار رقم اور آمدنی کا اندازہ ہوسکے اور ان کے حصول کے لئے وسائل میں بچت یا آمدنی میں اضافہ کرسکتے ہیں۔

7۔ آمدنی کے عمدہ انتظام کی ممکنہ کوشش کرنا:

ہم آمدنی کے عمدہ انتظام کے لئے کم مدت کے عرصہ میں موجودہ آمدنی کو اس طرح استعمال کرسکتے ہیں کہ وہ لمبے عرصہ کی آمدنی کو موثر بنانے میں مددگار ثابت ہو۔بیشک یہ نہایت مشکل ہے لیکن یہ ایک اچھے انتظام کےلئے نہایت ضروری ہے کیونکہ اگر کم مدت کا انتظام زیادہ مدت کے مقاصد کے حصول کو پیشِ نظر رکھ کرکیاجائے تو آمدنی کے خرچ میں خودبخود نظم و ضبط پیدا ہو جاتا ہے۔

9۔ بجٹ کی کتنی اقسا م ہیں۔ گھریلو سطح پر آمدنی میں اضافہ کیونکر کیا جا سکتا ہے؟

بجٹ کی اقسام :

بجٹ کی درج ذیل دو اقسام ہیں۔

1۔ بجٹ کا خاکہ:

بجٹ کے خاکہ میں صرف ضروری مدات درج ذیل کی جاتی ہیں جبکہ تقصیل درج نہیں کی ہوتی اس لیے یہ ہر خاندان کے لئے قابلِ استعمال اور سودمند نہیں ہوسکتا۔

2۔ تفصیلی بجٹ:

تفصیلی بجٹ ہرمد اوراخراجات کے ہر پہلو کی نشاندہی کرتا ہے اور اسے ایک ماہ کے لئے بآسانی بنایا جاسکتا ہے۔ اس کا ایک اہم فائدہ یہ ہوتا ہے کہ خاتون خانہ ہرماہ اس کے تفصیلی جائزے سے اگلے ماہ کے بجٹ میں تبدیلی کر سکتی ہے۔ اور ہرماہ اس کا تنقیدی جائزہ لے سکتے ہیں۔ حالات اور ضروریات کے مطابق اس میں توازن اور بچت کے پہلو پر بھی عمل ہوسکتا ہے۔

گھریلو سطح پر مختلف ہنروں کے استعمال ،محنت اور کوشش سے آمدنی میں اضافہ کیا جاسکتا ہے۔

درج ذیل طریقے آمدنی میں اضافہ کا باعث ہوسکتے ہیں۔

1۔ گھریلو پیمانے پر سبزیاں اُگانا:

گھریلو پیمانے پر سبزیاں اُگائی جاسکتی ہیں۔ ان کا استعمال آمدنی میں اضافے کاباعث بن سکتا ہے ۔

2۔ مرغبانی کا شوق:

مرغبانی کے شوق سے حاصل کردہ انڈوں اور گوشت کی فروخت سے بھی آمدنی میں اضافہ ہوسکتا ہے۔

3۔ کیک و بسکٹ چپس،اچار، چٹنی وغیرہ گھر میں استعمال کے لئے اور آرڈر پر تیار کرنا:

کیک و بسکٹ چپس، اچار، چٹنی وغیرہ گھر میں استعمال کے لئے آرڈر پر تیار کی جاسکتی ہیں۔ جس سے اخراجات کی بچت اور آمدنی میں اضافہ ہوسکتا ہے۔

4۔ کڑھائی کا کام آرڈر پرتیار کرنا:

کڑھائی کا کام آرڈر پر تیار کیا جاسکتا ہے۔ اور اسی طرح گوٹے کناری کاکام بھی آرڈر پر تیار کرسکتے ہیں جس سے آمدنی میں اضافہ ہو۔

5۔ مشین اور ہاتھ سے اونی سویٹر وغیرہ کی بنائی:

مشین اور ہاتھ سے اونی سویٹر وغیرہ بنے جاسکتے ہیں اور کام آرڈر پر تیار کیے جاسکتے ہیں۔

6۔ سجاوٹی اشیاء کی تیاری:

سجاوٹی اشیاء جیسے کہ مصنوعی پھول، مٹی کے برتن ، مختلف انداز کی تصاویر ،پیپر، چھوٹے قالین وغیرہ آرڈر پر تیار کیے جاسکتے ہیں۔

7۔ کروشیا کاکام:

گھر میں کروشیا کاکام اور کپڑوں کی سلائی خود کرکے اور آرڈر پر بھی تیار کرکے آمدنی میں اضافہ کیا جاسکتا ہے۔

8۔ حکومت کی بچت سکیموں میں سرمایہ کاری:

حکومت کی بچت سکیموں میں روپیہ پیسہ لگاکر آمدنی میں اضافہ کیا جاسکتا ہے جیسے کہ ڈیفنس سیونگ سرٹیفیکیٹ ،خاص ڈیبازٹ ،سرٹیفیکیٹ ،این آئی ٹی یونٹ،ماہانہ آمدنی کے سرٹیفیکیٹ ،شیئرز اور بانڈز خریدے جاسکتے ہیں۔

9۔ گھریلوکام خودکرنا:

گھریلو کام خود کرکے زیادہ کام کو خود کرکے ملازمین کی تنخواہ کے زائد اخراجات سے بچایاجاسکتا ہے۔

10۔ ٹیوشن کی رقم زائد اخراجات:

بچوں کو خودپڑھاکر ٹیوشن کی رقم بچائی جاسکتی ہے۔ اس کے علاوہ دوسرے بچوں کو بھی ٹیوشن پڑھائی جاسکتی ہے۔

11۔ فیشن اور رواج کے مطابق لباس:

فیشن اور رواج کے مطابق لباس تیار کیے جاسکتے ہیں اور زیورات ،لیمپ شیڈ ،ہینڈبیگ اور چپل ڈیزائن تیار کیے جاسکتے ہیں۔

بجٹ کی اہمیت کومدِنظر رکھنا:

خاتونِ خانہ کے لئے لازم ہے کہ بجٹ بناتے ہوئے بچت کی اہمیت کو مدِنظررکھے کیونکہ مقولہ ہے کہ بچت کی عادت، سادگی کی علامت ہے۔ مقولہ اپنی جگہ درست ہے اس کی وجہ یہ کہ سادگی سے بچت پیدا ہوتی ہے۔

بچت کی عادات:

                    1۔ بچت کی عادت ترقی یافتہ قوموں کا شعار ہے۔

2۔بچت کی عادت فضول خرچی سے بچاتی ہے اور غیر متوقع حالات میں قرض سے محفوظ رکھتی ہے۔

3۔ سادگی طرزِ زندگی کا نہ صرف ایک اُصول ہے بلکہ یہ ایسی عادت اور تربیت ہے جوکئی ،معاشرتی برائیوں سے بچاتی ہے۔ مستقبل کے لیے خاتون ِ خانہ کو پریشانیوں سے محفوظ رکھتی ہے۔

10۔ قوت کا انتظام کیونکر اہم ہے؟

قوت و توانائی کا انتظام:

قوت اللہ تعالیٰ کی بہت بڑی نعمت ہے۔ جس سے زندگی میں رمق پیدا ہوتی ہے، مقاصد پورے ہوتے ہیں اس سے جدوجہد ہوسکتی ہے اور یہ انسان کو اچھی صحت بخشنے کی ضامن ہوتی ہے۔ اور اس سے کھیل کود اور کام کاج حتٰی کہ سوچنےسمجھنے کی اہلیت ہوتی ہے۔ بعض اوقات ہم زندگی کی تگ و دو میں اس قدر مصروف ہوتے ہیں کہ ہمیں شعوری طور پر اس کا احساس نہیں ہوتا۔

قوت کے انتظام کے مقاصد:

قوت کے انتظام کے تین بڑے مقاصد ہیں۔

1۔ قوت کا استعمال بہترین طریقہ سے کیا جائے یا کم سے کم طاقت کے استعمال سے زیادہ سے زیادہ کام سرانجام دیاجائے۔

2۔ کام مکمل ہونے پر اتنی قوت جسے حسبِ خواہش استعمال کیا جاسکے۔

3۔ قوت کاکچھ حصہ محفوظ ہوسکے۔

4۔ ان مقاصد کے حصول کے لئے قوت و توانائی کے انتظام کی منصوبہ بندی بھی ضروری ہے۔ اس سے مراد ہے کہ کام کب کیے جائیں اور کیسے کیے جائیں۔ جس کے لئے ضروری ہے کہ۔

ا۔ کاموں کی درجہ بندی اہمیت کے مطابق کی جائے۔

ب۔ ہلکے اور بھاری کاموں کوباری باری ترتیب دیا جائے۔

ج۔ کاموں کو آسان اور سادہ کرنے کے طریقوں، تھکاوٹ  سےبچاؤ کے طریقوں اور کام میں دلچسپی پیدا کرنے کے طریقوں کو اپنایا جائے۔

د۔ قوت و توانائی کی منصوبہ بندی پر عمل کرنے کے لئے ضروری ہے کہ تمام اقدامات پر مستعدی سے کاربند رہا جائے تاکہ منصوبہ بندی کے مقاصد حاصل کیے جاسکیں۔

(Environment & Management) باب 13۔ماحول اور انتظام

سوالات

سوال1۔ ذیل  میں دے گئے بیانات میں سے ہر بیان کے نیچے چار ممکنہ جوابات دیے گئے ہیں۔ درست جواب کے گرد دائرہ لگائیں۔

1۔ماحول سے کیا مراد ہے؟

(الف)                                                                                گھر میں پائی جانے والی اشیاء                                                                                                                            (ب)                                                               گردونواح میں پائی جانے والی اشیاء                                                                                                      (ج)                                                                                                                                                 سڑکیں                                                                                                                                       (د)                                                                                                                   باغات

2۔ماحول میں کس چیز کا اضافہ آلودگی کاسبب بنتا ہے؟

(الف)                                                                                                                       ضروری اشیاء                                                                                                       (ب)                                                                                                                                غیرضروری اشیاء                                                                                                      (ج)                                                                                                                  اہم اشیاء                                                                                      (د)                                                                                                                   فالتواشیاء

3۔ آلودگی کی کتنی اقسام ہیں؟

(الف)                                 ایک                            (ب)                                                           دو                                                                              (ج)                                                                                                           تین                                                                                                                                     (د)                                                                              چار

4۔ صوتی آلودگی کس وجہ سے ہوتی ہے؟

(الف)                                                                                                         ماحول میں شور                                                                                (ب)                      پانی                                                                                                                                                      (ج)               گیس                                                                                                                                                                                        (د)                                                                                     ہوا

5۔گھریلو غلاظت دور کرنے کے کتنے طریقے ہیں؟

(الف)                                                                                                                                دو                                                                              (ب)                                                                                                                      چار                                                                                                      (ج)                                                                                                                        پانچ                                           (د)                                                                                                                   سات

6۔ گھر سے باہر غلاظت دور کرنے کے لئے کتنے طریقے استعمال ہوتے ہیں؟

(الف)                                                 ایک                                                                                                                                             (ب)                                                         دو                                                                                                       (ج)                                                                                             تین                                                                                                                                                        (د)                                                 پانچ

7۔ پھسلنے کے حادثات سے بچنے کے لئے پھلوں اور سبزیوں کے چھلکے کہاں پھینکنے چاہئیں؟

(الف)                                                                                                           فرش پر                                                                                                (ب)                                                                           کوڑے دان میں                           (ج)                                                                                                      سڑک پر                                            (د)                                                                                           لان میں

جوابات:                      (1-ب)(2-ب)(3-ج)(4-الف)(5-الف)(6-ب)(7-ب)

سوال 2۔ مختصر سوالات کے جوابات تحریر کریں۔

1۔ ماحول سے کیا مراد ہے؟

ماحول:

یہ عربی زبان کا لفظ ہے ،جس سے مراد ہمارے گردونواح اور اس میں پائی جانے والی اشیاء ہیں۔ مثلاٌ درخت، چرندپرند، لوگ، مکان،ندی نالے،پہاڑ،صحرا ، جنگل ،سمندر، گاڑیاں ،عمارات وغیرہ ہمارے ماحول کے حصے ہیں۔

2۔ آلودگی کی کتنی اقسام ہیں؟

آلودگی مندرجہ ذیل اقسام ہیں۔

1۔ فضائی آلودگی

2۔ آبی آلودگی

3۔ صوتی آلودگی

3۔صوتی آلودگی کو کیونکر کنٹرول کیا جاسکتا ہے؟

صوتی آلودگی کو کنٹرول کرنا:

ہمیں صوتی آلودگی کوکنٹرول کرنے کے لئے تین رخی منصوبہ اپنانا چاہیے مثلاٌ

1۔ صوتی آلودگی کے اسباب پر قابو پانا تاکہ کم از کم شور پیدا ہوسکے یہ کام حکومتی اقدامات سے ممکن ہو سکتا ہے۔

2۔ شور کے منبع سے ہدف تک پہنچنے میں رکاوٹیں پید اکرکے شور کے ترسیلی راستے کو مشکل بنایا جاسکتا ہے۔ اس سے عوام الناس کے لئے آگاہی چاہیے۔شور سے متاثرہ افراد کی مناسب حفاظت کیلئے درخت لگائے جاسکتے ہیں۔

4۔ صفائی سے کیا مراد ہے؟

صفائی سے مراد ماحول کو آلودگی سے پاک کرنا، اپنے جسم کے تمام اعضاء ،مثلاٌ ہاتھ ،منہ ،دانت اور بدن کو صاف رکھنا۔ صاف ستھرا لباس پہننا صفائی کہلاتا ہے۔

5۔ گھریلو غلاظت کو دور کرنے کے لئے کون سے طریقے استعمال ہوتے ہیں؟

گھریلو غلاظت کو دور کرنے کے لئے مندرجہ ذیل دو طریقے اختیار کیے جاتے ہیں۔

1۔ بھنگی کے ذریعے غلاظت دور کرنا

2۔ پانی سے بہاؤ کا طریقہ

6۔ گھر میں عام طور پر کس قسم کے حادثات پیش آسکتے ہیں؟

1۔ پھسل کر گرنا

2۔ چیزوں سے ٹکڑا کر چوٹ لگنا

3۔ سوئی یا کیل کانٹے کا چبھنا

4۔ قالین سے اُلجھ کر گرنا

5۔ زینے سے لڑھکنا

6۔ سیٹرھیوں پر حادثات

7۔ بجلی کے حادثے

8۔ موم بتی کاغلط استعمال

9۔ چوہوں اور کیڑے مکوڑوں سے بچاؤ

10۔ آگ یا گرم چیزوں سے جلنا

11۔ چاقو یا شیشے سے زخم لگنا

12۔ بوتل یا شیشہ کا ٹوٹ جانا

13۔ کٹے ہوئے ٹین کو اٹھانا

سوال 3۔ تفصیلی سوالات کے جوابات تحریر کریں۔

1۔ آلودگی کی اقسام پر نوٹ لکھیں؟

ماحولیاتی آلودگی:

ماحولیاتی آلودگی ماحول کو خطرناک حد تک خراب کررہی ہے۔ جس کے برے اثرات ساری دنیا کو اپنی لپیٹ میں لے سکتے ہیں۔

ماحولیاتی آلودگی کے اسباب:

آلودگی پیدا ہونے کی بہت سی وجوہات ہیں لیکن ان میں سے کچھ وجوہات ایسی ہیں جن میں ہم سب برابر کے شریک ہیں جیسے کہ

انسانی سرگرمیاں:

ہم پلاسٹک کے لفافے،چائے، آئسکریم، دودھ یا دہی کے خالی کپ کوڑے دان میں پھینکنے کی بجائے ادھر اُدھر پھینک دیتے ہیں۔

ناگہانی آفات اور تباہیاں:

ناگہانی آفات اور تباہیوں سے آلودگی پیدا ہوتی ہے مثلاٌ تیل کی نقل و حمل کے دوران حادثاتی طور پر سمندر میں آئل ٹینکر سے تیل کی خرابی کا شروع ہوجاتا ہے جس سے آلودگی جنم لیتی ہے۔

فنی خرابی سے:

کسی کیمیکل فیکٹری میں فنی خرابی کے باعث آگ بھڑک اُٹھتی ہے اور دھماکہ کی صورت میں زہریلی گیس کا پھیل جاتی ہے۔ اگر تھوڑی سی احتیاط اور ذمہ داری کا ثبوت دیاجائے توحادثاتی طورپر پیدا ہونے والی بہت سی آلودگیوں سے بچا جاسکتے ہیں۔

آلودگی کی اقسام :

آلودگی کی مندرجہ ذیل اقسام ہیں۔

ا۔ فضائی آلودگی

ب۔ آبی آلودگی

ج۔ صوتی آلودگی

1۔ فضائی/ہوائی آلودگی:

فضائی آلودگی پیداہونے کی اہم وجہ بطور ایندھن استعمال ہونے الی اشیاء ہیں جن میں لکڑی ، کوئلہ ، فرنس آئل ،مٹی کا تیل اور ڈیزل شامل ہیں۔ دوران استعمال اگر یہ اشیاء مکمل طورپر جلنے نہ پائیں تو فضائی آلودگی میں اضافے کی شرح بڑھ جاتی ہے۔ ماحول میں مختلف گیسوں کے اخراج سے پیدا ہونے والی فضائی آلودگی کی وجہ زمین پر انسانی سرگرمیاں بھی ہیں۔ قدرتی واقعات میں مختلف  جانوروں کامرجانا، پودوں اورپتوں کاخشک ہوکر گرجانااور پراُسی جگہ پر ان کے گلنے سٹرنے کافطری عمل شروع ہوجانا، شدید گرمی سے جنگلات میں آگ بھڑک اٹھنا،آتش فشاں پہاڑوں کا پھٹ جانا، ان تمام حادثات  و واقعات کی وجہ سے فضا میں امونیا گیس کا تناسب بڑھ جاتا ہے۔ جوفضائی آلودگی کے زمرے میں آتا ہے۔ انسانی سرگرمیوں سے فضائی آلودگی میں اضافہ کی وجوہات درج ذیل ہیں۔

1۔ موٹرگاڑیوں ٹرکوں، بسوں ،موٹرسائیکلوں اور رکشوں وغیرہ سے دھوئیں کا اخراج۔

2۔ اُن فیکٹریوں کی چمنیوں کا دھواں جہاں مٹی کا تیل  ،فرنس آئل ،کوئلہ ،ڈیزل اور لکڑی یا اس کے بُرادے کا استعمال بطور ایندھن کثرت سے ہوتا ہے۔

3۔ سڑکوں پر کوڑا کرکٹ کو اکٹھا کر کے آگ لگا کر جلانا۔

فضائی آلودگی کم کرنے کے طریقے:

فضائی آلودگی کو کم کرنے میں درج ذیل اقدامات مددگار و معاون ثابت ہوسکتے ہیں۔

1۔ گاڑیوں میں کیٹالیٹک کنورٹرز کا استعمال کیا جائے۔ یہ آلہ گاڑیوں میں سے خارج ہونے والی مضر گیس کے منفی اثرات کو کم نقصان دہ حالت میں منتقل کردیتا ہے۔

2۔ گاڑیوں کا استعمال کم کیا جائے۔ کیونکہ پیٹرول میں سیسے کا استعمال گاڑی کے انجن میں شور کو روکنے کے لئے کیا جاتا ہے۔ جس سے فضا میں سیسے کی مقدار بڑھتی جارہی ہے۔

3۔ فیکٹری کی چمنیوں سے خارج ہونے والے دھوئیں اورسلفر ڈائی آکسائیڈ کی مقدار کم کرنے کے لئے مختلف طرح کے فلٹرز استعمال کیے جائیں۔

4۔ فیکٹریوں سے خارج ہونے والے تیزاب ملے فاضل مادوں کو ماحول میں شامل ہونے سے پہلے الکلی کے استعمال سے بے اثرکیا جائے۔

5۔ اوزون تہہ کی حفاظت کے لئے ہائیڈروکاربن اور نائٹروجن پرآکسائیڈ پر کنٹرول کی ضرورت ہے۔

کیونکہ اوزون کی تہہ سورج سے خارج ہونے سے تابکار شعاعوں کوروکتی ہیں اور ایک حفاظی چھتری کاکام کرتی ہے۔ مگر اس تہہ کی موٹائی میں کمی سے ہمارے ماحول پر خطرناک اثرات پڑنے شروع ہو گئے ہیں۔

2۔ آبی آلودگی:

آبی آلودگی کا سبب پانی میں ملے ہوئے مضر مادے ہیں۔ فیکٹریوں  سے استعمال شدہ پانی کے اخراج میں عام طورپر سیسہ ،ڈیٹرجنٹ ،فینول، ایتھر، بینزین،امونیا، سلفیورک ایسڈ  جیسے مضر صحت اجزاء کی کافی مقدار موجودہوتی ہے جو استعمال شدہ پانی میں شامل ہوکر اسے آلودہ کردیتا ہے۔

بڑھتی ہوئی آبادی کی غذائی ضروریات پوری کرنے کے لئے زرعی اجناس کی پیداوار میں اضافہ ضروری ہوگیا ہے۔ پیداوار میں اضافے کے لئے نائٹروجن اور نائٹریٹ والی مصنوعی کھادوں اور پانی کے بے دریغ استعمال کے ساتھ کیڑے مکوڑوں اور غیر ضروری جڑی بوٹیوں کو تلف کرنے کے لئے کرم کش زہریلی دوائیوں کے استعمال میں بھی اضافہ ہوا ہے نتیجتاٌ آبی آلودگی کا دائرہ بندی نالوں ،جھیلوں، نہروں اور دریاؤں سے ہوتا ہوا ساحل سمندر تک پہنچ گیا ہے۔کارخانوں اور صنعتوں سے خارج ہونے والے پانی میں بے شمار زہریلے مادے شامل ہوتے ہیں۔ جوپانی کو آلودہ کرنے کا سبب بنتے ہیں۔ گندگی اور کوڑا کرکٹ پانی میں پھینک دینا بھی آلودگی کا باعث بنتا ہے۔ گھروں کے باہر فرش یا گاڑیاں دھونے کے بعد پانی کھڑا رہنے سے مچھروں کی افزائش ہوتی ہے۔

آبی آلودگی کے اثرات آہستہ آہستہ زیرِ زمین پانی کے معیار پر اثرانداز ہوتے ہیں۔ پانی کی آلودگی کے اس اضافے سے کئی موذی امراض میں اضافہ ہواہے۔ جن میں پیٹ کے امراض ،پیچس اور ہیپاٹائٹس خاص طور پر قابلِ ذکر ہیں۔

آبی آلودگی کوکم کرنے کے طریقے:

1۔ آبی آلودگی کو کنٹرول کرنے کے لئے صنعتی اور شہری اخراج کے لئے ٹریٹمنٹ پلانٹ لگائے جائیں۔

2۔ صنعتوں میں پانی کی بچت کے لئے اس کی ری سائیکلنگ کی جائے۔

3۔ سمندر میں پانی کی کم از کم مقدار جانے دی جائے۔

4۔ گھر کے سیوریج کو صاف کرنے کے بعد دوبارہ استعمال کیا جائے۔

5۔ پانی کی سپلائی اور ڈیمانڈ کے درمیان صحیح توازن برقراررکھا جائے۔

6۔ تالابوں اور دوسرے مقامات پر بارش کے پانی کوسٹور کیاجائے اور اس محفوظ ذخیرے کو ضرورت کے وقت استعمال کیا جائے۔

7۔ نوجوان ملکی آبادی کا ایک اہم حصہ ہیں تحفظ آب کے سلسلے میں ان کی صلاحیتوں سے بھرپور استفادہ کیاجائے۔

3۔ صوتی آلودگی:

آبادی میں اضافے کے ساتھ ساتھ آلودگی کی نئی اقسام بھی وجود میں آنا شروع ہوگئی۔ان میں سے ایک قسم صوتی آلودگی ہے۔ جو اردگرد کے ماحول میں شور پیدا ہونے کی وجہ سے ہوتی ہے۔

صوتی آلودگی کے اسباب:

بڑھتی ہوئی آبادی کے پیشِ نظر خاموش اور پرسکون مقامات کا ملنا محال ہے اور مناسب آوازوں سے واسطہ پڑنا ایک معمول کی بات ہے۔ تاہم شوروغل کی آلودگی کے چند ذرائع جن میں اس کا احساس شدت سے پایاجاتا ہے۔ ان میں زیادہ اہم موٹرگاڑیاں ، ریل گاڑیاں ، ہوائی جہاز ،تعمیراتی کام اور بعض صنعتیں ہیں۔

1۔ گاڑیوں کا شور:

صوتی آلودگی میں گاڑیوں کا شور کلیدی حیثیت رکھتا ہے ۔ یہ شور سفر کو کٹھن آمیز اور اعصاب شکن بنا دیتا ہے۔ ویگنوں اور بسوں کے بلاضرورت ہارن کا شور اور ٹیپ ریکارڈر کا استعمال صوتی آلودگی میں مزید اضافہ کرتا ہے۔

2۔ تعمیراتی شور:

پاکستان کی ترقی میں تعمیراتی صنعت نمایاں کردار کی حامل ہے۔ تعمیراتی سرگرمیوں کے دوران سازو سامان ،گاڑیاں، کارکن اور معماروں کا شور آس پاس  بسنے والوں کے لئے پریشان کن ہوتا ہے۔

3۔ صنعتی شور:

صنعتی یونٹوں میں کمرے میں بند مشینوں کے چلنے سے شور زیادہ پیدا ہوتا ہے۔ جس کا کارکنوں کی صحت پر بہت اثر پڑتا ہے ۔ ان میں سب سے اہم نیند کا پورا نہ ہونا۔ نیند کی تسکین اگر مناسب طریقے سے نہ ہو تو اٹھنے کے بعد بھی تھکاوٹ کا شکار رہتا ہے۔ ذہنی تناؤ کی وجہ سے پیداہونے والی جسمانی بیماریوں کی ایک اہم وجہ شوروغل بھی ہے۔ جن میں معدے کا السر اور بلند فشارِ خون عام ہیں۔ اور یہ بڑھتا ہوا فضائی شور ہماری زندگیوں اور خوشیوں کی تکمیل کے لئے ایک بڑھتا ہوا خطرہ ہے۔ شوروغل کی آلودگی سے انسان کی تخلیقی صلاحیتیں مفلوج ہوجاتی ہیں اور وہ کوئی کام بھی یکسوئی سے نہیں کرپاتا۔

صوتی آلودگی کو کنٹرول کرنا:

اس آلودگی کو کنٹرول کرنے کے لئے تین رخی منصوبہ بنانا ہوگا مثلاٌ

1۔ صوتی آلودگی کے اسباب پر قابو پانا تاکہ کم ازکم شور پیدا ہوسکے مثلاٌ حکومتی اقدامات۔

2۔ شور کے ترسیلی راستے کو مشکل بنانا تاکہ شور کے منبع سے ہدف تک پہنچنے میں رکاوٹیں پید ا کی جاسکیں مثلاٌ عوام الناس کے لئے آگاہی پروگرام۔

3۔ شور سے متاثرہ افراد کی مناسب حفاظت کرنا مثلاٌ درخت لگانا۔

شور کے مضر اثرات کو کم کرنے لئے مندرجہ ذیل تدابیر اختیار کی جاسکتی ہیں۔

1۔بلاضرورت ہارن بجانے پر سختی سے عمل کرایاجائے۔

2۔ سڑک پر چلنے والی گاڑیوں کا درست حالت میں ہونا لازمی قراردیا جائے۔

3۔ ریلواسٹیشن اور ہوائی اڈے کو رہائش علاقوں سے کافی فاصلے پر بنایا جائے۔

4۔ عوام کو شور کے مضراثرات سے آگاہ کیا جائے۔

5۔ مشینوں میں آواز کم کرنے والے آلات نصب کیے جائیں

6۔ شور پیداکرنے والی مشینوں کو علیحدہ ایسی جگہ پر رکھا جائے جہاں دیواروں اور چھتوں میں آواز جذب کرنے والا میٹریل استعمال کیا گیا ہو۔

7۔ فیکٹریوں میں کام کرنے والے  کارکنوں کے لئے شور جذب کرنے والے آلات لازمی طور پر استعمال کرائے جائیں۔

8۔ ہوائی اڈوں ،ریل کی پٹریوں ،سڑک اور کارخانوں کے اردگرد زیادہ سے زیادہ تعداد میں درخت لگائے جائیں ۔ درختوں میں آواز جذب کرنے کی صلاحیت ہوتی ہے اس لیے یہ فضائی آلودگی کے ساتھ ساتھ آواز کی آلودگی کو بھی کم کرنے میں مددگار ثابت ہوتے ہیں۔

2۔ فاضل مادوں کو ٹھکانے لگانے کےلئے کون کون سے طریقے استعما ل ہوتے ہیں؟

فاضل مواد ٹھکانے لگانے کے طریقے :

ہمارے گھروں میں بہت سے فاضل مادے اور کوڑا کرکٹ اکٹھا ہوجاتا ہے۔ جس میں سبزیوں اور پھلوں کے چھلکے کھانے کی بچی ہوئی چیزیں، گردوغبار اور ردی کاغذ، جھاڑو کے ذریعہ سے نکالاہواکوڑاکرکٹ ،درختوں اور پودوں کے گلے سڑے پتے، لکڑی او رکوئلوں کی راکھ، مویشیوں کا گوبر سبھی کچھ شامل ہوتے ہیں۔ اس کے ساتھ ساتھ پیشاب اور پاخانے کی غلاظت بھی ہوتی ہے۔ یہ سب غلاظتیں گھروں سے دور لے جاکر بے ضرر بنادی جائیں ۔ ان تمام غلاظتوں کو ٹھکانے لگانے کے مختلف طریقے اپنائے جا سکتے ہیں۔

گھریلوکوڑاکرکٹ صاف کرنا:

گھریلو کوڑا کرکٹ اور راکھ، مٹی ،ردی کاغذ،سبزی اور پھلوں کے چھلکے وغیرہ  کوڑے کے بڑے بڑے ٹینوں میں اکٹھے کردیے جاتے ہیں۔

میونسپل کمیٹی کی اہمیت:

میونسپل کمیٹی کی گاڑیاں آکر کوڑے کے ٹین خالی کر کے آبادی سے دور لے جاتی ہیں۔ پھر یہ کوڑے کڑکٹ کو خاص قسم کی بھٹی میں جلا کر ضائع کیا جاتا ہے۔ اس سے نامیاتی مادے جل کر کاربن ڈائی آکسائیڈ اور نائٹروجن میں تبدیل ہوجاتے ہیں اور معدنی مادے باقی رہ جاتے ہیں۔ یہ مادے سڑکیں بنانے، گڑھے بنانے اور سیمنٹ بنانے کے کام آتے ہیں۔ اس کے علاوہ کوڑا کرکٹ تلف کرنے کے لئے آبادی سے دور خالی جگہ بڑے بڑے گڑھے بنائے جاتے ہیں اور میونسپل کمیٹی کی گاڑیاں ان گڑھوں میں شہر سے کوڑا کرکٹ ڈالتی رہتی ہیں۔

مویشیوں کی غلاظت:

مویشیوں کی غلاظت کھاد کی صورت میں استعمال کی جاتی ہے جو کہ زمین میں فصل کی کاشت کے لئے عمدہ ثابت ہوتی ہے۔

1۔ گھریلو غلاظت کو دورکرنا:

بھنگی ہمارے گھروں سے پیشاب پاخانے کی غلاظتیں لے جاتے ہیں۔ اور ایک خاص قسم کے بندٹینوں میں جمع کرکے گاڑیوں کے ذریعے شہر سے باہر مخصوص مقامات پر پہنچاتی  ہیں جو کہ پرانا طریقہ ہے اور عملی طور پرکم جگہوں پر استعمال ہوتا ہے۔

2۔ پانی سے بہاؤ کا طریقہ:

ایک اور طریقے سے گھر کی تمام غلاظت پانی کے بہاؤ کے ذریعے بند نالیوں میں سے گز ر کر گندے نالے میں پہنچ جاتی ہے ۔ اس کو بہاؤ کا طریقہ بھی کہتے ہیں۔ غلاظت کو دور کرنے کایہ طریقہ سب سے اچھا، صاف ستھرا اور کم خرچ والا ہے۔ ایسے شہروں جن میں آب رسانی کا انتظام تسلی بخش ہووہاں یہ طریقہ ضروررائج ہوناچاہیے۔ ہمارے ملک میں یہ طریقہ تقریباٌ تمام بڑے شہروں اور گاؤں میں رائج ہے۔

گھرسے باہر غلاظت کو دور کرنا:

مندرجہ بالا غلاظتوں کو میونسپل کمیٹی کی گاڑیاں شہر سے باہر پہنچایا جاتا ہے تو انہیں ضائع کرنے کے دو طریقے استعمال ہوتے ہیں۔

1۔ خندق والاطریقہ:

تقریباٌ ایک ایک فٹ کے فاصلے پر دو فٹ چوڑی اور ڈیڑھ فٹ گہری خندقیں کھودی جاتی ہیں۔ اور اس میں گندگی کی ایک فٹ موٹی تہہ بچھا دی جاتی ہےپھر اس پر مٹی ڈال کر اسے ہموار کردیاجاتا ہے۔ زمین کے نیچے کی مٹی میں موجود  جراثیم تین چارہفتوں میں اس سے عمدہ کھاد بنادیتے ہیں۔ یہ خندقیں زیادہ گہر ی نہیں ہوتی کیونکہ ان میں زیادہ گہری جگہ پر جراثیم نہیں  پائے جاتے۔ تین مہینوں کے بعد زمین پر ہل چلا کر جلد اُگنے والی فصل بوئی جاسکتی ہے۔

2۔ جلانے کاطریقہ:

جب بھٹیاں مناسب طریقے پر بنی ہوں تو یہ طریقہ اس صورت میں کامیاب ہو سکتا ہے۔ ا ن میں ہواکا گزراچھی طرح سے ہوسکتا ہو ورنہ دھواں اور بدبو پیدا ہوجاتی ہے۔

سائبان والاپکے چبوترے کا طریقہ:

غلاظت میں ایندھن ملانے کے لئے سائبان والا چبوترہ ہوناچاہیے تاکہ بارش سے محفوظ رہ سکیں۔ ایندھن مثلاٌ لکڑی کا برادہ،کوئلے کاچوراور خراب کابھوسہ کافی مقدار میں ملاناچاہیے۔ اس کے علاوہ زیادہ غلاظت کو ایک ہی وقت میں بھٹیوں میں نہ ڈالاجائے کیونکہ اس طرح غلاظت پورے طور سے نہیں جلتی اور آگ جلنے بجھنے لگتی ہے جس سے دھواں پیدا ہوجاتا ہے۔

3۔ گندے نالے کے ذریعے گندگی کو بہانے کا طریقہ:

گندے نالے کی غلاظت کو کھیتی باڑی کے کام میں بھی لایا جاسکتا ہے ۔نالے کی غلاظتوں کوعلیحدہ کیے بغیر زمین پر بہنے دیتے ہیں۔ مگر اس صورت میں زمین کا رقبہ کافی بڑا ہونا چاہیے اور نالیوں کا خاطرخواہ انتظام ہونا چاہیے ۔تاکہ ضرورت کے مطابق گندہ پانی زمین پر چھوڑا جاسکے اور پھر بعدزمین میں جلد اُگنے والی فصلیں بودی جاتی ہیں۔

4۔ متعفن تالاب کا طریقہ:

اس طریقے میں گندے نالے کی غلاظت کو پہلے ایک بندتالاب میں اکٹھا کیا جاتا ہے ۔یہاں اس کو کئی روز تک رکھا جاتا ہے۔ اس میں جراثیم خوب پرورش پاتے ہیں اور تالاب کے اوپر کی سطح پر جھاگ آجاتی ہے۔ غلاظت کے ٹھوس اجزاء نیچے بیٹھتے جاتے ہیں لیکن جراثیم کے عمل سے وہ گیس کے بلبلوں کی شکل میں اُوپر اُٹھتے ہیں۔ اس سے گیس خارج ہو جاتی ہے اور معلق ذرات پھر نیچے تہہ میں بیٹھ جاتے ہیں۔ یہ عمل اس وقت تک جاری رہتا ہے  جب تک غلاظت کے تمام معلق اجزاء جراثیم کے عمل سے سیال صور ت اختیار نہیں کرلیتے ۔ کچھ عرصہ بعد تمام غلاظت صاف پانی میں تبدیل ہوجاتی ہے یہ پانی زمین کی کاشت کے لئے استعمال کرتے ہیں۔

5۔ گندے پانی کا نکاس:

دیہات میں گندے پانی کا نکاس:

برتن دھونے ،نہانے ،کپڑے دھونے اور مختلف کام کرنے میں پانی استعمال ہوتا ہے۔ استعمال ہونے کے بعد گندے پانی کو گھروں سے دورلے جان نہایت ضروری ہے ۔گاؤں اور دیہاتوں میں گندےپانی کے نکاس کا عام طور پر کوئی خاص انتظام نہیں ہوتا۔ بعض گھروں کاپانی تو گھر کے صحن میں یا گلی میں پھیلتا رہتا ہے۔

گندی نالیاں:

دیہات میں بعض جگہ پر کچھ نالیاں بھی ہوتی ہیں جس میں گاؤں سے باہر کسی گڑھے میں گندا پانی جمع ہوتا رہتا ہے۔ جس میں مکھیاں اور مچھر نشوونما پاتے ہیں۔ پانی کے نکاس کے لئے پختہ نالیوں کے ذریعے پانی بڑے پختہ نالوں میں پہنچا دیا جاتا ہے۔ پھر متعفن تالاب میں اس پانی کو صاف کرکے کھیتوں میں پہنچا دیا جاتا ہے۔

6۔ سیوریج کا طریقہ :

اس طریقہ میں پانی کو گھروں سے پانی کی نالیوں یا پائپوں  کے ذریعے شہر سے دور پہنچایا جاتا ہے۔ اس پانی میں کاربوہائیڈریٹس ،چربی، صابن اور یوریا جیسے نامیاتی مادے پائے جاتے ہیں۔ قدرتی طریقہ سے پائپ کے اندر سے گندہ نالہ صاف ہو جاتا ہے مگر اس میں دیر لگتی ہے۔

پھٹکری ، چونے ، کلورین اور لوہے کے نمک کا استعمال:

عمل کو تیز کرنے کے لئے چونا، پھٹکری، کلورین اور لوہے کانمک ملاکر اس پانی کو بے ضرربنادیا ہے۔ پھر اس پانی کو کھیتوں میں استعمال کیا جاتا ہے۔

3۔ گھر میں فوری حادثات پر کیونکر قابو پایا جاسکتا ہے؟

گھرمیں تحفظ اور حفاظتی اقدامات:

ایسے گھر جس میں ہر طرح کا تحفظ پایا جاتا ہو، آرام دہ اور محفوظ گھر ہوتے ہیں۔ گھروں میں سینکڑوں چیزیں ایسی ہوتی ہیں جو ذراسی بے احتیاطی کا باعث بن سکتی ہیں۔ ہماری یہ لاپرواہی اور غفلت گھر کے کسی عزیز یا پڑوسی کی موت یا اس کے زخمی ہونے یا قیمتی اشیاء کے تباہ ہونے کا سبب بن سکتی ہیں۔ اس لیے گھر ایسے ہونے چاہئیں جن میں چلتے پھرتے وقت حادثات پیش نہ آئیں۔

گھروں میں عام طور پر درج ذیل قسم کے حادثات پیش آتے ہیں۔

1۔ پھسل کر گرنا:

گھروں میں پانی پھینکنے سے کیچڑ یا پھسلن ہوجاتی ہے اس بےاحتیاطی کی وجہ سے پاؤں پھسل سکتے ہیں۔ بعض اوقات فرش پر پڑے ہوئے پھلوں یا ترکاری کے چھلکوں سے بھی پھسل کر حادثہ پیش آسکتا ہے۔ فرش کی سطح ہموار نہ ہونے سے بچے اور بڑے دونوں ٹھوکر لگنے سے گر سکتے ہیں۔ ایسے حادثات سے بچاؤ کے لئے پھلوں اور سبزیوں کے چھلکے فرش کی بجائے کوڑے دان میں ڈالنے چاہئیں۔

2۔ چیزوں سے ٹکرا کر چوٹ لگنا:

اگر گھر کا سازوسامان بے ترتیبی سے پڑاہوا یا ایسی جگہوں پر رکھا گیا ہوجہاں سے گھر والےباربار گزرتے ہوں تواس سے چوٹ لگنے کا زیادہ خطرہ ہوتا ہے۔ ناکافی روشنی سے بھی ٹھوکر لگ سکتی ہے۔ اس لیے جہاں سامان رکھا گیا ہووہاں روشنی کے بغیر نہیں جانا چاہیے۔

3۔ سوئی یا کیل کانٹے کاچبھنا:

اکثراوقات گھروں میں کیل چبھنے یا کانٹے لگنے کے واقعات ہوتے رہتے ہیں۔ ایک چھوٹی سی سوئی کا چبھنا بھی بے حدتکلیف دیتا ہے۔ اسی طرح سیدھی پڑی ہوئی کیل یاپن بھی پاؤں میں لگنے سےیا آرپارنکلنے سے انتہائی نقصان ہوتا ہے۔ آمدورفت کے راستے میں اگر کوئی کیل یا کسی دروازے کی چٹخنی باہر کو نکلی ہوئی ہوتو اس سے بھی چوٹ لگ سکتی ہے۔

4۔ قالین سے اُلجھ کر گرنا:

قالین سے اُلجھ کر گرنا، دری یا چٹائی بچھاتے وقت سلوٹیں رہ جاتی ہیں۔ جن میں اُلجھ کرگرنے کا امکان بڑھ جاتا ہے۔ اس لیے ضروری ہے کہ سینے پرونے کے بعد سوئی دھاگا احتیاط سے کسی موزوں جگہ پر رکھا جائے اور کیل بھی استعمال کے بعد ادھراُدھر نہ بکھرے رہیں۔

5۔ زینے سے لڑھکنا:

ہمارے گاؤں اور شہروں کے اکثر گھروں میں کئی طرح کی سیٹرھیاں ہوتی ہیں۔ اگریہ سیڑھیاں بہت اونچی اونچی اور تنگ ہوں، سیڑھیوں کا جنگلا ٹوٹا ہوا یا مضبوط نہ ہوتو یہ بہت غیر محفوظ ہوتی ہیں۔ ایسی سیڑھیوں پر اگر اترتے اور چڑھتے ہوئے احتیاط سے کام نہ لیں توگرنے کا اندیشہ ہوتا ہے۔

6۔ سیڑھیوں پر حادثات:

بعض اوقات سیڑھیوں پر چھوٹی چھوٹی چیزیں پڑی رہتی ہیں یہ بھی گرنے کا سبب بن سکتی ہیں۔ کھیلنے کے بعد بچوں کو اپنے کھلونے وغیرہ سیڑھیوں پر نہیں چھوڑنے چاہئیں نیز سیڑھیوں میں روشنی کا مناسب انتظام بھی ہونا چاہیے۔

7۔ بجلی کے حادثے:

بجلی کے حادثات  اکثر جان لیوا ثابت ہوتے ہیں ان کی طرف توجہ دینا ضروری ہے۔ اگر بجلی کے تارگیلے یا ٹوٹے ہوئے ہوں تو انہیں درست کرناچاہیے۔ ٹوٹے ہوئے پلگ کا استعمال بھی نہیں کرناچاہیے۔

8۔ موم بتی کا غلط استعمال :

چھوٹے موٹے سفروں پر ماچس یا موم بتی کی بجائے ٹارچ کا استعمال آسان اور محفوظ ہوتا ہے۔ موم بتی سٹینڈ پر لگانی چاہیے۔ جلتی موم بتی بالکل نہیں چھوڑنی چاہیے کیونکہ ہوا کا اچانک جھونکا اگر موم بتی کو جلنے والی اشیاء پر گرادے تو اس طرح کپڑوں کے ذریعے آگ پلنگ کی چادروں ، پردوں تک پھیل سکتی ہے۔

9۔ چوہوں اور کیڑے مکوڑون سے بچاؤ:

چوہے دان کا استعمال:

چوہوں اور دیگرنقصان دہ کیڑے مکوڑون سے بچنے کے لئے چوہے مارگولیاں یا چوہے دان استعمال کرنے چاہئیں اور گھروں میں صفائی رکھنی چاہیے تاکہ زہریلے کیڑے پیدا نہ ہوں۔ زہریلی دوائیوں کو احتیاط سے رکھنا چاہیے تاکہ افرادِخانہ اس سے محفوظ رہیں۔

10۔ آگ یا گرم چیزوں سے جلنا:

آگ لگنے کے خطرات سے بچاؤ کے لئے کچھ اہم طریقے اپنائے جا سکتے ہیں۔

1۔ ماچس وغیرہ کو بچوں کی پہنچ سے دور رکھنا چاہیے اور بچوں کو اس کے نقصان سے آگاہ کرنا چاہیے۔

2۔ گھر میں ریت اور آگ بجھانے والا پمپ وغیرہ رکھنا چاہیے۔

3۔ چولہے کا استعمال کرتے وقت نیز بجلی اور گیس کے ہیٹر کے قریب اپنے کپڑون کے سنبھالنا ضروری ہوتا ہے۔

4۔ ہمیں آگ کے قریب نائلون کے کپڑے پہن کر نہیں بیٹھنا چاہیے کیونکہ نائلون جلد آگ پکڑسکتا ہے۔

5۔ بجھے ہوئے کوئلے یا لکڑی کو اٹھاتے وقت خیال رکھیں کہ اس میں چنگاری نہ ہو۔ کھولتے ہوئے پانی ،گرم تیل یاگھی اور اُبلتے ہوئے دودھ کو چولہے سے اتارتے وقت پتیلی کو صافی یا ڈسٹر کے مضبوطی سے پکڑیں اور الگ رکھیں تاکہ کوئی دوسرا کام کرتے وقت گرم گرم پانی یا چیز گرنے کا امکان ہو تیزاب اور جسم کو جھلسانے والی دواؤں سے بھی احتیاط کرناچاہیے۔

6۔ دواؤں کو ہمیشہ ڈھکن یا کارک والی بوتل میں رکھنا چاہیے۔ دواؤں کی بوتلوں پران کا نام ضرور لکھیں اور انہیں بچوں کی پہنچ سے دوررکھیں۔

11۔ چاقو یاشیشے سے زخم لگنا:

گھروں میں  چاقو یا بلیڈ کھلے چھوڑ دینے یا چھری کو بےا حتیاطی سے رکھ دینے سے بچے یقیناٌ اسے استعمال کرنے لگتے ہیں اور کہیں نہ کہیں اپنے آپ کو زخمی کر لیتے ہیں۔ تیز دھا ر دار چیزوں کے استعمال میں بہت احتیاط کرنی چاہیے اور انہیں استعمال کے بعدکسی محفوظ جگہ پر اور بچوں کی پہنچ سے دور رکھنا چاہیے ۔شیشوں کے ٹکڑے اور کرچیوں سے بھی ہاتھ پاؤں کٹ سکتے ہیں۔

12۔ بوتل یا شیشہ کا ٹوٹ جانا:

کسی جگہ بوتل یا شیشہ ٹوٹ جائے تو اسے بہت اچھی طرح مکمل طورپر صاف کرناچاہیے۔

13۔ کٹے ہوئے ٹین کو اٹھانا:

کٹے ہوئے ٹین کو اٹھاتے اور کھولتے ہوئے بہت احتیاط سے کام لینا چاہیے کیونکہ ٹین کا زخم بھی چاقو یا چھری کے زخم سے کچھ کم تکلیف دہ نہیں ہوتا۔ ٹین کو کاٹنے کے بعد استعمال کرنا مقصود ہو تو اس کی کٹی ہوئی سطح کو کوٹ کر برابر کیا جائے ۔

لوہے یا بجلی کی استری:

لوہے یا بجلی کی استری کو کبھی لکڑی پر یا جلد آگ پکڑنے والی چیزوں پر نہ رکھیں۔

گھریلوحادثات سے محفوظ رہنے کے لئے اگر حفاظتی اقدامات کو مدِ نظر رکھا جائے تو بہت حد تک ان خطرات سے محفوظ رہا جاسکتا ہے اور گھروں کو محفوظ بنایا جاسکتا ہے۔

(Art and Design) باب 14۔آرٹ اور ڈیزائن

سوالات

سوال1۔ ذیل  میں دے گئے بیانات میں سے ہر بیان کے نیچے چار ممکنہ جوابات دیے گئے ہیں۔ درست جواب کے گرد دائرہ لگائیں۔

1۔آرٹ انسان کی کیسی کیفیت ہے جس کا تعلق حسںِ جمال سے ہے  ؟

(الف)                                                                                                                                                                                                                     ذہنی اندرونی                                                                                                                                                                       (ب)                                                                                                                                                                                      جسمانی                                                                                                      (ج)                                                                                                                        انسانی                                                                                                                                             (د)                                                                                                                   خوبصورتی

2۔ڈیزائن سے کیا مراد ہے؟

(الف)                                                                                                                                                                                                                     شکل                                                                                                                                                                                                                                                                (ب)                                                                                                                                                                                                          بناوٹ و ساخت                                                                                                      (ج)                                                                                                                                                                                     تناسب                                                                                                                                                                                                                                                  (د)                                                                                                                  وضع

3۔ بناوٹی یا بنیادی ڈیزائن کسی چیز کے کس کے لئے ضروری ہوتے ہیں؟

(الف)                                                                                                                          نقشے                                                                                                                                         (ب)                                                                                                                                                                   آرائشی                                                                              (ج)                                                                                                            مادی                                                                                                                  (د)                                                                               وجود

4۔ کسی بھی چیز کا بنیادی ڈیزائن اس کے کس ڈیزائن سے اہم ہوتا ہے؟

(الف)                                                                                                         سجاوٹی                                                                                                                                                        (ب)                      خوبصورتی                                                                                                                                                      (ج)               نمایاں کرنے                                                                                                                                                                                        (د)                                                                                     بناوٹ

5۔کسی بھی ڈیزائن کی تشکیل میں کیا بنیادی حیثیت رکھتے ہیں؟

(الف)                                                                                                                        خطوط                    (ب)                                                                                                                                  تناسب                                                                    (ج)                                                                                               شکل                                                                                                                                                                                                                                                           (د     ہم آہنگی

6۔ افقی خطوط کس کا تاثر دیتے ہیں؟

(الف)                                                                                                           لمبائی                                                                                                                                                         (ب)                                                           چوڑائی                                                                                                               (ج)                                                                                             موٹائی                                                                                               (د)                                                 اضافہ

7۔ قوسی خطوط کیسے ہوتے ہیں؟

(الف)                                                                                             گول یا گولائی نما              (ب)                                                                          چوڑے                                                                                            (ج)                                                                                 موٹے                                                                                                                                                       (د)                                                                                           لمبے

8۔ترچھے خطوط کس کا تاثر پیدا کرتے ہیں ؟

(الف)                                                                                                           خوشی                                                                                                                                                                  (ب)                                                                                                تناؤ و بے چینی                                                                                        (ج)                                                                   غمی                                                                     (د)                                         اُداسی

9۔ چوکور چیزوں کو دیکھنے سے کس کا احساس ہوتا ہے؟

(الف)                                                                                                          باقاعدگی                                                                          (ب)                                                              بے دلی                                                                                   (ج)                                                                      خوشی                                                         (د)                                            غمی

10۔ رنگوں کی کتنی اقسام ہیں؟

(الف)                                                                                                          ایک                                                          (ب)                                          دو                                                                                    (ج)                                                                                 تین                                                                                       (د)                                          چار

11۔توازن کتنے طریقوں سے پیدا کیا جاسکتا ہے؟

(الف)                                                                      تین                                                                                                   (ب)                     چار                (ج)                 پانچ                                                                 (د)                    چھ

12۔ نمایاں کرناآرٹ کا کیا ہے؟

(الف)                                                                                  عنصر                                                                                                                   (ب)                                                                                                                              اُصول                                                                                                      (ج)                                                                                                  ذریعہ                                                                                                      (د)                                                                                                                   طریقہ

13۔ کسی بھی سجاوٹ میں تسلسل کتنے طریقوں سے پیدا کیا جاسکتا ہے؟

(الف)                                                                                                                         تین                                                                                          (ب)                                                              چار                                                                              (ج)                                                                                                            پانچ                                                                                                                                                                                                                                                    (د)              سات

14۔ تناسب کے اُصول کو کس کا اُصول کہا جاتا ہے؟

(الف)                                                                                                        تعلق                                                                                                                                                     (ب)                     واسطہ                                                        (ج)               رابطہ              (د)                                                                                     ذریعہ

15۔آرٹ کا گھر اور ماحول کے ساتھ کیسا تعلق ہے؟

(الف)                                                                                                       گہرا                                                                                                                                                                                      (ب)                                                                 قریبی                                                                                                        (ج)                                                              بہت                                         (د)                                                                                      بالکل نہیں

جوابات:                      (1-الف)(2-ب)(3-د)(4-الف)(5-الف)(6-ب)(7-الف)  (8-ب)(9-الف)(10-ج)(11-الف) (12-ب)(13-ب)(14-الف) (15-الف)

سوال 2۔ مختصر سوالات کے جوابات تحریر کریں۔

1۔ آرٹ سے کیا مراد ہے؟

آرٹ کی تعریف:

آرٹ سے مرادہر وہ کارآمد چیز ہے جس میں جمالیاتی حس اور خوبصورتی کا احساس پیدا ہو مثلاٌ جس طرح کمرے میں رکھا ہوا فرنیچر خوبصورت دکھائی دیتا ہے۔ یا ڈرائنگ روم میں رکھی گئی خوبصور ت سینری لیکن اگر لباس استعمال میں آرام دہ نہ ہو اور فرنیچر بیٹھنے میں اچھا نہ ہوتو یہ آرٹ کے اُصولوں کے مطابق نہیں ہوتا۔

2۔ ڈیزائن کتنی قسم کے ہوتے ہیں ؟ نام لکھیں۔

ڈیزائن دو طرح کے ہوتے ہیں یعنی

ا۔ بناوٹی یا بنیادی ڈیزائن

ب۔ سطحی یا آرائشی ڈیزائن

3۔ ڈیزائن کے عناصر کون کون سے ہیں؟

اچھا ڈیزائن بنانے کے لئے بنیادی عناصر اور اجزاء جن سے کوئی ڈیزائن بنایاجاتا ہے اور جن کے بغیر ڈیزائن کا وجود ممکن نہیں ہوتا مندرجہ ذیل ہیں

1۔ خطوط

2۔ سطحی کیفیت/ٹیکسچر

3۔ شکل و ہیبت

4۔ رنگ

4۔ خطوط کی اقسام کے نام لکھیں؟

خطوط کی اقسام مندرجہ ذیل ہیں۔

1۔ عمودی خطوط

2۔ افقی خطوط

3۔ قوسی خطوط

4۔ ترچھے خطوط

5۔ درمیانی رنگ کون کون سے ہیں؟

یہ رنگ بنیادی اور ثانوی رنگوں کی آمیزش سے بنتے ہیں مثلاٌ سبزرنگ میں نیلا رنگ ملانے سے نیلاہٹ مائل سبز اور سبز رنگ میں پیلا رنگ ملانے سے پیلاہٹ مائل سبزاسی طرح چامنی رنگ میں نیلا رنگ ملانے سے نیلا ہٹ مائل جامنی اور جامنی رنگ میں سرخ رنگ ملانے سے سرخی مائل نارنجی جب کہ نارنجی رنگ میں پیلا رنگ ملانے سے پیلاہٹ مائل نارنجی وغیرہ پیدا ہوتے ہیں۔

6۔ توازن کتنے طریقوں سے پیدا کیا جاسکتا ہے؟

گھریلوآرائش میں توازن تین طریقوں سے پیدا کیا جاسکتا ہے۔

ا۔رسمی توازن

ب۔ غیررسمی توازن

ج۔ گھومتا ہوا توازن

7۔ چیزوں کو کیونکر نمایاں کیا جاسکتا ہے؟

1۔ نمایاں کرنے کے لئے چیزوں کو علیحدہ علیحدہ رکھنے کی بجائے ایک گروپ میں رکھنا۔

2۔ وہ رنگ استعمال کرنا جن میں تضاد اور فرق موجود ہو۔

3۔ سجاوٹ اور آرائش کا استعمال کرنا۔

4۔ نمایاں کی جانے والی چیز کے اردگرد کا پسِ منظر سادہ بنانا۔

5۔ نمایاں کی جانے والی چیز پر بلاواسطہ روشنی کا استعمال ۔

7۔ تناسب سے کیامراد ہے؟

جب بھی چیزوں کو اکٹھا رکھ کر سجایا یا ترتیب دیا جاتا ہے تو ان چیزوں میں خود بخود اچھایابراتناسب اور تعلق پیداہوجاتا ہے۔

8۔ آرٹ کا گھر اور ماحول کے ساتھ کیا تعلق ہے؟

آرٹ کا گھر اور ماحول کے ساتھ بہت گہر اتعلق ہے۔ آرٹ انسان کی ایسی ذہنی اور اندرونی کیفیت کا نام ہے جس کا تعلق حسِ جمال سے ہوتا ہے اور حسِ جمال ہر شخص میں موجود ہوتی ہے۔ گھریلوماحول،اشیاء کی دستیابی اور بعض اوقات آمدنی اس ذوق  کوبڑھانے اورنکھارنے میں مددگار ہوتی ہے۔

سوال 3۔ تفصیلی سوالات کے جوابات تحریر کریں۔

1۔ سطحی کیفیت کا گھریلو آرائش میں استعمال کیونکر کیا جاسکتا ہے؟

سطحی کیفیت/ٹیکسچر

کسی چیز کو دیکھنے یا چھونے سے پیدا ہونے والا احساس اس چیز کی سطحی کیفیت کہلاتا ہے ۔ڈیزائن مادے سے وجود میں آتا ہے اور ایک سطح یا ٹیکسچر کا حامل ہوتا ہے۔ گھر میں موجودا ستعمال کی چیزیں سطحی کیفیت رکھتی ہیں۔ جیسے کہ کھردری ،ملائم، ہموار اور چکنی۔ کھردری سطح روشنی کو جذب کرتی ہے جبکہ ہموار اور چمکدار سطح پر روشنی کی چمک بڑھ جاتی ہے۔

کسی چیز کا انتخاب کرتے وقت اس چیز کے استعمال کے مقصد کومدِ نظر رکھنا ضروری ہے۔ زیادہ ملائم چیزوں مثلاٌ شیشے کی صفائی کرنا آسان ہوتا ہے لیکن اس کی سطح پر گرد بہت جلد اور واضح نظر آنے لگتی ہے۔

کھردری سطح:

کھردری سطح پر گرد تو واضح نظر نہیں آتی لیکن اس کی صفائی کرنا مشکل ہوتا ہے۔ جیسے بید یا لکڑی کی غیر پالش شدہ میز۔ اس کے برعکس درمیانی کھردری سطح کی صفائی کرنا آسان ہوتا ہے اور اس کو استعمال کرنے میں بھی سہولت رہتی ہے مثلاٌ لکڑی کے پالش شدہ فرنیچر وغیرہ۔

گھریلو پردے، ڈیزائن اور ٹیکسچر:

گھریلو پردے، پوشش،لکڑی کے فرنیچر ،دیواریں ،تصویریں، گلدان غرض ہرچیز کسی نہ کسی طرح کا ٹیکسچر رکھتی ہے جن کو ایک ہی جگہ استعمال کرتے وقت ٹیکسچر کے لحاظ سے جوڑ اور ہم آہنگی کا خیال رکھا جاتا ہے۔

شکل و ہیبت:

جب دویا دو سے زائد خطوط آپس میں کسی خاص زاویے میں کسی خاص زاویے سے ملیں تو شکل و بناوٹ اور ڈیزائن بنتا ہے، کسی بھی چیز کی شکل و صورت مختلف قسم کے خطوط، سطحی کیفیت اور سائز سے بنتی ہے ۔ جیسے کہ۔

1۔ مربع یا مستطیل شکل:

جب عمودی اور افقی خطوط ملتے ہیں تو مربع یا مستطیل وضع بنتی ہے۔

2۔ مثلث یا مخمس شکل :

ترچھے ، عمودی اور افقی  خطوط کا امتراج ،مثلث ، مخمس اور مسدس  وضع کو تشکیل  دیتاہے۔

3۔ بیضوی اور گول شکل:

قوسی خطوط کے ملاپ سے بیضوی اور گول اشکال بنتی ہیں جن میں سلنڈر نما، گیندنما، اورقیف نما شامل ہوتے ہیں۔

مختلف چیزوں کی شکل و ہیبت مختلف تاثرات کی آئینہ دار ہوتی ہے۔جیسے کہ

1۔ مربع  چوکور چیزوں یاشکلوں کو دیکھنے سے باقاعدگی کا احساس پیداہوتا ہے۔ کیونکہ ان کے چاروں کونے برابر ہونے کی وجہ سے یکساں ہوتے ہیں لیکن اگر ایک ہی جگہ پر بہت سی چوکور چیزیں جمع ہوجائیں تو اس سے اکتاہٹ کا احساس پیداہوتا ہے۔ اس طرح مستطیل شکل سے فعالیت، تبدیلی کا احساس پیدا ہوتا ہے اور حرکت محسوس ہوتی ہے کیونکہ ان کی لمبائی اور چوڑائی مختلف ہوتی ہے۔

2۔ تکونی چیزیں:

تکونی چیزوں کے یکجا استعمال سے تسلسل اور یگانگت کی کمی محسوس ہوتی ہے۔ عموماٌ گھروں میں تکونی اشکال کا استعمال کم کیا جاتا ہے تاہم صوفوں پر رکھے ہوئے کشن یا پردوں کے ڈیزائن سے جداگانہ کیفیت پیدا کرسکتے ہیں۔

3۔ بیضوی اور گول شکلیں:

گول شکلیں تسلسل کی کیفیت پیدا کرتی ہیں مثلاٌ صوفوں یا بیڈ پر گول اور بیضوی کشن کے استعمال سے خوشگوار تاثرات پیداکرسکتے ہیں۔ اس لیے ضروری ہے کہ شکل و صورت کو مقصد کے مطابق معتدل انداز میں استعمال کیا جائے۔

2۔ توازن اور اس کی اقسام پر نوٹ لکھیں؟

توازن:

توازن سے مراد”ایسی ترتیب ہے جو نگاہوں میں آرام و سکون اور اطمینان کا تاثر پیدا کرتی ہے۔” آرٹ میں تواز ن کی مثال تولنے والے ترازو سے دی جاسکتی ہے جسے متوازن کرنے کے لئے اس کے مرکز کے دونوں اطراف ہم وزن اشیاء یابرابر کی دلکشی اور جاذبیت کا ہوناضروری ہے۔

گھریلوآرائش میں توازن تین طریقوں سے پیدا کیاجاسکتا ہے۔

ا۔ رسمی توازن:

رسمی توازن سے مراد ایساتوازن ہے جس کی دونوں اطراف برابرہوں مثلاٌ کمرے میں رکھےہوئے بیڈکی دونوں اطراف کی میزوں پرایک جیسے لیمپ ہوں یا کمرے میں رکھے ہوئے سائیڈ بورڈ کے درمیان ایک بڑا سا شیشہ ہو اور اس کے دونوں اطراف پر فوٹوفریم رکھے گئے ہوں جو رنگ ،شکل،حجم اورسطح کے لحاظ سے ایک دوسرے سے مطابقت رکھتے ہوں تو ا س سے وزن کی جو سکون آورکیفیت پیدا ہوگی اسے رسمی توازن کہیں گے۔

ب۔ غیر رسمی توازن:

ایساتوازن جس میں دونوں اطراف پر رکھی گئی اشیاء ،رنگ ،وضع اور سطح کے اعتبار سے ایک دوسرے سے مختلف ہوتی ہیں لیکن ان میں کشش کی قوت برابرہوتی ہے۔کم حجم اور چھوٹے کمروں میں زیادہ تر غیررسمی تواز ن کا استعمال ہوتا ہے ۔کیونکہ اس سے سجاوٹ میں حرکت کا احساس پیدا ہوتا ہے۔

ج۔ گھومتا ہوا توازن:

گھومتے ہوئے توازن میں دلکشی کااحساس ایک نقطے سے شروع ہوکر تمام اطراف میں برابر ہوتا ہے۔ اس سے ایک مرکزپر نگاہ رہنے کی بجائے ہرطرف گھومتی ہے۔جس کی مثال پھول کی پتیاں ہیں جودرمیان سے باہر کی طرف نکلی ہوتی ہیں ۔ اس قسم کا توازن زیادہ تر ہال کمروں اور کھلی جگہوں پر استعمال کیا جاتا ہے۔

2۔ ہم آہنگی:

ڈیزائن میں استعمال کیے گئے مختلف عناصر کی جب ایک دوسرے سے مکمل مطابقت اور یگانگت ہوتو یہ ہم آہنگی کہلاتی ہے”اس کی مدد سے یکسانیت کی کیفیت پیدا کی جاسکتی ہے۔ مختلف قسموں کی شکلوں کو حجم اور ساخت کے اختلاف کے باوجود ایک مرکزیت دے کر ہم آہنگی پیدا کی جاسکتی ہے جیسے کہ اگر کسی کمرے میں نیلے رنگ کا قالین ہواور اسی رنگ کا کوئی شیڈ پردوں یا صوفہ سیٹ میں استعمال ہوتو اس کمرے میں رنگوں کے ذریعے ہم آہنگی نظرآئے گی۔ درج ذیل عناصر کے ذریعے ہم آہنگی پیدا کی جاسکتی ہے۔

1۔ ہم آہنگی خطوط و اشکال کے ذریعے

2۔ ہم آہنگی حجم کے ذریعے

3۔ ہم آہنگی ٹیکسچر یا سطح کے ذریعے

4۔ ہم آہنگی رنگ کے ذریعے

3۔ نمایاں کرنا:

نمایاں کرنا آرٹ کا ایسا اُصول ہے جس کے ذریعے نگاہیں سب سے پہلے سجاوٹ میں اہم ترین چیز یا مقام پرپڑتی ہیں اور پھر قوتِ کشش کے اعتبار سے بالترتیب دوسری چیزوں پر حرکت کرتی جاتی ہیں۔ اگرڈیزائن بناتے وقت کسی چیز کو بھی نمایاں نہ کیا جائے تو وہ ڈیزائن اکتاہٹ اور بوریت کا تاثر دینے لگتا ہے۔ چیزوں کو نمایاں کرنے کے کئی طریقے ہیں جیسا کہ۔

1۔ نمایاں کرنے کے لئے چیزوں کوعلیحدہ علیحدہ رکھنے کی بجائےایک گروپ میں رکھنا۔

2۔ وہ رنگ استعمال کرنا جن میں تضاد اور فرق موجود ہو۔

3۔ سجاوٹ اور آرائش کا استعمال کرنا۔

4۔ نمایاں کی جانے والی چیز کے اردگرد کاپس منظر سادہ بنانا۔

5۔ نمایاں کی جانے والی چیز پر بلاواسطہ روشنی کا استعمال۔

3۔ تسلسل سے مراد ہے۔ گھریلو آرائش میں اس کی کیا اہمیت ہے؟

تسلسل سے مراد:

ایسی نرم اور مسلسل حرکت جو نگاہوں کو ایک سرے سے دوسرے سرے تک گھماتے ہوئے لے جائے۔ تسلسل کہلاتی ہے جیسے اگرصوفے پررکھے ہوئے کشن پردوں کے ہم رنگ ہوں تواس میں تسلسل پایاجا ئے گا ۔کسی بھی سجاوٹ میں تسلسل درج ذیل طریقوں پیداکرسکتے ہیں۔

ا۔ بارباردہرانے سے

ب۔ کسی سائزکوبتدریج بڑھاتے جانے سے

ج۔ چیزوں کو مسلسل خطوط کے ذریعے ملانے سے

د۔ مرکز سے پھیلتے خطوط کے ذریعے

گھریلو آرائش میں تسلسل کی اہمیت:

ماحول میں دلچسپی اور تسلسل کی کیفیت پیدا کرنے کے لئے مختلف چیزوں کو ایک خاص جگہ پر اکٹھا کیا جاتا ہے۔ جیسے کہ کمرے کی ایک دیوار پر سجاوٹ کی کوئی چیز لگی ہوتو کمرے میں داخل ہوتے ہوئے نظر ایک جگہ ٹھہرجائے گی لیکن اگر اسی دیوار پر تین یکساں چیزیں اسی طرح لگادی گئی ہوں اورنظر تینوں چیزوں پر ایک خاص انداز سے پڑے تو تسلسل کی کیفیت نمایاں ہوجاتی ہے۔

4۔ رنگ کے بارے میں تفصیلاٌ تحریر کریں؟

رنگ:

کائنات کی ہر چیز کوئی نہ کوئی رنگ ضروررکھتی ہے۔ رنگ چیزوں او ر ماحول میں دلکشی اور رونق پیداکرتے ہیں۔ رنگ،شوخ ،دھندلے، گہرے یا ہلکے بھی ہوتے ہیں اور یہ چیزون کو روشن، دھندلا،نزدیک،دور، ہلکا،وزنی یا چھوٹا بڑا دکھانے میں اہم کردار ادا کرتے ہیں۔ کمروں میں آرائش کرتے وقت چیزون کے رنگوں میں مناسبت اور ہم آہنگی کا خیال رکھنا بہت ضروری ہوتا ہے۔

ا۔ بنیادی رنگ:

ماہرین نے رنگوں سے متعلق مختلف نظریات پیش کیے ہیں۔ ان میں سے رنگ کے بارے میں سب سے ساد ہ اور مشہور نظریہ یہ ہے کہ صرف سرخ ،پیلا اور نیلابنیادی رنگ ہیں جو خود سے موجود ہوتے ہیں اور بنیادی رنگوں کوملانے سے دیگر رنگ بنائے جا سکتے ہیں۔

ب۔ ثانوی رنگ:

یہ رنگ بنیادی رنگوں کی آمیزش سے بنائے جاتے ہیں مثلاٌ

پیلا+نارنجی۔  سرخ

نیلا+سبز۔ پیلا

نیلا+جامنی۔  سرخ

ج۔ درمیانی رنگ:

یہ رنگ بنیادی اور ثانوی رنگوں کی آمیزش سے بنتے ہیں مثلاٌ سبز رنگ میں نیلا رنگ ملانے سے نیلاہٹ مائل سبز اور سبز رنگ میں پیلا رنگ ملانے سے پیلاہٹ مائل سبز اسی طرح جامنی رنگ میں نیلا رنگ ملانے سے نیلاہٹ مائل جامنی اور جامنی رنگ میں سرخ رنگ ملانے سے سرخی مائل نارنجی جب کہ نارنجی رنگ میں پیلا رنگ ملانے سے پیلاہٹ مائل نارنجی وغیرہ پیدا ہوتے ہیں۔ ان رنگوں کی قدرنسبتاٌ کم ہوتی ہے اور ڈیزائن میں رنگوں کی ہم آہنگی کے لئے انہیں استعمال کیا جاتا ہے۔

رنگوں کا دائرہ:

رنگوں کے دائرے میں بارہ رنگ ہوتے ہیں جن میں سے تین بنیادی رنگ اور چھ درمیانی رنگ ہوتے ہیں ان تمام رنگوں کو ملانے سے مزید رنگ بنائے جا سکتے ہیں اور رنگوں کے دائرے پر موجود رنگوں سے مختلف طرح کے رنگ بنائے جاتے ہیں۔

گرم رنگ:

رنگوں کے دائرے کے دائیں طرف والے رنگ مثلاٌ سرخ اور نارنجی وغیرہ کرم رنگ کہلاتے ہیں۔ گرم رنگوں سے جوش اور تیزی کا تاثر ملتا ہے یہ آگے کی جانب بڑھتے ہوئے محسوس  ہوتے ہیں۔ بڑے کمروں میں گرم رنگوں کا استعمال موزوں رہتا ہے۔

ٹھنڈے رنگ:

رنگوں کے دائرے میں موجود بائیں طرف کے رنگ ٹھنڈے رنگ کہلاتے ہیں جیسے کہ نیلا، سبزاور جامنی ۔یہ رنگ آسمان اور پانی سے مناسبت رکھتے ہیں ان کا تاثر بہت پرسکون ہوتا ہے اور پیچھے کی جانب ہٹے اور غیر نمایاں محسوس ہوتے ہیں۔ تاریک اور تنگ جگہوں پر ٹھنڈے رنگوں کے استعمال سے جگہ کو ہوادار اور روشن بنا سکتے ہیں۔

(Art in Everyday Living) باب 15۔ روزمرہ زندگی میں آرٹ

سوالات

سوال1۔ ذیل  میں دے گئے بیانات میں سے ہر بیان کے نیچے چار ممکنہ جوابات دیے گئے ہیں۔ درست جواب کے گرد دائرہ لگائیں۔

1۔انسان کی ظاہری شکل و صورت ،حرکات و سکنات ،طرزِ گفتگو اور اندازِ فکر کس کو ظاہر کرتے ہیں  ؟

(الف)                                                                                                                                                                                 اس کی جسامت                                                                                     (ب)                                                                                                                                                                                                          اس کی شخصیت                                                                                                      (ج)                                                                                                     اس کی صحت                                                                                                                                               (د)                                                                                                                   اس کی طبیعت

2۔لباس کے انتخاب میں کس کو اہمیت حاصل ہے؟

(الف)                                                                                                                                                                                                                    کپڑوں کے ڈیزائن                                                                                                                                                                                                    (ب)                                                                                                                                            کپڑوں کی کٹائی                                                                                                  (ج)                                                                                                                        کپڑوں کی سلائی                                                                                                                                                                                      (د)                                                                                                                  کپڑوں کی بناوٹ

3۔ لباس کو ڈیزائن کرتے وقت کتنے پہلوؤں کو مدِ نظررکھنا ضروری ہے؟

(الف)                                                                                                                         تین                                                                                                                                                                                                                                                                   (ب)                                                                                                                                                                چار                                                                              (ج)                                                                                                            چھ                                                                                                                                                          (د)                                                                               آٹھ

4۔سردیوں کے لباس کے لئے کن کپڑوں کا استعمال مناسب رہتا ہے؟

(الف)                                                                                                         باریک کپڑوں                                                                                                                                                    (ب)                      موٹے اور گرم کپڑوں                                                                                                                                                      (ج)               سادہ کپڑوں                                                                                                                                                                                         (د)                                                                                     پھولدار کپڑوں

5۔خوبصورتی انسان کی کیا ہے؟

(الف)                       کمزوری                                                                                                               (ب)                                                        نادانی                   (ج)                                                                                                                                اہمیت                                                                                                        (د)                                                                                                                   نااہلی

جوابات:                      (1-ب)(2-الف)(3-الف)(4-ب)(5-الف)

 سوال 2۔ مختصر سوالات کے جوابات تحریر کریں۔

1۔ لباس  کو ڈیزائن کرتے وقت کن پہلوؤں کو مدِ نظر رکھنا ضروری ہے؟

لباس کو ڈیزائن کرتے وقت مندرجہ ذیل پہلوؤں کو مدِ نظر رکھنا چاہیے۔

1۔ موقع و محل

2۔ کپڑے کا انتخاب

3۔ رنگوں اور ڈیزائن کا انتخاب

4۔ شخصیت

5۔ سماجی حالات

6۔ موسم و آداب کی ہوا

2۔ ماحول میں آرٹ کا استعمال کیونکر کیا جاسکتا ہے؟

ماحول میں آرٹ کا استعمال:

ایسا گھر یا ماحول جس میں خوبصورتی کا معیار بلندہو، ماحول میں موجود ہر  چیز خوش رنگ ،خوبصورت ،صاف ستھری اور نفیس ہونی چاہیے۔ اس میں پرورش پانے والے اعلیٰ ذوق کے مالک ہوتے ہیں۔

سوال3۔ تفصیلی سوالات کے جوابات تحریر کریں۔

1۔ گھریلو آرائش میں آرٹ کا استعمال کیوں کر ضروری ہے؟

گھریلو آرائش میں آرٹ کا استعمال:

کسی گھر میں داخل ہوتے ہی ذہن میں ایک خاص قسم کا تاثر پیداہوتا ہے۔ کبھی کبھار کمرے میں آرائش سے نگاہیں خیرہ ہوجاتی ہیں اور کمرے کا جائزہ لینے پر مجبور ہوجاتی ہے کیونکہ کمرہ اتنا پررونق اور پرکشش لگ رہا ہوتا ہے۔ ہر چیز پرکھنے کے بعد بعض اوقات کمرے میں پڑی ایک دو چیزیں سارے ماحول پر حاوی اور نمایاں محسوس ہوتی  ہیں لیکن اگر غور کیا جائے تو معلوم ہوگا کہ کمرے میں صرف وہ ایک چیز ہی وجہ کشش نہیں بلکہ سازوسامان، رنگ ،ان کے ڈیزائن ،سائز ووضع کے علاوہ ان کی ترتیب اور دیگر عوامل بھی اس کمرے کو خوبصورت بنانے کے ذمہ دار ہوتے ہیں۔

حسِ جمال:

لباس کے انتخاب میں منتخب کرنے اور اس کو ترتیب دینے والے کی حسِ جمال شامل ہوتی چونکہ ہر شخص کی حسِ جمال دوسروں سے مختلف ہوتی ہے اس لیے لوگوں کی پسند بھی ایک دوسرے سے مختلف ہوتی ہے ۔ جس کا اظہار روزمرہ زندگی کے ہر پہلو میں کرتے ہیں خواہ وہ لباس ہوں یا زیورات ، بالوں کا سٹائل ہو، گھر یلو آرائش ہو یا کئی اور شعبہ ہو۔ اس طرح انسانی پسند، ذوق اور آرٹ کا ہماری زندگی سے بہت گہر اتعلق ہوتا ہے۔

ذوقِ حس اور سلیقہ:

گھر آرام و سکون کا مرکز ہوتاہے۔ ہر گھر کی سجاوٹ اس میں رہنے والوں کے ذوقِ حس اور سلیقے کی آئینہ دار ہوتی ہے ۔گھر میں موجود معمولی اشیاء سے بھی آرائش میں خوبصورتی پیدا کی جاسکتی ہے مثلاٌ تازہ اور مصنوعی پھولوں سے گھر کو سجایا جاسکتا ہے۔ پردوں،صوفوں،قالین اور مختلف سجاوٹی اشیاء میں مختلف رنگوں کے استعمال سے گھریلو آرائش کی جاسکتی ہے۔ یہ ضروری نہیں کہ گھر یلو آرائش کے لئے بہت مہنگی اور قیمتی اشیا ء کا انتخاب کیا جائے بلکہ سستی اور معمولی چیزوں سے بھی خوبصورت آرائش ہو سکتی ہے۔ گھر کے بیرونی حصوں میں درختوں ،پودوں ،پھولوں اور بیلوں سے خوبصورتی پیدا کی جاسکتی ہے۔

آرٹ کی حس:

ہرشخص کی آرٹ کی حس دوسروں سے مختلف ہوتی ہے اس لئے لوگوں کی پسند اور رائے میں اختلاف پایاجاتا ہے۔ اس غیر یکسانیت کا اظہار انسان کے ہر اندا ز سے جھلکتا ہے اور اس کے کمرے میں داخل ہوتے  ہی اس کے ذوق کا بخوبی اندازہ لگا یا جاسکتا ہے۔ اچھا ذوق انسانی روح کی خاصیت ہے اس کے لئے مشہور ہے کہ لاشعوری طور پر صحیح انتخاب، صحیح طریقے سے ترتیب و استعمال اور صحیح عمل کرنے سے اچھے اور معیاری ذوق کا اظہار ہوتا ہے۔

2۔کھانا پیش کرنے میں آرٹ کے عناصر اور اُصولوں کے استعمال پر نوٹ لکھیں؟

کھانا پیش کرنے میں آرٹ کا استعمال :

غذا کا انتخاب ،پکانے اور پیش کرنے میں آرٹ کے عناصر اور اُصولوں کو استعمال کرکے بہت خوبصورت تاثر دیا جاسکتا ہے۔ کھانے کی شکل و صورت، رنگ، ذائقہ اور ترتیب نہ صرف بھوک کو بڑھاتے ہیں۔ بلکہ اچھے ذوق کی نمائندگی بھی کرتے ہیں۔ میز پر کھانالگانے کے مختلف طریقے دیکھنے والے کو متاثر کرتے ہیں۔ پھولوں کی آرائش ،اچھے برتنوں کا استعمال، آرام دہ ماحول خوبصورت تاثر بھی دیتا ہے اور اچھے ذوق کی نشاندہی بھی کرتا ہے ۔ بچوں ،مریضوں ،بزرگوں کو خاص طور بہتر طریقے سے کھانا پیش کر کے گھریلو ماحول کو خوشگوار بنایا جاسکتا ہے۔ جس سے ذہنی تسکین اور خوشی بھی حاصل ہوتی ہے۔

آرٹ کے عناصر اور اُصول کو مدِ نظر رکھنا:

آرٹ کے عناصر اور اُصولوں کو مدِ نظر رکھتے ہوئے کھانے کی میز پر قوتِ کشش پیدا کی جاسکتی ہے لیکن کھانے کی میز پر قوت کشش پیدا کرتے وقت اس بات کو مدِ نظر رکھنا ضروری ہوتا ہے۔ اگر میز کا کورسادہ رنگ کا ہوتو اس پر ڈیزائن والے برتن استعمال ہو سکتے ہیں۔ لیکن پرنٹڈ کور پر سادہ برتن ہی مناسب رہتے ہیں۔

رنگوں کا امتزاج اور سجاوٹ:

           ہلکے پسِ منظر پر گہرے ،شوخ اور ڈیزائن والے میٹس اور برتن استعمال کرنے چاہئیں جبکہ گہرے یا شوخ پسِ منظر میں اس کے برعکس سادے اور ہلکے رنگوں کی چیزیں استعمال کرنی چاہئیں۔ اس کے علاوہ کھناے کی چیزیں اگرسادہ ہلکے رنگوں کی ہوں تو انہیں متضاد رنگ کی کھانے والی ڈشوں اور ڈونگوں میں ڈالاجاسکتا ہے۔آرٹ کےاُصولوں کو استعمال کرتے ہوئے سادہ کھانوں کو بھی مختلف طریقوں سے سجاکر میز پر دلکش اور رونق پیدا کی جاسکتی ہے۔ اگر بنیادی ڈش گوشت کی ہے تو سائیڈ ڈش میں مختلف سبزیوں کے استعمال سے رنگوں کا امتزاج بہتر بنایا جاسکتا ہے۔

کھانے کی میز پر پھولوں کی آرائش:

           کھانے کی میز پر پھولوں کی آرائش کے علاوہ سلاد میں مختلف رنگوں کی سبزیاں استعمال کرکے میز کی سجاوٹ کو بڑھایا جاسکتا ہے۔ اس کے علاوہ رنگ دار ڈیزائنوں والی پلیٹوں کے ساتھ ان سے ملتے جلتے رنگ کے گلاس استعمال کیے جاسکتے ہیں۔

کھانے کا مینو تیارکرنا:

            کھانے کا مینو بناتے ہوئے بھی اس بارے میں سوچا جا سکتا ہے کہ مینو میں شامل کھانوں میں مختلف رنگوں کا امتزاج ہو یعنی مرغی والے پلاؤ کے ساتھ اگر شامی کباب بھی رکھے ہوں تو بہتر ہے سبزیوں والے پلاؤ کو شامل کر لیا جائے۔ سلاد میں مٹر، ٹماٹر ،مولی، چقندر اور سلاد کے پتوں کے امتزاج سے میز کی دلکشی میں اضافہ کیا جاسکتا ہے یا سبزیوں کی بھجیا بنائی جا سکتی ہے اس کے علاوہ میٹھے میں فروٹ ٹرائفل کا اضافہ کھانے کی میز کو دلکش اور خوشنما بناتا ہے۔

==================== تمت بالخیر =======================

 

It's only fair to share...Share on Facebook0Share on Google+0Tweet about this on TwitterShare on LinkedIn0Print this pageEmail this to someone
Loading Facebook Comments ...